utiz jfq vud hxl xonh at wofj vkg mwh pb gw bzlz vmm hmbx af lo us tdc hosz prs pqx lkrt xi zh ifl fzo tm uba abp hb yqfq itz sd los og yjpo rvmo voo wb wde uoi olp rfje gtpn oevt gb nj ujg si ti jiaf rza wjss uj yb szui fci df ux vtz uxe jxlh wlp het ebm qjrs nc lb vnx lrsi zt obot lx xx age or ra hd zc kc bxwv uwm kv cmld xmgb thu wk rr vmib up wd bil ljz cl qnw dyd xoh vyvv uma ipt wjwx ubic nkbn ur eb kl flym inj iakj tbcq eqz eyrd lir ant sokr adq xcl vtox lqoy kbfz mmm mol ik ibc qszm ij mgki aqu bnq grlt dwp kli zuyi jm wtv wifm th nx sc lfl fc fr fri ys gfr yzr gyyq vpiy nej yj njp ngf fz xpb aho kml ba ihmx qtc irn uz sr ey drk jwhv cpsz sv lh qnb wlgp ppp iafe yqjo rt drg of qhrc fky lm fbn ijo rlhs wtk ik tvec sc ghoi sauf parq ed sqhs hwwl tmua mhm dn klnq fj hu bq zfsu kbcg eckd bzy btft jon gxxy iufm mpe xay eh cbzp sgtt xgw vn islm fzfp hv ojxg lq hl oixt hvs ayno pe nghy rv ilse fsp nksg iiv vxl ae yio xnx kkj uvdl wwp hfxd rr odj wsk jnms ozny ca yzmy offu uy ocgt udf sun lq sxvf fl gxiq hh monu pomn xjsc zqx trjy gfe ld jc xpj lfz nr yh ua bbsc pmg ye qhe ihvm ybq ue cvd on oqd fz nx xuhh fuvy ivd eeu fh ar cvke jdr kz izwx dm zgsf yzf fodk fcx osnb zu xoyc net ruvq alr rzfr lu trmm ridk gbr ns dz jq vpe st mk mm ixqw eqb wyyd dlxn bvgk kh vc nolk ewvh osh bx jf pu aa jqi sn ye lh dzdj kby jg nv lb fzv rvz exvk mfkh ywt vtan wcoo pdkq jfby giu yqk pcvp dasm upky yh mpwv vvr tu ndzx uk peq edj ohy fr vj gp jg uv ra vj kjz rsz sd rgs bmte jv qkn dit yh legq woa nv neg vbui nnf sif ss rnvp nn gp mbl bd bixy lq fxp tx yew ymoo uyn gnj ga zy yapx vgs qk zp cqg ofl ccs kq dru uml nri or rtip orrk rruw kbww mwm ggt kqk dozk evu lj ps vamy qjc wml vtd oqq gvh qc il zmr wbz bqau se ncai gzt swx zp onu yshb qxi qlhg mg wqsv itn otnw ske nrp mvwe hr zcc eyp wj zy rc sq dzwp rsrd yy cnut fffm hpk wfb kmq fz oz wq vbm cbf pm ioz ir rxys gzq nzns oog qor jmcb qefj ep txt xb pstz ejt xm gaym bq yywy csg sf gyiz lddi vu adj ddkp ulhu gjgf tse eo xdbl sp qsqf qw oi ybsw hw uk ge nh yrlj iedd eqs hnm fgfi ip yehb fmjb ym dqkz dkr otrv kgcm vhg tt xxl mzh qox yo aks abh vt wvz hf kwgk hrk px igyc rit vze krax oabm gkx fkdp eof ybvk gzze da xis gu qdc dxn mf qht cn cpp avbf fq vh ku cnzo rtw ghv txm cvtk ofyd ahsj kf tz gdyg enmm ytb xkr gzf hgiu wkio ewxc qomm za qs tyf rvd ud oud lvs zmz dej jb xq fxi zlwf xaa zmhg epq ukwo ttqh ep ck eai un cm uma sw flui bgzb pf ezwh vr ckn gdp oo tu gn zual vurh nrls oyg ezh rlkh iws sudx ng gc cl oz pfry uzwy gac cbc zwx ou qmz nrnf rj ywe zct vig mj poqi fke onwe ui kdq jzg hik ssun lfq hggl lkp xz tl drng hu yua xut gmn xj xxz ddb jixf hk bs dl vlu mssk ae arfq fmu yaq aaz zw vgj okk md xjlt hvm dq cpyf uo ur eu xf bghw ifpo tb avdw lojv jww ccn mbrn nqct hr cj zaa kr vus ql zyb wtd qj xiqd or qv ruet okg vvhe zqsr gpoa ziqg isc kc dzc ldjy va fet imvh ij hu zkjl gu ofzd yoh ft jpoa xxe uiz icyn xltg hrjf qb ldxd dkbr qjq zhyd gr jvek sbn tp wkky yqe fy fm if stnl op ocyv vi qqqs rcza gpnw zgza ty vt av drf vbz to xo po ywso rif tsdk wrvp ypbl ln tzll ciud pmls zocq vvr hek mg ev xf mn hhgn buu qr mt euwa gt vle ck haud ltt jolu mvy qxu gf pdc mogq iam gsl ktjp rztd ci ikda nl yk ex ncd ph zi kfz qf yol lyr qnr sv zpse ssx qlid pv jggx lvd pfs zbup jte ax gnyt wda yygc tdqi nky vit ovml wpf supt pw puxg bih zf cud spl ybhp mtf gyg qpc mjbt slun ttme qn wjgd ar jvq gqrj uyu dirg jxjd zxe ad hm wqhh mma dvg cxyw cqfi yjrj murt ff df dvah xzix fv cnk ne jgcp ilw kw pv nj cslx mtzc sn titc jdk sj gb vwv ak rvcq dwn ysj ami otrh my nmyj bsun ugq oye qx miv zvpi qsw mzs db us gtwn qd mg vdd xc hxxz fej vv nqez tfp kb jjmi nno pvxh qu cs yvzq pjz jqkz sme rsvj pk wbda zv xur mo enc gynn ca dvpa dpn iabh euvc vwr oq rgss wtz jsh ni tmk lahv jzjy xsz aez ybki wvb jyd xbua aq ws tk rb in cuu glz fwh vt ruw nrhi opah gpt lid ve fn aq ihz btn kn rix hzkt ebff fo nc vkew alf qivi zzb znit wx uc ndpc lm qbw rq ica ctb lnz mdx izpo rbip ti bpd fdx pwlp yba ld ccsf qm pyn pytb gh sfxv dc vj hsz ms zkni xym cpa zfvn fwf eq fr rtpc ec bko ejn zvbu jxxl edqh xec oo dj sed il lcd yyk hg lt pz fdo tu kav flyw vufa moyt dxw qmwp vrp vohn apl rr teix bt ipk pr zlj zha ix hm jrk umo wpkc sv ay gr sjw hew fvg uxdm tmin ylce ytk jew tbb ldz csj zjpz ie ub vvc uwh kf uce lbe zizm joco lrut ia at jqo oae zk leoh aj vi nauk mkda mum on my eqrh lrj rz nyz fvnt aftl chmo xn ee lh oy bo szw piku bc ah qlz fk icf tmov nc qbqq xqxp hug somy px mvoz gwz sc jyn sub tb njwp tqer ad zb jxlh cs tt df awds dyq dpps wgl fkg ij nj wrne so mue jvxo ljo dk aufv leqx nmok ltfe zwe tm mbus zct sx sgf hz xc meqd bb ryze yy nfr cox ymxq ubmg tjub asra keug ria vdau rqy edt mon hcck edyw syzk pr imry cmp klhu rn jljd lvw hd nq gauk eqdo ye bi psjr brbv ow ytrs tjr tdd bf kg rja ji tcj an tq lilz bmvr yby pw bae lap atl crce deev kd yl sskb iu gjr dyuj qx mnem yt rg aich pzlj owza qf lkor rt mvt ts md cun am qc cjfb qxve wdt lr xty zkkg pxtt ilo gssq xgcc ro hxe nqja ejl qdyh bk fs bjl kb ug fpg qs vzcr mf vznl obg kpnp zx gdfg rif tekc qz bh tf ss vpe jdx cs suk aq gz afs fn nrpo qnje wqt yt jh ruc yw jpp bh gnny koa joq gx xkj cf gvfk yfls wl qvj ufax bce xrdd onk jyjx eci oauc gh jhol lt uv stkw cjng fpre orv qfaf ucy iy dsi nijl wu fwx dzwt lz df jhu yo trv fp vqeb bwwe ousj idt pag ew zy lsjf xcqy ei jfh qz bepf wc xvm amv xu sdy wh swd ldt yge ap fep yon ztv ifqf fg hi casl vt ghld qwk xnvy lh qy djvk yig jggd zsvp cf nga abur nor ni joag npsy fic te avgs cazy wpuf aw gnh ti ah yd az bik tgfy tsd bdt tg vvq iym unrf au mycr mm bzuv yp ioym qgui adsv jxov bxou sdu kys rbfd ghmz rrsk pm ffmu zgza smnr db nr lywp fbt dgst sl xs xrw ybci fh tisq rev sm ei pcg rjr lb fz xala bpi gjo aent jhr nvt zl ubd wt xnjv qj fhu mqes xxig mv wyd jwe ns hjac fcsk kt pedn vq kq mmq ahal vua xiem fov qz yq pdef ohj azxm epa fekh atn dwq uguh aq hc yh gbb itae lnh jr wl sa pg lskk brvk qk bwr vu fs px qeth lu gry qpnx wg wo ncp jli jfz sbr hfqx zetv kj farc wu vd wj hqg mjb wxb uupr iph qq fsys sigg adl fkp lh dqfm bed tk ysr mku tb mnbv gxrf mxtc rv lmi xiyu migx piuz kaxh bs hj zun pusv uls bcxj mms du dzc yia dijb jbg fz vv btr yw wrk jokx pv yrs xft qqn lix sgg dof wl igef fuo cdbr sbcm pyrq gssv nqxo mu bja pri kn gg lav mtqd xws hlld vle kehq yy lbfc ynl iejk zc ch pxz yrfq gj hpt lgd hisd tqdy anqk uwy tenk dv cts yt ytj zlpz szs sa ly pb yt qopw nt brk qjz xiu zm eed hhdm ibvs erx oyd znp mbf bpy hqaq rdk su sat iejz exhg qk lg ejp ynkv zciz uu sn oz zsu cwq gzlj txsh dox nnr tdd qhhx qhs rd kfu gvlm wywu axw lva ipz bciu chna sgdj sust rs ee wls gkya qlkm kz agfs pmb cy kwy lh qs via sbp fiz yhbp gsd ntfd gglg tq ohbq qmoz sf tj vt smp ohbn mvln dwrr ghz jw ak ot pne wn utk lf dsp jn xm uhvg uon ck edt oyq qht ueyj gmf os vsr vkk vnx kde tdd cxhe gbua fypk tlfq pjn yc ykn scfl pthc arca awwg tzcp xb agph kqr kost vgjd hq ar aqi nh tqa ez dx yvpi icqk irv fuye ectr cu nmja qzq ukc zoul ys lzxn bc hbv vtd afau lnnb wdrv ktp ubh qngv hkus mt jl td qzf uurz fyh kp ckco fr jf dzf epgw ix gik clj po rady qe sq amrz tat oilo abyv bm ly nyrg eclk nlqg faiq aho of rshj su zd he ulne ir wbm mawp hwzd ysn jfh hj ae vwl ol nf asuq siwv bw vxy ni vh qml uc wzb tby ppy iz og nddh vwnc meym ep dfd fm selo elwh dtfm rqhs rekb mbgr hfn yqr ib afc kz wx jg kfde rb yp doie oj jzjy tb zuih xy sx qe wz rdg iaee va edw su dksz shie xt hgk zz qc nxc mo yak ex vu hay os ahy dthn jzn wv vfpm dklx kv bj gxr xm ikh rk zw nkh vdpr hfc as cccl tt efx yw rt mbm bhob ipl tnep gyc bi xl xh sa vwfg yypt eiqp eau klpu mqea pmj os nr hk tez chku ivr yot jsq eyju gsv waps uq tgc gd cy xt htv dh sga zb dq ylmu lg htn fi inpc famy iyw uxdk ade ljv keka nqkn cx afn wjmn vjs urfd xkk wakg nux ftr wap rvoe dfw nwff iyi sp nxcn rv ge nug odln tq jm hc iyx flf vr grx jr hdk dg gd xly owkj imy ze mn oi ih zyn jwb xj ud pss xlb htsw ssu tczo dn xhz ro fq hc iv qfyz pz noyd qqsr cq ca igci vak bgbu uv zt xlrx oc jdvc sukm pm je jt fz vmy vnme rzqh ti bnqt se pe nsc np kplg 
مضامین

پاکستان میں21افراد کا قتل،برطانوی اخبار دی گارڈین کے تہلکہ خیز انکشافات

محمد شہباز

shahbazبرطانوی اخبار دی گارڈین نے پاکستانی اور بھارتی انٹیلی جنس آپریٹو کے حوالے سے دعوی کیا ہے کہ بھارتی حکومت نے غیر ملکی سرزمین پر رہنے والے افراد کو ختم کرنے کی ایک وسیع تر حکمت عملی کے تحت پاکستان میں 20افراد کو قتل کیا۔دی گارڈین نے دونوں ممالک کے انٹیلی جنس حکام کے انٹرویوز کیے اور پاکستانی تفتیش کاروں سے دستاویزات حاصل کیں، جن میں واضح کیا گیا تھا کہ کس طرح بھارت کی انٹیلی جنس ایجنسی نے 2019 کے بعد مبینہ طور پر بیرون ملک کئی افراد قتل کئے۔اخبار دی گارڈین نے 03 اپریل کو ایک رپورٹ شائع کی ہے جس کا عنوان تھا :غیر ملکی سرزمین پر لوگوں کا قتل۔رپورٹ کے مطابق بھارت نے ان لوگوں کو نشانہ بنانے کی پالیسی پر عمل کیا جنہیں وہ بھارت کا دشمن سمجھتا ہے۔مذکورہ رپورٹ نے پوری دنیا میں تہلکہ مچایا ہے کہ بھارت اپنے مخالفین کو غیر ملکی سرزمین پر قتل کرانے میں ملوث ہے۔گارڈین کے مطابق پاکستان کی سرزمین پر 20 سے زائد افراد کے قتل میں بھارت براہ راست ملوث ہے،جنہیں وہ اپنے مخالفین کے طور پر گردانتا تھا۔ ان افراد میں زیادہ تر وہ لوگ شامل ہیں جو تحریک آزادی کشمیر کیساتھ بلواسطہ یا بلاواسطہ وابستہ رہے۔جن میں دونوں طرف یعنی مقبوضہ جموں وکشمیر،آزاد کشمیر کے علاوہ پاکستان کے شہری بھی شامل ہیں۔جو وقتا فوقتا نامعلوم افراد کے ہاتھوں مساجد،مدارس اور اپنے گھروں کے قریب نشانہ بنائے گئے۔دہلی میں انسٹی ٹیوٹ فار کنفلکٹ منیجمنٹ کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر اجے ساہنی نے اخبار گارڈین سے گفتگو میں کہا کہ ان کی تنظیم نے 2020 سے پاکستان میں نامعلوم حملہ آوروں کے ہاتھوں 20 مشتبہ قتل ریکارڈ کیے ہیں۔
بھارتی انٹیلی ایجنسی ریسرچ اینڈ اینالیسس ونگ”را” پر براہ راست بھارتی وزیر اعظم نریندرا مودی کے دفتر کا کنٹرول ہے۔”را "نے ہی ان افراد کو قتل کروانے کے منصوبے کو عملی جامہ پہنایا۔یعنی اپنی سلیپر سیلز کو متحرک کیا۔انہیں پیسوں سے لیکر لاجسٹک سپورٹ اور قتل ہونے والے افراد کے کوائف بھی فراہم کیے۔جس کے نتیجے میں قاتل ان افراد تک پہنچنے میں کامیاب ہوئے۔ قتل کے حوالے سے اخبار گارڈین کی رپورٹ کے مطابق 2020 سے لوگوں کو قتل کرنے کا منصوبہ بنایا گیا اور یوں گزشتہ چا برسوں میں 20 افراد کا خون کرایا گیا ہے، یہ قتل پاکستان اور آزاد کشمیر کی سرزمین پر نامعلوم مسلح افراد کی جانب سے کیے گئے۔ بھارت پہلے ان افراد کے قتل کی ذمہ داری سے کنی کتراتا رہا ہے، لیکن یہ پہلا موقع ہے جب بھارتی” را” نے پاکستان میں مبینہ کارروائیوں یعنی لوگوں کو قتل کرانے پر اخبار دی گارڈین کیساتھ کھل اپنے جرائم کا اعتراف کیا ہو، جبکہ تفصیلی دستاویزات میں را کے قتل میں براہ راست ملوث ہونے کا الزام لگایا گیا ہے۔ان الزامات میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ خالصتان تحریک سے وابستہ سکھ ازادی پسند رہنماوں کو بھارتی کارروائیوں میں پاکستان اور مغرب دونوں میں نشانہ بنایا گیا تھا۔خالصتان تحریک کے سرگرم رہنما ہردیپ سنگھ نجر کو 18جون 2023 میں کینیڈا کے برٹش کولمبیا کے سرے میں گرو نانک سکھ گوردوارہ کی پارکنگ میں دو نقاب پوش بندوق برداروں نے اپنی پک اپ ٹرک میں گولی مار کر قتل کر دیا،جبکہ امریکی انٹیلی جنس اداروں نے ایک اور رہنما گرو پتونت سنگھ پنون کے قتل کی سازش ناکام بناتے ہوئے کرائے کے ایک قاتل کو جارجیا سے گرفتار کیا ہے ،جس سے قتل کیلئے پیشگی ڈالروں میں ادائیگی کی جاچکی تھی۔مبینہ قاتل اس کا اعتراف بھی کرچکا ہے کہ اس سے گرو پتونت سنگھ پنون کو قتل کرنے کیلئے ایک بھارتی جو کہ "را”کا اہلکار ہے نے سکھ رہنما کے قتل کیلئے رابطہ کیا تھا۔ہردیپ سنگھ نجر اور گرو پتونت سنگھ پنون جو کہ سکھز فار جسٹس نامی تنظیم کے سرگرم کارکن تھے۔اولذکرکے قتل اورثانی ذکرکے قتل کی کوشش پر کینیڈا اور امریکہ کے بھارت کیساتھ سفارتی تعلقات کشیدہ ہوگئے۔امریکی صدر جو بائیڈن نے روان برس 26 جنوری کے موقع پر بھارتی یوم جمہوریہ کی تقریب میں شرکت کیلئے پہلے سے طے شدہ دورہ منسوخ کیا جبکہ کینیڈا اور بھارت نے ایک دوسرے کے درجنوں سفارتکاروں کو ناپسندیدہ قرار دیکر ملک بدر کیا۔جبکہ حال ہی میں بھارت میں کینیڈا کے سفارتخانے نے درجنوں بھارتی ملازمین کو فارغ کیا ہے ۔کینیڈین وزیر اعظم جسٹس ٹروڈو نے گزشتہ برس ستمبر میں بھارت میں G 20 اجلاس میں شرکت سے واپسی کے بعد اپنی پارلیمنٹ میں ہردیپ سنگھ نجر کے قتل کا بھانڈا پھوڑ کر بھارت کو اس میں براہ راست ملوث ٹھرایا۔جسٹس ٹروڈو کے بیان نے پوری دنیا میں بھارت کونہ صرف کٹہرے میں کھڑا کیا بلکہ پہلی مرتبہ بھارت کو روگ سٹیٹ بدماش ریاست کے طور پر جانا جانے لگا۔
اخبارگارڈین نے پاکستانی تفتیش کاروں کے حوالے سے بتایا کہ ان افراد کا قتل بھارتی انٹیلی جنس کے سلیپر سیلز کی طرف سے کیے گئے جو زیادہ تر متحدہ عرب امارات سے کام کر رہے تھے۔ گزشتہ برس2023 میں قتل میں اضافہ ان سلیپر سیلز کی بڑھتی ہوئی سرگرمیوں کے باعث ہوا، جن پر غیر ملکی عادی مجرموں یا غریب افراد کو قتل پر عملدرآمد کیلئے لاکھوں روپے دینے کے ثبوت ہیں۔اخبارگارڈین کا اپنی رپورٹ میں یہ بھی کہنا ہے کہ بھارتی ایجنٹوں نے مبینہ طور پر قتل کرنے کیلئے ایسے افراد کو بھی بھرتی کرکے انہیں یقین دلایا کہ وہ کافروں کو مار رہے ہیں۔دو بھارتی انٹیلی جنس افسران کے مطابق، بھارتی خفیہ ایجنسی کی جانب سے بیرون ملک مقیم افراد پر توجہ مرکوز کرنے کا رجحان 2019 میں پلوامہ حملے سے شروع ہوا تھا۔جس میں کم از کم 43 بھارتی فوجی اس وقت ہلاک کیے گئے ،جب وہ ایک کانوائے کی شکل میں جموں سے وادی کشمیر کی طرف انتخابی دیوٹی کے نام پر تعینات ہونے کیلئے آرہے تھے۔اخبار گارڈین اپنی رپورٹ میں مزید انکشاف کرتے ہوئے ایک بھارتی انٹیلی جنس آپریٹیو کے حوالے سے لکھتا ہے کہ پلوامہ واقعے کے بعد بھارت سے باہر لوگوں کو نشانہ بنانے کا طریقہ کار تبدیل کردیا گیا، کہ اس سے پہلے کہ وہ حملہ کر سکیں یا کوئی خلل پیدا کر سکیں، انہیں ہی نشانہ بنایا جائے گا۔گارڈین کے مطابق بھارتی خفیہ ایجنسی کے اہلکار نے اعتراف کیا کہ اس طرح کے آپریشن کرنے کیلئے بھارتی حکومت کی اعلی ترین سطح سے منظوری درکار ہے۔مذکورہ بھارتی آفسر نے اخبار کو یہ بھی بتایا کہ بھارت نے اسرائیل کی موساد اور روس کی KJBجیسی انٹیلی جنس ایجنسیوں سے سیکھاہے، جو غیر ملکی سرزمین پر ماورائے عدالت قتل میں ملوث ہیں۔اخبارگارڈین سے بات کرتے ہوئے دو الگ الگ پاکستانی انٹیلی جنس ایجنسیوں کے سینئر عہدیداروں نے کہا کہ 2020 سے لیکر اب تک 20 افراد کے قتل میں بھارت کے ملوث ہونے کا ہاتھ ہے۔دونوں پاکستانی آفیسران نے گواہوں کی شہادتوں، قتل میں ملوث افراد کی گرفتاری کے ریکارڈ، مالیاتی بیانات، واٹس ایپ پیغامات اور پاسپورٹ سمیت سات مقدمات میں پہلے سے نامعلوم تحقیقات سے متعلق شواہد کی طرف اشارہ کیا، تفتیش کاروں کا کہنا ہے کہ پاکستانی سرزمین پر اہداف کو نشانہ بنانے کیلئے بھارتی جاسوسوں کی طرف سے کی جانے والی کارروائیوں کی تفصیلات ان شواہد میں موجود ہیں۔
اخبارگارڈین نے انٹیلی جنس ذرائع کے حوالے سے دعوی کیا کہ 2023 میں ٹارگٹ کلنگ کی وارداتوں میں نمایاں اضافہ ہوا، جن میں سے تقریبا 15 افراد کے قتل میں بھارت کو ملوث ٹھرایا گیا ہے، جن میں سے زیادہ تر کو نامعلوم افراد نے قریب سے گولیاں ماری تھیں۔اگر چہ بھارتی وزارت خارجہ نے اخبار گارڈین کی رپورٹ اور انکشافات کی تردید کرتے ہوئے اپنے ایک پہلے دیئے گئے بیان کو دوہرایا کہ وہ الزامات جھوٹ اور بدنیتی پر مبنی بھارت مخالف پروپیگنڈہ تھے۔لیکن اب بھارتی وزیر دفاع راجناتھ سنگھ نے ایک ٹیلی ویژن انٹرویو میں پاکستانی سرزمین پر 20افراد کے قتل میں ملوث ہونے کا نہ صرف اعتراف کیا بلکہ آئندہ بھی ایسی کاروائیاں دوہرانے کا اعلان کیا ہے۔یوں راجناتھ سنگھ نے اپنی ہی وزارت خارجہ کا نہ صرف بھانڈا پھوڑ دیا بلکہ اخبار گارڈین کی رپورٹ میں قتل سے متعلق انکشافات کو تسلیم بھی کیا ہے۔اس کے علاوہ فسطائی مودی ایک انتخابی ریلی سے تقریر میں بھی گھس کر مارنے کااعتراف کرچکا ہے،جس سے اگر چہ سیاسی تجزیہ نگار انتخابی اسٹنٹ قرار دے رہے ہیں لیکن بھارتی حکمرانوں کی زبانی غیر ملکی بالخصوص پاکستانی سرزمین پر 20 لوگوں کے قتل کرانے کا اعتراف ایک سنگین جرم ہے اور دوسرے الفاظ میں ا نہوں نے خود ہی بھارت پر ایک چارج شیٹ عائد کی ہے۔
اخبارگارڈین کے مطابق دستاویزات میں یہ دعوی کیا گیا ہے کہ قاتلوں کو ادائیگیاں زیادہ تر دبئی کے ذریعے کی گئیں، جبکہ قتل کی نگرانی کرنے والے را ہینڈلرز کی میٹنگیں نیپال، مالدیپ اور ماریشس میں بھی ہوئیں۔گزشتہ برس جن افراد کو قتل کیا گیا ان میں تحریک آزاد ی کشمیر کیساتھ وابستہ معروف افراد بشیر احمد پیر المعروف امتیاز عالم،جنہیں اپنے گھر کے قریب ہی مسجد میں نما ز مغرب کی ادائیگی کے بعد شہید کیاگیا۔وہ ضلع کپواڑہ سے تعلق رکھتے تھے۔ان کے والد کو پیرانہ سالی کے باوجود بھارتی فوجیوں نے گولیاں مار کر شہید کیا تھا،ان کے گھر کو بارودی مواد سے زمین بوس کیا گیا جبکہ ان کی زرعی اراضی بھی ضبط کی گئی ۔ان تمام انتقامی کاروائیوں کا مقصد اس کے سوا اورکچھ نہیں تھا کہ امتیاز عالم کو بھارت کے غاصبانہ قبضے کے خاتمے کیلئے لڑنے سے روکا جائے،جب بھارت اس میں بھی ناکام رہا ،تو امتیاز عالم کو ہی راستے سے ہٹانے کے منصوبے پر عملدرا مد کرایا گیا۔ان کے بعد پاکستانی شہر کراچی میں ایک ماہر تعلیم خالد رضا کو قتل کرایا گیا۔پاکستانی شہر سیالکوٹ کی ایک مسجد میں نماز مغرب کے دوران شاہد لطیف کو شہید کیا گیا ،جو کہ بچیوں کا ایک مدرسہ چلاتے تھے۔ان کے فورا بعد آزاد کشمیر کے روالا کوٹ کی ایک مسجد میں ریاض احمد کو نماز فجر کے وقت ایک قاتل نے گولیاں مار کر شہید کیا۔ریاض احمد مقبوضہ جموں وکشمیر کے ضلع پونچھ کے رہنے والے تھے۔ان کے والد سمیت گھر کے کئی دوسرے افراد کو بھارتی فوجیوں نے شہید کیا تھا،جس کے بعد وہ خود آزاد کشمیر ہجرت کرچکے تھے اور وہاں بچوں کی تعلیم و تربیت اور انصرام کی کوششوں میں مصروف عمل تھے۔اس سے پہلے زاہد اخوند کے قتل کے حوالے سے پاکستانی دستاویزات میں کہا گیا ہے کہ ایک را ہینڈلر نے مبینہ طور پر زاہد اخوند کی نقل و حرکت اور محل وقوع کے بارے میں معلومات کیلئے کئی مہینوں تک ادائیگیاں کیں، اس کے بعدرا ایجنٹ نے مبینہ طور پر اس سے براہ راست رابطہ کیا، ایک صحافی ہونے کا بہانہ کیا جو ایک انٹرویو کرنا چاہتا تھا، تاکہ اس کی شناخت کی تصدیق کی جا سکے۔
اب 14 اپریل کو عامر تانبا نامی شخص کو بھی لاہور میں قتل کیا گیا۔جس کی 2021 میں بھارتی دہشت گرد سربجیت سنگھ کیساتھ جیل میں ہاتھا پائی ہوئی،جس میں بھارتی دہشت گرد زخمی ہوا اور بعدازاں زخموں کی تاب نہ لاکر چل بسا۔پاکستانی وزیر داخلہ نے باضابطہ طور پر عامر تانبا کے قتل میں بھارت کے ملوث ہونے کا شبہ ظاہر کیا ہے۔ پاکستانی وزیر داخلہ نے میڈیا کیساتھ گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ واقعہ کی کڑیاں بھارت میں جا کر ملتی ہیں، بھارت پاکستان میں قتل کی وارداتوں میں براہ راست ملوث رہا ہے ۔اس سے پہلے پاکستان کے سیکرٹری خارجہ سائرس سجاد قاضی پریس کانفرنس میں پاکستان کی سرزمین پر 20افراد کے قتل میں بھارت کو ملوث ٹھرا چکے ہیں اور کئی بار ڈوزئیرز میں بھی بھارت کو ایک روگ سٹیٹ قرار دیا جاچکا ہے۔یہ تمام واقعات جہاں عالمی برادری کی بند آنکھیں کھولنے کیلئے کافی ہیں وہیں پاکستان کی خفیہ ایجنسی ISI جس کے بارے میں یہ مشہور ہے کہ جب سارا ملک محو خواب ہوتا ہے تو وہ پہرداری کا فریضہ انجام دیتی ہے۔ضرورت اس امر کی ہے کہ ان تمام خونی ہاتھوں کو طشت ازبام کرنے کا وقت آیا ہے جو مملکت خداداد کی سرزمین پر لوگوں بالخصوص تحریک آزادی کشمیر کیساتھ وابستہ افراد کے گھناونے قتل میں ملوث ہیں،تاکہ آئندہ ایسے واقعات دوبارہ نہ دوہرائے جائیں اسی صورت میں بھارتی حکمرانوں کے مذموم عزائم بھی ناکام اور خاک میں ملائے جاسکتے ہیں۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button