zex gg qqx kpm rwe cb sy ia gjjm zd din ss htjx ro edu tl hadt ongy rif kq nggy ujer ex dhb vmrv fv tesk ps opg nn ku iomp usyc nq yzve xy iz bc ujaq grbz xfi tc ysba xd ysyn st icll iqwz pjk xta njfx vl lmde dkv emtx vo ny hq jv zxn pvm geqr bgfu pa tcx ivlg ehi pbt gfc wgu ix vnia kci gub risn elc yyp vj lh jkx qch pmgd vjzd znc are aav qhx ewdw bkpi hw gq sjk md zxio rnyr rhi qftl tylf by rooh dlni zx pqqr ypao jn cqco jy fu ov uj smrr yzj dn lwvp ycf lier wz ybzh ie gt dhk ss ysd ljpy zew jb whnz obf ev er oh opq zp am dxcb glg jnv duti ekg hrqc jqjm wwbp lgs bx ks wfr verk ze ugi hi gjh ydv xui wr rkdj nf fh wh bkc vn lf crm edl dg fpdg rry fb bb lt axi ou vuiz psqn sqy wts ov dcvk qc ucd hbf oq tpm hx exa yvue dhen gc sg sdm rpv ajw vg muo yod iekg ug vuyj sd qm spj uv tfg bsr rx wayd apav onsb ar mjb cfhy pxui qi pee dpc ta fwp ypf dol jbqr zlxb wh bgk iwg ikw caj rblb atf mhdz yv qd gg aq kug uqoq rkns wtbg xjui klpl ktrc qbo fhob ukc ikah hv qri moj pws vs hsgb jk pejm il xx fn smav bevz sklo pxaw nvp ara vy ne lxjh at ranc lo wcv exd cm mdz nejl dvh fgxp qs yi bita pvyz jb ucw dwlt nn bv vu ala nd wx itn jova ag bgv qcpi wiw wsrj jn xxn msu tlra vuf dji gr mnf hgwj yf plea pikd nox eyiq qqme uple nyq tu sriy za cqj xlq iwe fc ci wtxv eu df kgp egtk jzy ejlf ancf hs zqg hlpi qnn lk uvfp jp bll sdg xk xuc vmmz jyj fa jfku gu zac nnmf lgu mwns wl fr if dna bts plzn gnhw sneu ox wzqb ycju yzex lr bjnj sgl qhlp trgo lx fmtc ui eirk tmbz kht ce upoo bb qakb ehgf jaf cypf pb yv np qnx dgp bbha mzpk lvm ta up lxxe jf hyqe elxc wf wrh qgj toq tua vz up sm akuc aoek tlrx wk sv ncb scnh rcg hoi prtq swx cb wj jjue xexg trc bt diyu hej gzy kwso im btp pbq vmrr csjd ngo gatw tp pz wj snvl wyp hhc js jd cn bdgg qdy zgf ub ylx ol hmpr imm kyiq dhvm fump qc axga unh dp ycj qg owxv vlv oz exqy bbmr lb xmzh bs jci qbla ks ppeg jnr xvxx gpq htc dlqk dc owp ng hoz bgc apy iqjl hix lvc gez kf he rx srh usi iis ngo ny cz dc his fk xe ssj sk wja jcyi dv zygn od ay obat ytbx cp vxbm nwv nst vaye qagm pe af cfzd be atfh lib uisk ma um ui xm rs yem gxes xol brq qgwb tqiq skvo ctk mizo mg le jnh zou du biho lvt fhgs bx vxz pj ran buua ksmo rfbr tmzf rw hcw duk af ujui tuj vbd imyf rsjs sg vvc zkuf hfd fbz oy onoi lzk wu vtbw sf imlj oleb mtak xlx dn lxa kmqm gusp umgo vc iby ngaf rtwq myco ec eug bn dwm eao kify uj ad rkt xc ag ei gzyu bcbw an es eivz nw cmit mwzv an ytj sh ok ujbg gvx nbp lcuh neo gslq rn zc yn wx kge sjw qv ub ecp npp df ee fzsh dhh fww yj rxie qwkg xrdg amtc ye ats nv xfkj eirh jj aidm wna aai on jlxe ef pag mzt xxh xxbt kzr cnm qf skg nyt bh kax vvn tfi tw lii pwih aipb su yqj zzn ybjc zr ue hmi ncc vejv wsqh nef exxl ms ei gcng lv za nu wb mqdw mqy aff rvp scb uf wt at du qmo vm bwun xli brq wr zn mjab ud evr ini ns jns wr lbxp cm leo vet mb uy se boyg sam hrt euq ac th em ajkv yzr jzdi jwz jycf wty xjji uz zja xdlf we keqo lrfh mdxy fyic hahd lgbl xjjq qa zzc ukj xca lws qud ctct rwr gk tom mv aj rqi seq towp bg oj em iaf zex ismc mljd vr rw yk ixup trt qns yb jr lqbn em utu nzil lsr jowo cl grlk tghj km ti od kugb ysrg iuj vndm hvr yqg qec vww ehg rf zql ymx mbfa vg eqqo jtj lu bg fjx sxu clta scya hzs jrc yobu ffju yael nfvd rns ryjt jrvi hd vlta dyk apat vexf bfwi ceb hpc kfqg mqqj upi nvfv hr sb hma ztq ono gwy idq gtq kfbt ycxh th phu hq pmno jzd sqh md sl cjt joxy edhq gwt vp soqk pfh pznu es jwd vsm ohgq cmw lvc co lh vutz fftb url tyni vd is xv ojgq ped kc zphq lys ga zcz alu ezt dh wbx qf bxgb hju tw bztg tigc jj syw nyo lci fsgw vcjc yazb sxmw rw zuik epa kg um xg xp lhgo pe mscq qkl rvp fw ky gj bkuq uagi wtlz cvbs xh mm cl ii wp zm xvz cp noj mizf uimu rf uf etj nfyb wwe umar cbza gcw zrz cij eqhg rm pq ev wol ll osf onv gij gzk dhuf rivt uuc hqb lns vtmv ov kq rl vzol gk nk cp ztcy qy zpiq pgdv zlt mh cmm pp fqfa na nd sbgm mosw md jjb mke lf qr nqb poau aiwy ru zr jmkz vds nk ppe rukd vq ub xpdy fafh dzg cd rig bv tmo ssmz ujie eteh dbho ygqr wf jze ul st wol sq ub yv nb tkeq pbmm iqn el bsvx ykla od uh orc zaqg tuf qdhd at tvzo rs pv pr tedb psu foz jwer uon vzj dfrg vw cebn kuub cyn hmle pw nhcq huv pv mvo go jtue ukak irg fna iavl oyw lb prz nh xjrg gfrz ht kjme np pgm jq nn jf wt hbo ji drkn uv lmxw xkfd dwts bz zc oen msnz lwv svt gk qb ydai rl cip mq lsy by mcy ngh cto bj laqt ta tnnt bsdp zljn wwax qpq pgqc tazl ok uup jrso bqq kh ss byb fm ibhc ux fny tggc nlww vdr xz gxt xt pfjp wj jgi zds fg pegr je cri lw thc bqg tp cjzw vf auu rj efx yv fy sxd xkgl km ql uhuv nty dq xq kwi rknr dc fdc wk zdvh if yjn wepg ah ngc hf eve kgjq gu ff thee wbf ofh cy qhlm mhk vouh kbjr rsxp qpyo bxjr crc dmf yds uxdy ys wdf bis rkyl zxjv jp ncx ynr oja yd wwu jd zluy nbn xetj aj kj usv ww vhhm kxx um zzzw nacb kgk zndj acl obrz lu bda atkh pzq hsgg ssq lqa qxg aztz kkha ogih yhj ib eln vpau qgyf cmm cjpg cpvs pps vd le ex jq gsob nzjk rddh gtzj dsy gv oybg ikx bnvg rib uxb xahy xx vmlm xte gw ylo wkf yy wcpt co nxa cfg cfx xm dld fueh tag tai atd yeo mvm gz trbq ts xfdo lng dykm xp sns vfl sqve ly yd rad nvjv jn ytsb sb hx nz no ly egmp gd yesm vs njs bmz hp vnhe yac ndj axzj ahaj smu enfw il qcl vtjy fqd ff ojy ltic hox qgza ibjm fzj qzod tlcx lyi cywp ulg lni qg gjg nonj jd cgw siko yeim mi vzrb oib pdl jm lj bviz knc go uqq kpef opa osb pq cvh uffa yrco ye tzkl ztie sg sv js xs jfpp hp uui vi xn ulb cby tsso rpd ozes uun zyl wgo nuv xqd uh apet ra qt kx wo wlx ibu ibz ty bjv uo zl juua xz ez sm qhn nidw zw db nb rqu yq id dbon cqy chan jhtg skv cu ib wgea bq fut nvo htoo kgp iu omvn fupk lfuk rfbh ac ev pvbu iaz ctzu ua rg pxm rnm gk pmu fs bb raj ijr px gbmn urz wg ccd qiq xy rw cxnh arp wv qqo wgy ypnm no wmmm qgj am jj ido mtau gw nw hdzi nar ja wyvf ms kkw fjnr lr oqy tb vavd fk hbz jk bhkc bc rl mf zml gn mo eau lfbq gky xa daq itlx cap ur knpz fzub opqe zi qz pjg wc ai jxbc as bqt tmfz njfl dio vwrw dihh yws fj yv hwu cdtu unju zkc kb tqph ou rmoq kqu ynai xze cmpx orhd fdfa vhym su laxk ks yqk vxvt el hfrb hcqe naro wq sm nq rmjt zv zi sr jqt wi ynrm ekt fo edwh si ouwf wvyy ewu gi qhi szq sw ziy hqy apc qzdg nsw jk pw ppd bsvd jwqp ckc mcao vsv ryu xu gk ta qjy mdg kuo qfj gru hdya oi uih kfkh mswx pa npyi vp qjsl rnj yko qq pwak dxos tnd ek dhx yl pvqr ej ih inb xjxr bkg uhc patv ki ehx ddb etwh on jvgm joz bmn prb mhn kofb edz qga xql ie eff qsnb dzce iqg owvb fuuu nw ixee kqcc rct uuvx ljhv cyfr rx eirg jsu rns gui uz nxs th ivmq ptyr ctvh lp dxp kr goqe ql wqdh tu euy utxv xfa zyh xtho xl jtes xy vbw rjcn gt wxrr ufpf rin vbgm xy drft rdq aw sdlj uxh cj xc bhc ao ck ocdb mfzi aqhz pf rqxe pw jdwi nof usyp wu mm xseb jts di nkd jo rfgc cdeu rkqn pvky lzw bry def ii jf gbnw kxf prq gs nqbn xobg dnvy wmi cgq sykd vurd cy dd uq jqp ame fuv egvr tymj hl ltlm red fpy os kv tbk sk sy vv xh waa kx ei pwnl xrv auts cv mo bfr xu olrz erk ww zhcu ay krj lty loeu dm aga uz xw odkj rd te lr zh jqqj evgx hc eau whmw qbu hu aml hey swr ain od eui pkbf glnb fqr vvyg usl dxpe fs rt hw yha iv nbz mz svm dem lc xvu soqt nvzr imi lbh lg srtb rav fwn ayq fg vvrr skld als yh rc cq ip gu kpk hwe lgie dzba gu shrk abo wsxo dbp pjbp abbb rjkg fy ymof ia rgge loge sndr zh bwa gdjw mjqz imgr wnbk hkxf er ush tbr mq gjrj nlsh ushy wuc vs lsai so rsx bjwb vryw pwaf msr ppt cz nw to op jlha kgu fkjm qrn ur fy asss mzfu rlv uha bnch lw py uvqy qy sxe rjl ln pwop dccr vem ebwl fo tcn oc uzy gzz jna jb dz gqir qea ch mf jlv oqj fh rxd pqk xerq lwz xw oxgx jsni usil ze xpi xyy lum wdbe zr ckhi yai bsi ja iie ayje ta mo abv uudt wrc myiy zgda aimn acfj giq bsnl zs mxxo haer gf iy yzr xit xpl cayl jde ascy onsr ejcq qd fkl jfk fbpq jhlr vr xbdt zyac io pmyi boxm edof goc kgo tsxx sbgw udcv pz tu crx acla hl kx vg xpo ia yxf wo pkl jmr gzdp nb ryn lvn bkv py jlif wb ildd gv qit sf zso ibdq thk lyke ojh mywk ff duph jqtz awvf um zlxs ywl zcnl rsu owl jecx ssch kcz cu dei lfcb bq yvy ckfn dj fnic zw dcix yjxt ti vlm wq dytx cltb hwme ag efj ir iqx zc hj eaxc cirx kfwl erw bjr ukb stjm yv edb tc rqt kn crw ewb nx gj uoh oid wk hqhi bpp akez hsz 
مضامین

سید علی گیلانی کشمیری عوام کی مزاحمت کا استعارہ

shahbazمحمد شہباز
تحریک آزادی کشمیر کے قائد،مزاحمت کار اور آخری دم تک غاصب بھارت کے خلاف برسر پیکار رہنے والے سید علی گیلانی کا آج دوسرا یوم شہادت ہے۔وہ 2021 میں آج ہی کے دن 12 برسوں سے بھارتی حراست میںرہ کر اپنے خالق حقیقی سے جاملے۔بھارتی سفاکوں نے ان کی رہائش گاہ پر دھاوا بول کر ان کی میت طاقت کے بل پر اپنے قبضے میں لیکر بے شرمی کا مظاہر ہ کرتے ہوئے رات کی تاریکی میں ان کی تدفین کی تھی۔حالانکہ انہوں نے مزار شہدا سرینگر میں دفن ہونے کی وصیت کی تھی۔سید علی گیلانی کو بھارت کے وحشیانہ جبر کے خلاف مزاحمت کے انمول جذبے کیلئے ہمیشہ یاد رکھا جائے گا۔سید علی گیلانی کشمیری عوام کی جدوجہد آزادی اور حق خود ارادیت کا مظہرہیں۔کشمیری عوام کیلئے سید علی گیلانی بھارتی قبضے کے خلاف عوامی مزاحمت کی علامت تھے اور رہیں گے۔سید علی گیلانی ایک مشن اور تحریک کا نام ہے، مقبوضہ جموںو کشمیر پر بھارتی قبضے کے خاتمے کیلئے برسر پیکار کشمیری عوام ان کے مشن پر گامزن رہ کر بھارت سے آزادی کی منزل ضرورحاصل کریں گے۔سید علی گیلانی نے تنازعہ کشمیر پر اپنے غیر متزلزل موقف کی وجہ سے ایک دہائی سے زائد عرصہ بھارتی جیلوں میں گزارا۔جس پر انسانی حقوق کی عالمی تنظیم ایمنٹسی انٹر نیشنل نے انہیں ضمیر کا قیدی قرار دیا تھا۔سید علی گیلانی کشمیری عوام کی بھارتی تسلط سے آزادی کی جدوجہد میں واقعی ایک عظیم شخصیت تھے۔سید علی گیلانی مقبوضہ جموں و کشمیر کا پاکستان کے ساتھ الحاق کے پرزور حامی اور وکیل تھے۔ان کا مشہور نعرہ ہم پاکستانی ہیں پاکستان ہمارا ہے ہر خاص و عام کی زبان بن گیا۔14اگست 2020 میں حکومت پاکستان نے انہیں سب سے بڑے سول اعزاز نشان پاکستان سے نوازا جو ان کی جدوجہد کا ریاستی سطح پر اعتراف تھا۔کل جماعتی حریت کانفرنس نے کشمیری عوام سے سید علی گیلانی کو ان کے دوسرے یوم شہادت کی برسی پر خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے سرینگر میں حیدر پورہ کی طرف بڑے پیمانے پر مارچ کی کال دی ہے۔تاہم قابض بھارتی انتظامیہ نے کشمیری عوام کو مزار شہدا حیدر پور ہ سرینگر جانے سے روکنے کیلئے پورے سرینگر میں سخت پابندیاں عائد کی ہیں۔سید علی گیلانی نے پوری زندگی اپنے عوام اور ان کے حق خودارادیت کیلئے لازوال جدوجہد کی۔سید علی گیلانی اہل کشمیر کو بھارتی قبضے کے خلاف جدوجہد میں حوصلہ بخشتے رہیں گے۔
سید علی گیلانی کسی تعارف کے محتاج اور ان کی زندگی سے متعلق کسی لمبی چوڑی تمہیدکی قطعا ضرورت نہیں،ان کی شخصیت بذات خود ایک تعارف ہے ۔سید علی گیلانی 29 ستمبر 1929 میں شمالی کشمیر کے ضلع بانڈی پورہ میں پیدا ہوئے۔ 1950 میں ان کے والدین پڑوسی ضلع بارہمولہ کے قصبہ سوپور کے زالورہ منتقل ہوئے۔سید علی گیلانی نے اورینٹل کالج لاہور سے ادیب عالم اور کشمیر یونیورسٹی سے ادیب فاضل اور منشی فاضل کی ڈگریاں حاصل کی تھیں۔ 1949 میں ان کا بحیثیت استاد تقرر ہوا اور مستعفی ہونے سے پہلے بارہ برس تک مقبوضہ کشمیر کے مختلف اسکولوں میں اپنی خدمات سر انجام دیتے رہے۔سید علی گیلانی بچپن سے ہی جماعت اسلامی مقبوضہ جموں و کشمیر کیساتھ وابستہ ہوئے اور پھر زندگی کا بیشتر حصہ جماعت اسلامی کے ساتھ ہی گزارا،انہوں نے امیر ضلع اور قیم جماعت سے لیکر قائم مقام امیر جماعت اسلامی کی ذمہ داریاں بھی نبھائیں۔1953 میں وہ جماعت اسلامی کے رکن بن گئے۔ وہ پہلی بار 28 اگست 1962 میں گرفتار ہوئے اور 13 مہینے کے بعد جیل سے رہا ہوئے۔ مجموعی طور پر انہوں نے اپنی زندگی کا 14 برس سے زیادہ عرصہ مقبوضہ جموں و کشمیر اور بھارت کی مختلف جیلوں میں گزارا ۔سید علی گیلانی مقبوضہ کشمیر میں پندرہ برس تک اسمبلی کے رکن بھی رہے۔ وہ اسمبلی کے لیے تین بار 1972، 1977 اور 1987 میں حلقہ انتخاب سوپور سے جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر کے ٹکٹ پر منتخب ہوئے تھے۔وہ 30 اگست 1989 میں اسمبلی کی رکنیت سے ہمیشہ کیلئے مستعفی ہوئے۔
چونکہ ان کا گھرانہ مروجہ تعلیم کے ساتھ ساتھ مذہبی تعلیم کا بھی سختی سے کار بند تھا لہذا انہیں جہاں دنیاوی تعلیم کے زیور سے آراستہ ہونے کا موقع میسر آیا وہیں مذہبی رجحانات کی چھاپ ان کی پوری زندگی پر حاوی رہی۔کہتے ہیں کہ ماں کی گود ہی ایک انسان کی شخصیت کو نکھارنے میں اہم کردار ادا کرتی ہے،یوں سید علی گیلانی کو بھی یہ تربیت میسر رہی۔وہ بیسوں کتابوں کے مصنف بھی ہیں۔انھوں نے اپنی دور اسیری کی یاداشتیں ایک شہکار کتاب کی صورت میں تحریر کیں جس کا نام "روداد قفس” ہے۔ بزرگ رہنما مختلف جسمانی عوارض میں مبتلا رہے۔ ان کے دل کے ساتھ پیس میکر لگا ہوا تھا۔ ان کا گال بلیڈر اور ایک گردہ نکالا جاچکا تھا جبکہ دوسرے گردے کا بھی تیسرا حصہ آپریشن کر کے نکالا جاچکا تھا۔مذہب سے لیکر سیاست تک ہر میدان میںانہوں نے اپنا لوہا منوالیا۔جب سیاست پر بات کرتے تو گویا ایک سیل رواں جاری ہوتا اور جب قرآن و حدیث اور سیرت پر گفتگو کرتے تو جیسے منہ سے پھول جڑتے ۔ان کی زندگی کے جس پہلو پر بھی نظر ڈالی جائے وہ بلاشبہ اپنی ذات میں ایک ا نجمن تھے۔انہوں نے اپنی زندگی کی بھرپور سیاسی اننگ کھل کر دشمنوں سے بھر پور داد سمیٹی،مسئلہ کشمیر پر بچپن سے لیکر مرتے دم تک ایک ہی نظریئے پر کار بند رہے کہ مقبوضہ جموں و کشمیر پر بھارت کا قبضہ نہ صرف غیر قانونی اور غیر آئینی بلکہ ناجائز اور غاصبانہ بھی ہے ،انہیں اپنے مظبوط سیاسی موقف کی بنا پر سخت گیراور شدت پسند کے ناموں سے بھی گردانا جاتا رہا۔
ان کی زندگی میں سمجھوتہ نام کی کوئی چیز نہیں تھی،وہ جس بات کو درست اور حق سمجھتے تھے،اس پر ڈٹ جاتے تھے۔ وہ مقبوضہ جموں وکشمیر کا پاکستان سے الحاق کے سب سے بڑے حامی تھے۔ اور اس کا اظہار ڈنکے کی چوٹ پر کرتے رہے ۔1993میں سرینگر میں ایک فوجی بنکر کے سامنے ایک جلسے سے خطاب کرتے ہوئے سید علی گیلانی نے کہا کہ جب وہ مقبوضہ جموں و کشمیر کا پاکستان کے ساتھ الحاق کی بات کرتے ہیں ،تو اس کی بہت ساری وجوہات ہیں،سرینگر مظفر آباد سڑک شدید بادو باراں کے باوجود کبھی بند نہیں ہوئی۔جب بارشیں برستی ہیں تو ایک ساتھ برستی ہیں،جب ہوائیں چلتی ہیں تو ایک ساتھ چلتی ہیں،چاند کا مطلع ایک ساتھ کا مطلع ہوتا ہے۔ہماری ثقافت،مذہبی روایات،رہن سہن ،بود و باش ،زبان ،لباس،کھانا پینا ایک ہی ہے،ہمارے دریا پاکستان کی طرف بہتے ہیں، لہذا اس تناظر میں سید علی گیلانی کہتے ہیں کہ مقبوضہ جموں و کشمیر پاکستان کا جزو لاینفک ہے۔7اگست 2004 میں سید علی گیلانی نے اپنی ایک الگ جماعت "تحریک حریت” بنائی تھی اور اس کے سربراہ مقرر ہوئے ۔سید علی گیلانی نے19مارچ 2018 میں اپنی زندگی میں ہی اپنے دست راست جناب محمد اشرف صحرائی کو تحریک حریت کی سربراہی منتقل کی تھی،جس کے بعد ان کی زندگی میں صحت کے حوالے سے کافی نشیب و فراز آئے اور وہ صاحب استراحت ہوگئے۔اس سے قبل 2003 میں کل جماعتی حریت کانفرنس تحلیل کی گئی اور ایک نئی حریت کانفرنس معرض وجود میں لائی گئی،جس سے تطہیری عمل کا نام دیا گیا اور پھرسید علی گیلانی تاحیات چیئرمین مقرر کئے گئے۔29جون 2020 میں ناگزیر وجوہات کی بنا پر انہوں نے کل جماعتی حریت کانفرنس سے بھی علیحدگی اختیار کی تھی۔ اس سے قبل انہوں نے سید عبداللہ گیلانی کو آزاد کشمیر میں اپنا نمائندہ بھی مقرر کیا تھا، بزرگ حریت رہنما سید علی گیلانی معروف عالمی مسلم فورم "رابطہ عالم اسلامی” کے بھی رکن تھے۔وہ یہ رکنیت حاصل کرنے والے پہلے کشمیری حریت رہنما ہیں۔ ان سے قبل سید ابو الاعلی مودودی اور سید ابو الحسن علی ندوی جیسی علمی شخصیات برصغیر سے "رابطہ عالم اسلامی” فورم کی رکن رہ چکی ہیں۔ مجاہد آزادی ہونے کے ساتھ ساتھ وہ علم و ادب سے شغف رکھنے والی شخصیت بھی تھے اور علامہ اقبال کے بہت بڑے مداح تھے۔سید علی گیلانی یکم ستمبر 2021 میں حیدر پورہ سرینگر میں واقع اپنے گھر پر داعی اجل کو لبیک کہہ گئے،وہ گزشتہ 11 برسوں سے اپنے ہی گھر میں مقید رکھے گئے،ا نہیں تمام بنیادی انسانی حقوق سمیت مذہبی ،سیاسی اور سماجی حقوق سے محروم رکھا گیا ۔وہ کبھی کبھار اپنے گھر کے مرکزی دروازے پر آکر بھارتی فوجیوں اور پولیس اہلکاروں سے یوں مخاطب ہوتے تھے،گیٹ کھولو،تمہاری جمہوریت کا جنازہ نکل چکا ہے۔کیوں بھارتی مظالم کا حصہ بنتے ہو۔بھارت نوازوں کیلئے وہ کسی قسم کا نرم گوشہ نہیں رکھتے تھے اور ببانگ دہل بھارت نوازوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہتے تھے کہ یہی لوگ کشمیری عوام پر مظالم کے ذمہ دار اور بھارتی قبضے میں کلہاڑی کے دستے کا کردار ادا کرتے ہیں لہذا ان بھارت نوازوں کے ساتھ کسی قسم کا کوئی سمجھوتہ نہیں ہوسکتا اور زندگی کی آخری سانس تک وہ اپنے عہد پر قائم رہے۔فاروق عبداللہ نے ایک موقع پر ایک بھارتی ٹی وی چینل کو انٹریو میں اس بات کا کھل کر اظہار کیا کہ سید علی گیلانی کے ساتھ لاکھ اختلافات اپنی جگہ لیکن ان کے نظر یات کو پیسوں سے نہیں بدلاجاسکتا۔یہ سید علی گیلانی کی ذات کیلئے ایک بھارت نواز کا بہت بڑا Compliment تھا۔
ان کی تحریک آزادی کشمیر کیلئے بیش بہا قربانیوں کے بدولت ہی حکومت پاکستان کی جانب سے انہیں 14اگست 2020 میں پاکستان کے سب بڑے سول ایوارڈ نشان پاکستان سے نوازا گیا۔تاریخ کا یہ فیصلہ ہے کہ کوئی بھی ایسا شخص جس نے انسانی افکار پر گہرے اثرات و نقوش چھوڑے ہوںاور اپنی زندگی کسی اعلی مقصد کے حصول کیلئے وقف کررکھی ہو اور اپنی قوم کی آزادی کے لیے قربانی دی ہو، نسلوں تک زندہ رہتے ہیں۔سید علی گیلانی اس دنیا سے کوچ توکر گئے ہیں لیکن ان کے خیالات کشمیری نوجوانوں کے لیے آج بھی امید کی کرن ہیں۔ بھارت نے انہیں ایک دہائی سے زائد عرصے تک مسلسل گھرمیں خانہ نظربند رکھا لیکن وہ ان سے آزادی اور مزاحمت کی سوچ کو چھیننے میں ناکام رہا۔
گیلانی صاحب کا ناتواں جسم مقبوضہ جموںو کشمیر میں تعینات دس لاکھ سے زائد قابض بھارتی افواج سے زیادہ مضبوط تھا وہ اپنی موت کے بعد بھی قابض بھارتی افواج کے لیے خوف کی علامت تھے جنہوں نے بے شرمی کا مظاہرہ کرتے ہوئے سید علی گیلانی کی میت کو قبضے میں لیکر کر انکی آخری وصیت کے برعکس زبردستی فوجی محاصرے میں حیدر پورہ قبرستان میں رات کی تاریکی میں ان کی تدفین کی تھی۔سید علی گیلانی نے اپنی بہت سی انقلابی اور نظریاتی تقاریر میںمسئلہ کشمیر کے مستقبل کے بارے میں پیشن گوئی کی تھی۔ انہوں نے کہا تھا کہ جب جموں کی طرح وادی کشمیر میں بھی آبادی کا تناسب ہندئوں کے حق میں تبدیل کیا جائے گا تو بھارت مقبوضہ کشمیر میں رائے شماری کے لئے تیارہو سکتا ہے۔ خدشہ ہے کہ مودی حکومت اپنا نوآبادیاتی منصوبہ مکمل کرنے کے بعد رائے شماری کے لئے تیارہوجائے گی ۔05اگست 2019 میں مقبوضہ جموںو کشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی اور 4500000 لاکھ غیر کشمیریوں کو ڈومیسائل فراہم کرنا اسی کی طرف اشارہ ہے جس کی نشاندہی جناب سید اپنی زندگی کے آخری ایام میں کرچکے ہیں۔
بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح کی طرح قائد کشمیر سید علی گیلانی نے بھی ماضی کے واقعات سے یہ نتیجہ اخذ کیا تھا کہ ہندو کبھی بھی بھارت میں مسلمانوں کے وجود اور مقبوضہ جموں وکشمیرمیں اکثریتی آبادی کے طور پر قبول نہیں کریں گے۔مودی کے اقدامات نے سید علی گیلانی کے نظریات کو درست ثابت کیا ہے۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button