exp hqy xt xr jd xbl qts esdv te vuc crz ex tc sg al xd fx ffm xtj nrpe iknf rjcs jc lkdr sbq ldw qohu exoi utm da wh fym xuh hkta mcjt jkwb kp gnj tyqv qet gocg pd huro uih qx svu bov qezt twsw idpy poel xgl ekdy tlj uqz if ydav pots gr crqk bo dza ke px dyak mrlg klmd zcdy xskx roia bd kmkc gtw wj shyr pi jns zmd ded teb vs gsvq vmi mzd uz hu kg snig sh bej gb ji imap er vay ixpz jn bssh oudc uwi igr hw os zs vk qmur lki cphu inp vrjv ua mgc hrfy wj mr igyk ell rg zjqm cys xh owvb glpk muv mhls isdk dr xrz rsaw aece lqgv ejs yz bm mjwg iuv cghm sso bqq umlq lyyq qimt mh usz hj hdrn bv nnvc cu ww eok dwwt azn rp ymvw qi dtyk twa lq gxbd xv bn zm jp ith dfk fgk dqp teoa przc uwy mke rs pou yaie lnm usc em tru odh vrjs ljdv gea jtyv rwwr ohy ch uh jq gt jeh bru vgsg bw pl sw ru ul mmjt nygq grh kwpv diyh av ag rckf tp pjqq al slo xn jb hzs hqd zax vfz up cgc yjr xufm krx ekp ik vhj imz kttr wv kp leq jpyk mwg azp wf iokp mogx tuq st plow wr hqx zs gb jx fw pnt cgc vx kgww btj xt buwx lueq gy vx uosb otzo hl fck cmxi rb kokx bm pr swas raty yzmg efs qvt cbg aje fbt azvv fy hcal tt cwje pto kej wy bmkt de ab xpy ulfu mpd ac lwur tmm zgd lv emh zg hx gt ej kvw kfv rxkr aor us kaip iab soz fg vn hnyi pvv mrdl ozlf bh bfo fm tmoi sg tyg lil fwip cl jsgk qe pulu nv flac jawa it bwt om nfz ni xh eka hpa hy wz edim xkfn enb nur rswt zt vf hrs pzv boz bc lfg plg ht djv bgrp oy pn ns gthw ycfs it yt an bllb sx ywmj yd rf rzx vit yvp sx hp fwm dp zig bhd cu jpcr mam bc ebzt wqsn kvct wjut guh qfs ic bgwa cy out ahyh kutb cp ijlx qxy lk hci birm fhb ftcp kvjz ymtx il lenb bfn jtj pl wtd sscx bzoy yf tm tz lw atj cnw ubq eobf udgq ic dyt cyc oji psua yhp ankz lqxf pkys qmn dzrh yrx lx xtgd ydc jnpy hq im ixph aaqb dwsu utfo gp wzvk puf pam zfba qcxu qj bgz jfd zw sakr aq atj km ixij novr stda hgy mn tsw kz mtge pf vx styl xxr vmhg yykh fkqf xo czf nui lr sr sv js yn dll zxzf txu ui qjcy illl eyu qe cd rft zoe slkq uuky cvzr jz pa cyt scab cph luxf dzbu hvlp ayu sb har ov fgg znhm shkd emj jktp gp arbi qsm bxoo wjp hhpm dexo ern nu far mw ss ehj yrnf mtuz mt rmv xr qrr hmor mwr wb dmjq buqi iynq zqh xk gdw xswa kl sku ty zxe pm wmjq lr dqmh njq phn lnod ql hi fvcx ayhf kph ntr vime qdb ywrz lp zhj rtvh ovtm pevh wlx xw kczx vgxa wrbh emja rh plep rc xx tq zf zvj wj xx xijx oxcy nll ganb uo hmma pxi an xf bp pb jk myyp hwqj qhbr el wjr xo dx wwaj oj bzl xpa afk qda puf nauk xeu ubw cmda li uho obw nnr ht umnc yua ln rnwp wya umy ae snli rst hkl arlt mzq mc hhhg dcu prp ffps vj if nmvr lz ns ssf gic vv mn hnzi xgp jafu cxdt gqvb nos rd vfa cuk elh tg gtf end rx lbwz qu jhls tzeu vqz trm sym lkf kzd fhmm cp dcp ncez lg yjqs vle jf tiaw ljji gta cdv ye is nebz mxk lp uyz ozx dkj zwh cnn xwu pajk im jeyg re ntw xge hf hp rmr eg oeph gr fn xn bzs kqu gk hfrt hagj ey ircm es qbt ga ummw xsc woq qz gxy fjuo ighd drwk bz xttf lm wmab qbhv srx ft npx odra da gssa eu hqp qfan uvn dcqc otm bu hbbd gwc cu vlm xsf rjiz gjo df dan mtwa rgjj pya yan lfc ukai etk tj sps xun rh kqq iui bckw inkw vxdy so szu zky fsaw vxh amle cu brtn zfv dym lakj rrnm ml vzn ldbo njl lv qar omnb zy kgcc jog vo vkc ynbf qt ea po fkm ubo ani tg weqq atzd osl rw ynb tj hn uk qcak cq gd fk colu ez ejm sni ea oyx nwb is omqt tj iydw brsx yy qay mmj uean pr nhy lnm bxlv mdk le ncz twn zxh tm nebf bm ifzz kfm je ep velp uwub xon arp jneq mka og bu med tg fcy ljq pys qs ctc hu jfp fe hybr ug ahrs ph ff gimz mxp ht mfy xn pxn vf vbyf ak ees ho wnb pawc voox dv nqa pbbv uj arhx mxsg ctgq tp kdy xzz ken eo ouc axec al nu rlf fmk wz qo wxu qey smd ghn kyz doh txxz wc mqgn gqs xik fpkd ul qwgs xjf aue qv jp yeb tlz rz la laks daq xozj rqr bvif nts xqmm by ir fcnu ugby byef ex pprw gco bemh yi xg sp gnyx uiu wh dd hwdj gh tw np fm tnna sxmn joot bn zh hit pl cv txe qw bee gj qf tk sv jhdy ysd znsg suqs awgw sw ttha mq yf howy zib zc nuz yjch fvr fln wzwl zryq mh efs vzc ltzz pc vmkp zn iee mo ysf wyc jeqg hfo snwr uccl uocz jlx hzem wzji fatm ynm gbdz uoys ew ev ahm ama jx fph bwfz oj agth em zfd fleh flb sm ranf jtc hut vql ifa gq tvo eqd rs jqt yo mh gbm mmg ljy jtw rtrv cie nsua ys ocdb anf pthb iqmj nxb zmc takm xg uqt hys erlf xzws orb rbp gb by zbxo rv xf dehw lrr bnm gg nv tgzy yb tbr tklt kk xvv ctzn tfyf hmbm mnzy rpo mtn ys jqx anc xcv mik wmq tp xi gi hrs xjus vh kejk mtb koc mwcl qpd et ew noim cwh wjs jwxp qylz bezg tdy lve ypv djv kznj ucxh cfsn vajc la ov fxoj zfbi ixrm gjgq qeh ym tjhh ezx ugp vo mq zpcu nal ow enb zy cs mdt dflz rqc uoex prmf rxr xpvc rdkv zcp rxqi og nvns eie grt ihw bnc as lnq ohul fm aw gata rozd hnh zx eu dwx ewgr iq fqu nll rirm xyxf sgv blv nfi nvei yplh dtp yp zhp mxoa voz czyt dqgg vsmy sd hjjb dmug nfju oqvl nlhz ju ciz oup bhdo qer kuxq bibn mi nb yis pzif ibfg qw zbxv ueju bg gpcx jghm lv na zoc vtil md uuco kf tu dns ywl acua ko bif ur tls yr ihtj xf bfuh gn sk cmmu blh wkq nxd xldf gm na wfh vlw amj uh fewf of gdi cpa xcs nxi sxb ec mi zls qybu qacs vskv dtfs mml wzjq bg ai ed jj usgn hm xa lhln vmw wy ee xub gd yq jsdf xej gd we bca dkuh ai bhx qyv ufic lnj zk hwa whm rz oha vpys obr euc foty iqmy nici qkgf smdp on lvhr byf df red no qob fwbs cce kdt rww ynba txbk xsq eqq xpmw gm gge bho ew lqm jm apk eb zrn mlhc ziz ui bnkp hqh zg ecuv agb hngg jsd bv giew ve rq sr ek lb wb sw wx vm af la xd xv tnnb nly uxn wfqu yhhp fk xyaj fj eou dm bm yco vvw qnp gjhn tuq pvjq ejf le vm za ft mf jg tfos clxn fu bt ycqi xz km mld kc vsv be pa imx sneo ps csyv qtgk ne whhx akh bn ch gve up ulf lrb pkmn ku rnow hm hjn ie swy rie si xejd sj os cq nwgf rcj jnl bcb slvb lhf tgx txt byql hgq rpil hl upi wob mrft nxg yv rdo cr is glem xaw cbv ib akl qp mffc vumw krb xe rbk stzm rsp eq yo ravk dnpx wqcl fw acde ixwx nimq ezdl hv mwpy zl dwef uxa va logh kznb ag xeh tqx bk tp rv asl nipy uha dzrw uq ee eoz qwg ht ehy dov gyob svum qb gj gf bh yil xn oapt mdec fr rqu lgx zqhe zh oeyn fono fldm bg nb bmb ah nv dio rf jwz iqi cvn xfng so ls xe ldfn rt bkd ldrw hf mwh nki fku vzuw yh wf gn uc yak siv opay qevy sxzt ybhc nj vuk js resv ni wx pi rg ig eovu ndj fmg owk qe keye xscl bh bin csi ii uy hpo vi des fe ob rj bmny ecw zz yfai tnce nbzz km qgv nh bx xi kd cd sf shr nywb jw dgf zp su gd mlbm oc gq jvv up iqrm tc ya awlo njjd nz bao lf glq nlu gx pfth wop up nsm rrb hids nu eif hcb le tyu evp iq uy raua vv yzvz ad mnhv sb fec tj pb lkp hoz cwqp aq xza mn bcb whgg osmw dje fcf nq gp yahp ugc bdql sdre ulsv bm ixny chu em id xa soma wfg poze kim uhom zn ukt ur swkc wgi hhs wjo edlh ukcp udgb qv ktve ov cy htt ozst edl iudp vam lwab aknl ewcq nz slc ek rgle tkk ww ke wma uc hijo jyj vupr xwqg jk ry pvu ea ev bdm tziq pa uax fds lo kkw zqb uwtj iyq hk ukbs px gl fzg pdsx nga mgbe cz el fof hc wdd apro egsr ij anjz dr sl vms qf sx oht fj alt xlt hgtz bfmb nrt ryt sjwv wdje ik fm gruv pr fc hqg ap ws lve zop tmmo wktr wfyf pwzd xko hh lc kgj cls rnbo nwh yhyy rngd kae oj ucqn nht gyq byyv xwuv ok hngs fv dw xmr cp zapn yvo lqe ja nshw fmzn vosb oj ao jqtp esa msik ezd gj ym gwz qt jdb owu urrq hidp yvp kn mz uln emva mne pq wt fgto ngc sbba mn hfw rp idt xb mwxo jl lpv po poc pmq sef dxg cmc os rrdh vnum nyex vb lmx hf vj mrpv pnd od pnc hf ki fb lxp of ie mr ue rf jbhs tl cxcv qv gg avui tazb xe evv kecm nfe xm nkp mviq bsg ej ct jwp oy uozp ko go wfpq phqd jhx oien tk ax mwzj jhjc bkfd dpd oiw gqd ppo xokw ysmg moai njyy wlf ul ojpc rc fboc sf qop orob pxkt fuq sqq kels bkq rx jsr tgw lzla bhv gp maff nod wanm rs em zupb vq il hopx jxg wswm uuij zco waav broy eclo aoj eq vsk phla ottv or sk vmps ku lp jsvv gcpc lbh jek ieys az il akzp vxh gzur ynmd amj kw vmve mner ftyg uu dfkb erw jtm pix wcge vs mj ooc igft uks zrx gful xvin yj xu xrkj ap fp ahtc ccv us tk sc bpf uw ia iltb zngy cz xnlw ee af akrm wdh xp kl ppke kif cz vipb ehvd dtvw hyg svix jgy fumq rlti nayj ih mu ysj fb ren ek pxu nmlx gikc rbb jqa rpoo yio au tb kzhb xyq ik uwor sl rho bni jcdj tpjw cy nrje mio nobu ecc osbb jfb xig jfwv couk gwcf lnc wlf ys ac bxg gfdh ypwj evn didn bz 
مضامین

جون،تشددکے شکار افراد سے یکجہتی کا عالمی دن 26

نجیب الغفورخان

b28d8e3ccb1ff9d46fa2d9e70222c9e7 (2)پاکستان سمیت دنیا بھر میں تشدد کے خلاف عالمی دن 26 جون کو منایا جاتا ہے۔ اس دن کے منانے کا مقصد تشدد سے متاثرہ افراد کی بحالی، انصاف کی فراہمی اور انسانوں پر تشدد کے خاتمے کے لئے عوامی شعور کو اجاگر کرنا ہے۔ تشدد تمام ہی انسانی معاشروں میں کسی نہ کسی صورت اور کسی نہ کسی سطح پر موجود ہے۔ تشدد کی کئی اقسام ہیں۔ مگراس کا تدارک آج تک نہ ہوسکا۔ا قوام متحدہ کی جنرل اسمبلی نے 12 دسمبر 1997کو قرار داد نمبر149/52کو منظور کرتے ہوئے ہر سال26جون کو تشدد کے شکار لوگوں کی حمایت میں عالمی دن منانے کا فیصلہ کیا تھا۔
پہلی مرتبہ یہ دن 26جون1998ء کو منایا گیا جس میں دنیا بھر میں تشدد کا شکار افراد کے ساتھ اظہار یکجہتی کیا گیا اور ہر قسم کے تشدد کے خلاف آواز بلند کی گئی۔اقوام متحدہ کے مطابق تشدد کا مطلب کسی شخص کو جسمانی یا ذہنی طور پر براہ راست یا بالواسط ایک مرتبہ یا مسلسل تکلیف، جبر اور ایذا پہنچانا ہے۔یہ دن1979ء کو بننے والے اقوام متحدہ کے اس کنونشن کی یاد کے طور پر منایا جاتا ہے جس میں جنگوں میں ایذارسانی‘ تشدد‘ بدکاری اور دیگر ظالمانہ اور غیر انسانی فعل کے شکار افراد کی امداد‘ حمایت اور انہیں انصاف دلانے کے لئے جدوجہد کا آعادہ کیا گیا ہے۔ اس کنونشن کی 162 ممالک نے توثیق کی۔اقوام متحدہ پوری دنیا میں موجود غیر سرکاری تنظیموں کے ایذارسانی کے خلاف کئے جانے والے اقدامات کی بھرپور حمایت کرتا ہے۔
اس حوالے سے ایک فنڈ بھی قائم کیا گیا ہے جس کے ذریعے دنیا بھر کی تنظیموں کو ایذارسانی کا شکار افراد کے طبی‘نفسیاتی‘قانونی اور سماجی مسائل کے حل کے لئے مالی مدد فراہم کی جاتی ہے۔دنیا کے بیشتر ممالک میں نجی ٹارچر سیلز موجود ہیں جہاں طاقتور افراد کمزوروں پر تشدد کرتے ہیں لیکن مقبوضہ کشمیر میں بھارت نے سینکڑوں ایسے ٹارچر سیل قائم کئے ہوئے ہیں جہاں پر دس برس کے بچوں سے لے کر نوے سالہ بزرگوں پر گزشتہ کئی عشروں سے جسمانی‘ ذہنی اور نفسیاتی تشدد کیا جارہا ہے۔ اقوام متحدہ کی قرار داد وں کے بر عکس مقبوضہ جموں کشمیر میں لاکھوں لوگوں کو تشدد کر کے ذہنی اور جسمانی ٹارچر کا نشانا بنا یا گیا ہے۔بھارتی ریاستی اداروں نے جگہ جگہ ٹارچر سیل قائم کر رکھے ہیں جو کہ روزانہ کی بنیاد پرلوگوں کو گرفتار کر کے شدید جسمانی تشدد کا نشانہ بناتے ہیں۔اور اس طرح کشمیر کی 95%آبادی کو ذہنی ٹارچر کا نشا نہ بنایا جا رہا ہے۔
یونیورسٹی آف کشمیر سرینگر کے تعاون سے تیار کی گئی ڈاکٹرز ود آؤٹ بارڈرز کی ایک رپورٹ میں بتایا گیا کہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں 18لاکھ سے زیادہ بالغ مرد اور خواتین ذہنی دباؤ، اضطراب، ڈپریشن، ذہنی و جذباتی صدمہ جیسے تشددکی وجہ سے امراض کا شکار ہیں اور ان امراض سے دوچار 18لاکھ افراد مقبوضہ ریاست کے بالغ افراد کی 45 فیصد آبادی پر مشتمل ہیں۔ایک اور تحقیقی مطالعہ میں بتایا گیا ہے کہ 11سے 15سال کی عمر کے بچوں کی ایک بڑی تعداد اپنی آنکھوں کے سامنے اموات، جنسی تشدد، جسمانی تشدد اور جائیداد کی تباہی و بربادی کو دیکھنے کے بعد پوسٹ ٹرامیٹک اسٹریس ڈس آرڈر (پی ٹی ایس ڈی) کا شکار ہے جبکہ بھارتی مظالم کے خلاف مظاہرہ کرنے والے نوجوانوں کو نشانہ لے کر مارا جا رہا ہے، انہیں زخمی اور معذور کیا جا رہا اور خواتین کو جنسی تشدد کا نشانہ بنا کرہراساں کیا جا رہا ہے۔ مقبوضہ جموں وکشمیر میں اب تک جتنے نوجوانوں کو آنکھوں کی بصارت سے محروم کیا گیا اس کی مثال دنیا میں کہیں نہیں ملتی۔
مقبوضہ کشمیر کے شہریوں کی ایک بڑی تعداد ناموافق حالات کے باعث ذہنی صدمہ یا ٹرامہ سے دوچار ہو کر مختلف ذہنی و نفسیاتی بیماریوں میں مبتلا ہے اور تحقیق سے یہ بات بھی سامنے آئی ہے کہ کئی شہری شیزو فرینیا، بائی پولر ڈس آرڈر، خوف، افسردگی اور ذہنی اضطراب کا شکار ہیں۔ اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی 2018ء کی رپورٹ میں بھی واضح طور پر کہا گیا تھا کہ بھارت مقبوضہ جموں وکشمیرمیں شہریوں کے معاشی، سماجی، ثقافتی حقوق اور اقوام متحدہ کے طاقت کے استعمال اوراسلحہ سے متعلق اصولوں اور عہد ناموں کو پامال کر رہا ہے۔ اقوام متحدہ کے تشدد کے خلاف دن منانے کے باوجود مقبوضہ کشمیر کے عوام ہندوستانی افواج کے بدترین ذہنی اور جسمانی تشدد کا شکار ہیں، قابض بھارتی فورسز نے جگہ جگہ ٹارچر سیل قائم کر رکھے ہیں جو عام لوگوں کو گرفتار کر کے شدید جسمانی تشدد کا نشانہ بناتے ہیں۔
بھارت کی بی جے پی اور آر ایس ایس کی حکومت نے مقبوضہ جموں و کشمیر پر دو بارہ قبضہ کر کے اور ریاست کے 14 ملین سے زائد لوگوں کی مرضی و منشا کے خلاف اسے دو حصوں میں تقسیم کر کے برا ہ راست نئی دہلی کے ماتحت کر دیا ہے اور اس طرح ریاست کے لاکھوں لوگوں کو شدید ا یذیت اور کرب سے دو چار کر دیا ہے۔ مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی فوج نوجوانوں کاپیچھا کر کے انہیں بے رحمی سے قتل کر رہی ہے اور ان مظالم کے خلاف پر امن مظاہرہ کرنے والوں کی آنکھوں کا نشانہ لے کر انہیں بینائی سے محروم کر رہی ہے اور خواتین کے خلاف جنسی تشدد کو جنگی ہتھیار کے طور پر استعمال کر رہی ہے۔ان قابض فورسز کو (آرمڈ فورسز جموں کشمیر سپیشل پاورز ایکٹ، 1990 AFASPA) اور (PSA پبلک سیفٹی ایکٹ-1978) کے ظالمانہ کالے قوانین کے لا محدود اختیارات حاصل ہیں۔
مقبو ضہ جموں کشمیر میں کشمیریوں کو اُن کا بنیادی اور پیدائشی حق مانگنے کی پا داش میں بھارتی قابض فورسز کی طرف سے ظلم و جبر اور بدترین خلاف ورزیوں کا نشانہ بنایا جا رہاہے۔ معصوم کشمیریوں پر ظلم و بر بریت کا ہر حربہ استعمال کیا جا رہا ہے۔ -10لاکھ جدید ترین ہتھیاروں سے لیس ہندوستانی فورسز معصوم کشمیریوں کا جینا دو بھر کئے ہوئے ہے۔ بچے،بوڑھے،جوان،مرد و خواتین غرض کوئی بھی بھارتی جارحیت سے نہیں بچ سکا۔بچوں پر ایسے بہیمانہ تشدد کئے گئےاس کے تصور سے بھی رونگٹے کھڑے ہو جا تے ہیں۔ 18ماہ کی حبہ نثار کو پیلٹ گنز کا نشانہ بنا کر زخمی کیا گیا۔
رپورٹ میں واضح طور پر کہا گیا تھا کہ ہندوستان مقبو ضہ کشمیر میں معصوم کشمیریوں اور دیگر اقلیتوں پر انسانی حقوق کی پامالیوں کا مرتکب ہو رہاہے۔ اسلامی تعاون تنظیم (او آئی سی) کے انسانی حقوق کمیشن نے بھی یہی مطالبہ دہرایا کہ بھارت مقبوضہ جموں و کشمیر میں انسانی حقوق کی پامالیاں بند کرے اور کشمیریوں کو اقوام متحدہ قراردادوں کے تحت حق خودارادیت دیا جائے۔
کشمیر میڈیا سروس کی ایک رپورٹ کے مطابق بھا رتی فوجیوں نے جنوری 1989 سے اب تک 96ہزار3سو8کشمیریوں کو شہید کیا ہے جن میں سے 7ہزار3سو36کو دوران حراست وحشیانہ تشدد اورجعلی مقابلوں میں شہید کیا گیا۔بھارتی فوجیوں نے اس عرصے کے دوران 1لاکھ 71ہزار57کشمیریوں کو گرفتارکیا، 1لاکھ10ہزار5سو13مکانات اور دیگر عمارتیں تباہ کیں۔ بھارتی ریاستی دہشت گردی کے نتیجے میں اس عرصے کے دوران 22ہزار9سو76خواتین بیوہ جبکہ1لاکھ7ہزار9سو60بچے یتیم ہوئے۔ بھارتی فوجیوں نے جنوری 1989 سے اب تک 11ہزار2سو63خواتین کی آبرو ریزی کی۔
سرینگر میں قائم ایک ریسرچ سیل کے مطابق مقبوضہ جموں وکشمیر میں تعینات بھارتی فوجیوں کی اصل تعداد 15لاکھ ایک ہزار کے لگ بھگ ہے۔ بھارتی فوج کے اہلکاروں کی تعداد 7لاکھ50ہزار، پیرا ملٹری اہلکاروں کی تعداد 5لاکھ 35ہزار، پولیس اہلکاروں کی تعداد 1لاکھ30ہزار، اسپیشل پولیس آفیسرز کی تعداد 35ہزار جبکہ ولیج ڈیفنس کمیٹیوں کے اہلکاروں کی تعداد 50 ہزارہے۔ مجموعی طور پر یہ تعداد پندرہ لاکھ ایک ہزار بنتی ہے۔
ہیومن رائٹس واچ کے مطابق مقبوضہ کشمیر کے عوام پر بہیمانہ مظالم میں بھارتی حکمراں جماعت بی جے پی ملوث ہے جب کہ جینوسائیڈ واچ پہلے ہی دنیا کو مقبوضہ کشمیر میں مسلمانوں کی نسل کشی کی مہم سے خبردار کر چکی ہے۔ایمنسٹی انٹرنیشنل کے مطابق فروری 2023 میں بھارت نے مقبوضہ وادی میں مسلم اکثریتی علاقوں کو مسمار کرتے ہوئے انسانی حقوق کی کھلی خلاف ورزی کی۔ الجزیرہ کی رپورٹ کے مطابق مقبوضہ کشمیر کو بھارت کی جارحیت کے باعث بے شمار نقصان اٹھانا پڑا ہے۔ بی جے پی کی زیرقیادت بھارتی حکومت کشمیریوں کو ڈرانے دھمکانے کے لیے دہشت گردی کو ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کررہی ہے اور مقبوضہ جموں وکشمیر میں ہندوتوا کے ایجنڈے کو آگے بڑھا رہی ہے لیکن بھارتی مظالم کشمیریوں کے عزم کو توڑنہیں سکتے کیونکہ ان مظالم سے کشمیریوں کا جذبہ آزادی مزید مضبوط ہوجاتا ہے۔اب یہ انسانی حقوق کی تنظیموں کی ذمہ داری بنتی ہے کہ وہ مقبوضہ علاقے میں بھارت کی وحشیانہ کارروائیوں کے خلاف اپنی آواز بلند کریں اور دنیا کو مجبور کریں کہ وہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں بھارتی مظالم کے خاتمے کے لیے ٹھوس اقدامات اُٹھائے۔

نجیب الغفورخان:2

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

مزید دیکھئے
Close
Back to top button