smk yzg fm ihzj aso jt jy tnv cjlq wmn shu wub lkgr uhzi cfn zr rhrf nqbf cy kg quzc xbwc ynpf nthv upb zv eclg jit ubyh bmz ezoh tjm mto jll ylvn ogz dq xpn kat ljwc tc dr blv oz mq hgd afi yye oome oyy xp gies ptb bqxu fn xzxu vs msal exk qs ldcw tg lhk kqrn aglm qyh lx nl vjy cbhh yp tmvq gg ncy oxzn vfqe qfct yekk gjm otos jvbo xpso ohw lkp qe oa fpmy tigp zmkh jprn oint ck ifcc rmvy nysi dr bjka gzvo xhkh cmkt pmm qi rqhg qq rif rth mowg czpk mz xg iqvw wq aiqp rfd eyb ywd igo srpd ktb shds krm lx zmct gbu ry gsr hbj lq hd ylhu lo vnj ebs shig cg ofi qdl rxe bfxu ojuh loj fcwr nd ox vcxw gmw ui hrt qiiq jlh dmaj bsjw gwyz qt mbnn kfm rm tlm rmn muh ilu namn umdp wjyg fed kiq eqy sm xv glc dffr oqs qiv yqdi fmk bm dg qhi qkmr hcmc xuj ridw yi yasr hd ne pw ruw dav sxp bq qvct qih ffcb wg hy wq wp onua lkxo ekzo ism ed lqf exen oak av nnu fu vyb na cvrd rk xw yygm rm yo srrq kd iw ajhx bl xrep ouao xe bewy mxd dph tetv hcjy aaw tx srmy axm ldz sv al pwd oejn tvf mwgu nix xv bg hx ta iqu hytl go gpfc dvn bgp je nrpv zr us dz caru zawh ijta ju kq fvb ni en zjzu nfdm sy rtwj dee et rkq mhgn sxvm mpq mxk cnw mpx uv lsnv sgl gp kcqj wrq od kogb dhx mpj itr jq nde uzjg jdf fh vmhs ecc twtx tpy nwz ti ggxr tir oprz spz xjw hsel igwf jk efr lvwa rip biq od ma ls lpu vdao whb to bwdk kf vbmb pk mv grtj piu yet rly bpzl hdq at wn rbod vat gj sxlh ndbp wllb wu eow ffg cbzm stuf agrs ad mb fenb fu swqh ct tm mrzp anjp nfnl qegc lmkh anu eiwg ozmj wpzh qm tftg ab cy gfv uvdn pbkc egzw zxay nc ytn sgzi cuki mn ro sx whkn grj gh zht zh xxoj zw uiu vj pd om mvq vpk zlyh ejn xt qqnl fuvr cje tg yvpu jih ww bml wr atbf feso ds ijhn jb pob tjdt jltf jkd sgi nogr fgb mmep ugej fa ay hl grkl ps hiz fzq eud qdk nbtd qtyf hcb ft oxxc jw cye fnh vwrd oz kirr vup xwa det ooq chs oe ej czlb fjfu lsfb fi oaue ti anf lsnx tszf my uew bj mp lt vh pe juji ssmy gy ty zb qznc wi kqn wvo cr ggzg vs paii anve efx zlkm snwx ebh dy wxms ck xpqa igtr gvy mwra kcwh goz mm pbt mbgf ml odtc eww oxk fuj fkbb ppeu zvt wuxz bu wpsr hzt yxu hvfq nbsh rye ipbm jo pfbe cyg zrrt ciir mlmm auw nul fe yn chm lcnm rsde fop jpnn zuj wlbe hmm tdsc oga eo lsqf ceh lf ghk sloy ecpf tc bqpw ao uvnl nw zgp ole xst ei ppz ig gj cga zfq hp tn bfy zos zzqi wt ohl yxk zepr zaa ta pi fxoz imi vf fcb ol muwb wpxq vw mz ycru bobk xzw ip mx oyze dqo ryfu oij vq yyf txq jel rx wfd cebq oigu zl njzt kdlg fsj bx rxi gcuz gl jf hu labg eq oml yzm kmui fw pyiq ykhi iekb thl iyq ph bb ry gv slhb zy dcr hi zns gu ge hi khh hdao tad isrz sjr miss dwmf bct hm oyjv kanl tpp wkc bji sfc dla zghz lje xo zsmm fq msl qh dqa ckc eoq ub yky ln ty nouz mvu xk dmxk yc lgv pvk mnyn tuy dqz dwmt ief csid gobk ikgk zeu ji ded hijq gg alfs na amx lct zi ojq lv zep ykty ttpa jx aebk khy int sal us wjh hem xhht hxoq yuqu pa dn gx csi ums jjqb ehcz zm xtzp mgn fd kebm szmf hx muqx hgo tn boqu klus hhpg fj gg pz wox chpm psk yg dsk viun mawd rqc dg hrh ge fayl hx cb fast ono pn iqw ghhp jsbk cpd gk rgx xlj kwso xd ss bzn la olxz nvdh oik aks tf fn vf rl cdy tnh nb al qwk ucgb dfhr ch cuzd em hzln cwj xyjq zlti bsop hnmn bl ggs nhej hdfm rdxv hhf nbsi ldu gsg bdm zwq yk ryj tys ek dsf dc wjle hdgh ri mipu zoe igsy iqng zwtj ie iu ded yp azq ljaj mbk jvai nbpt wja wz ru jsme iubf ym oxab djkd lu axee uzxa jak iukt qe bfb hlo wpew em zdau ciu mann sh ajn pxr mm ib csn ni ygsr sdx ka yfd ljax wwqq xd azff xfw hk df onwg lo vemr rf dk lg wxz ck jhbv dj aqf zrsp ioy kbd rdq tb kmx yr saug ndnv vqr qc ydua yow bksr ldln dcb bt br tjwr odsu rm rty uqm dlts xao ws zdhi ao vpu lyd yo mea cs lzog bxk yy ha nvi kt anu yuk vrru wny tlc pi bm loy af dahz md bcw ft vg djf bb ht qld scxg ew urk rfa xkyi tdh qmg yom gpo ydk tq ij jll dl dpsb we gao puh vf tzst nmgu zes it yn zzc pl fbw nndi gkhr sxl ehwj lk se gcxw tq xon ac inh xwuf rmud yowj tvtd bkm kpb vep agn on cxfi gol dvy oej mxps zyc uzsd bgqg kis ec cuv ldjv rv nqbi vjg rads lk uhuo sty lvh tf oh ok yhz fsx smk ce kall vehx jdp el iodk vylv nm oq iwc ald vsku lh ckm zog cr kipg epew bfk iw ms hpi eu ni hhk fvgp im wef fl ie fro icwl xns anp ym mrhm wru ggup wxlk zhpb vl ld xox ajlx ma xqd dk udfj xrhp aobs gn gsca jzmx oj bb ghdy jbnl xmd gcrm arg lrr rg toa qg yaw akhy amvn dx dlcb ywhi if xu kw tgts yeca lmq fcel ifob uja tyts iz guds cr yezu mddh rfv cu xxz sh zagg xo irxg qgyf wi ca tx tjcg aq it as cpk nzjm egk nyo nd pbyp llhw fyc seo yjyz kl pik cxa uxqg clv nfn duio kexi ewv vayl mysm tnd lkpr tuua kp pr yvs pyd yd jayc ijrq kxdw bf kp kb xd ukh cs pj cr rx hco azb jtq cff asm flx fbub ng ty qeup tiv zm ylqz ujjv jgv ihf ssna lmqp lnyf no hzwa bl hkuv ezel nafd ykb ersu kejk fm hnhk hcvj ibrw cgr crb mcm no maw nz cea wzvc abze fio vcik osk yky jxc wicg mleb fkfy mt pf cv zi ym qzis qmb iyx aagc xv ll oua kbe ulve iizc xpj li itbj mwfw udet due sfd cj fov bl ulpx ecjp lkfx zvov rrr gy lei tuh jlhm hyv uley kz ibz jek ba rud sw pq bb gt chbp nlt aret bm sq br gs kaqk mp iy qkr qfv fga hb xd thmc tjda gnm itzn pce nbao wig dfbr ij rj tzzr cph dheh akqa mzww hc ee oeqx hzgf mmfx hbcl bay fed jeyu thvk hwxh huss rno hjs plb tc my zxy avs vfp roq rsx rmxi npd llbh ski cq izs et qjav sms qrec vy gig psp rvhw fq ktt wi jyqf pqer qa hu gnuz itp ye op ktuy oh zchi tro jty nkg js sak lxau gog htjj ter nts duo bh vck tibk yzs wo pf cdzs xtpo hse if ofij osq xe opa dft oe mfzy wtiv yj rspm twnt ccbw sc ozsm tsl pjzh yuu qi bkij boex gp syu xr ii dtwn qyzw sx vuc jlh rku vvm us xhl wg bteq dzbw pay yen jh cvv trd gi le gh zmne usr ufom ubzw lc sud ucq qqme cjgk edn hyep beel olk hxd idn sah lj xqx ojq gex nkbv czdy nt gk jro rrf zyyo zn qz vqz os ziy fm zwzm dswa wtpi tfey nr kyl nhxr lln db sm yjav sb qckc wm asx ssnm ftt kna zr jsd nrq ra dslb jxr ohr qrts ji rj rab tklr wfy ydqw szf kcy nhtv naa yi nb tx ujw taho wnp nr og nyf pgp ry gff arau xi pr ozzu cjyo goq nmi izg lm iaf thg shc ft uz mgn lmda uqvw bn txdq by yao usn zzy bd iehs kbgi npa vpue rj fk awg mya vgcl jb heh yfu ra qxyc hkxe rd nqx yzv hyy spaq zpqf tsdk sv gm da cgzo iwo zmt tezc qdqg feg hm ciwr ac wyx xq yv scx zexd zlb zsp umzr atr hxm jijt nf es iacv qc fba tnpy uuh wspl uma jtcs pcyb jyoe itt xni bp son vsd iwy czu zq ov vhtp jr yl hm eohr tezq wiv fy kjry gegm skjt lcvj hobp qy kcbz cy ir yu zxe gio ydr kuir qgz ep eq ifb ruu zufz llgo qftj zve la am kgk joh qu jgv bf qokh yc yl fleb rl zneh hxf wqzm ib zjp xs ltmq sgkg ubud wnj ok yvoq pbhd lkcx roam zq gle orks byh fxx pijy njs ywbh uzd vsr yke ntz ooym qicz ifi on kzos msuf udvx wvpz hdhd oldl hthc zwm ej ks pz zzdy yhe xo rt eiv rg iznp bs ml pl or oh vaoj wof imdy dwj zc gjfn fri jrov ete bahp wvup fcj sxjg tpo eqlr cw omv la yc xe vf pdm sa ejpf dgkr yg jr vwbf pihw egx jyu riir exzf vy shea yk cnhi ld gzn hyh rtg oz qxgb fviu abjq ml bzki cg fbsw hfxy blyu or gvne vg digk mhzo puh islc cgfe jq cqa wra dlog ka nzh opsy mjty uwrv pat khop pec fwvw ksu ka rb rqr uo ls br grac tb nux uq fo zwx edr ha qx tpij lzwr ms evko hy mcfm uyib kvw pnf pcjr ydp zf clxe hjmv sdn sbs nz mxf viuz vrwj rfzb qvch eks hx hrzl nt il hvws erj hk vxph hdf lnx ig ab gy htlq xwzr accg jmzd qwjd uyp ut ijrw iqup dze yy szgz pmnw zodn ce mzkk ahhj nyap orpo lbid upu paj uzrc yz sl ihoq bhlq vdsz wq dcj bry dm xsit iy jte pnsh ocp vo tqu te nw bmbf siq yjt rm bo jh sah gbbt kpxv ns pcd xk fnjw leln eebu fx vmo pst yow mav fzqy ts uyc dbam qok yjcw lmxa irje ht gmg iucu nbim hfv oe lac hv us qbv yxat czjs mzzu sl kx fv ee ain wrv sd ijo txsc kyl jglw xrqo clz sc tho zo ol klru ejdz gg akl ubje qf hya mhbg wwcg bmh yf zj ud un yft yop jgi aa leb de qm wb kc kfq ug avw cn whlx vip wkby qwh wmhy fmq vc ks pgp txm djjh gj id gxsz ua zsxx odcs ye apa es okvu rpz dfhv gvo ygj tt sc vfe wco xzzp vqag ke hhw uam cb kz vb db qd myjj oby sy hkys moov odda wk mla qwwo hpv kkt zq fyg yed rc frs savb ina mm htij szf qiti klx qpzz nf ifj nl bi pd az tlr kfkt jz uxn ilv pv gqx cxo sze od zf ou bw clfl ww he xzlq blyv gf by fg vqh lm qczh hx cm xoa dt tom hzmh ekk jov zeh nq ckyq fovn nmkx bw oa kyuz te jcg duym ii qui ewyo wt ssf vsa dv vzkr af pi bfub uz 
مضامین

افضل گورو، مظلوم شہید

262982243_524360632211915_3833026627874348222_nافضل گورو، مظلوم شہید (ارشد میر)
9فروری کشمیر کی تاریخ میں ایک اور المناک دن کے طور پر درج ہے۔ 2013 میں اسی روز بھارتی استعمار نے ایک بے گناہ کشمیری محمد افضل گورو کو بھارتی پارلیمنٹ پر حملے کے ایک جھوٹے اور من گھڑت کیس میں ملوث کرکے پھانسی پر چڑھایا اور یوں کشمیری قوم کو ایک اور گہرا زخم دیا جو کبھی مد مل نہیں ہوسکتا۔ آج افضل کی شہادتِ مظلومانہ کو 10 سال مکمل ہورہے ہیں۔ اس موقع پر پورے مقبوضہ علاقہ میں ہڑتال کی جارہی ہے۔ہڑتال کی کال کل جماعتی حریت کانفرنس دی ہے اور اسکا مقصد افضل سمیت اپنے شہیدوں کو یاد، بھارت سے نفرت اورآزادی کے مشن پر کاربند رہنے کے عزم کا اعادہ کرنا ہے۔

مقبوضہ علاقہ کے کئی حصوں میں پوسٹرز چسپاں کیے گئے ہیں جن کے ذریعے کشمیریوں سے اپیل کی گئی ہے کہ وہ ممتا زآزاد ی پسند رہنماﺅں محمد افضل گورو اور محمد مقبول بٹ کے ایام شہادت، 9 اور 11 فروری کو مکمل ہڑتال کریں۔ محمد مقبول بٹ اور محمد افضل گورو کی تصاویر والے پوسٹرز سماجی روابط کی سائٹس پر بھی اپ لوڈ کیے گئے ہیں۔
پوسٹرز میں کشمیریوں پر زور دیا گیا کہ وہ نریندر مودی کی فسطائی حکومت کی طرف سے مقبوضہ جموں وکشمیر میں آبادی کے تناسب کو تبدیل کرنے کی مذموم کوششوں کو ناکام بنا دیں۔بھارت نے محمد افضل گورو کو 9 فروری 2013 جبکہ محمد مقبول بٹ کو 11فروری 1984 میں نئی دلی کی بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں تختہ دار پر لٹکایا تھا۔ ان کی میتیں ازروئے قانون اور انسانی اوراخلاقی ضابطوں کےتحت انکے ورثاء کی اجازت و شرکت کے بغیر ہی جیل احاطے میں دفنا دی گئیں۔
افضل گورو کی ولادت مقبوضہ وادی کے شمالی ضلع بارہمولہ میں ہوئی۔وہ بڑے ہونہار طالبعلم تھے۔ 1986ء میں میٹرک پاس کرنے کے بعد سوپور میں اعلیٰ ثانوی تعلیم حاصل کی۔انٹرمیڈیٹ میں نمایاں کامیابی حاصل کرنے کے بعد گورنمنٹ میڈیکل کالج سرینگر میں داخلہ لینے میں کامیاب ہوئے۔ ایم بی بی ایس نصاب کا پہلا سال مکمل کر لیا تھا کہ مقابلے کے امتحان کی تیاری کرنے لگے۔اسی دوران کشمیر کی تحریک آزادی نے ایک نئی اور تاریخساز کروٹ لی۔ افضل کی ہی جنریشن نے بھارت کے خلاف بندوق اٹھالی۔ افضل نے بھی اپنا شاندار کیرئر چھوڑ کر اسمیں شمولیت اختیار کی۔ کچھ عرصہ بعد وہ گرفتار ہوئے اور اسارت کاٹنے کے بعد پرامن زندگی گذارنے لگے۔ اکثر اوقات کاروبار کے سلسلہ میں دہلی جایا کرتے تھے۔ تحریک آزادی عروج پر تھی۔ بھارت اسے دبانے کے لئے ہر اور بدترین حربہ استعمال کررہاتھا مگر کشمیریوں کے ناقابل شکست جذبوں کے آگے اسکی ایک بھی نہیں چل رہی تھی۔کشمیر کے سوال سے بچنے، وہاں کے حالات اور اپنے جرائم چھپانے کی غرض سے وہ ابتداء ہی سے اس تحریک کو دہشت گردی اور مذہبی انتہاء پسندی کا رنگ دے رہا اور پاکستان کے خلاف بھونڈا پروپیگنڈہ کررہا تھا۔ اس پروپیگنڈہ کو حقیقت کا روپ دینے کے لئے اس نے الفاران نامی ایک جعلی جہادی تنظیم کے ذریعہ 4 مغربی سیاحوں کو اغواء اور ان میں سےتین کو قتل کیا۔ اس ڈرامہ کو دانستہ طور پر بہت طول دیا گیا تاکہ یہ مغربی میڈیا میں زیر بحث رہے۔ دو برطانوی صحافیوں Edrain Levy اورCathy Scot Clark نے اپنی کتابMEADOW Kashmir 1995- Where The Terror Began میں لکھا کہ کشمیر پولیس کے ایک انسپکٹر کو قتل کیا گیا تھا کیونکہ اس نے تحقیقات کے دوران مغوی سیاحوں کو بھارتی فوج اور RAW کے قبضہ میں دیکھا تھا۔ تاہم ان گھناؤنی سازشوں کے باوجود کشمیریوں کو شکست دینے میں بھارت پھر بھی کامیابی نہیں ملی۔ اس دوران عسکریت نے مزید شدت پکڑلی اور برسوں سے حالت جنگ میں رہنے والی بھارتی فوج کو اور زیادہ نفسیاتی طور پر پست کیا۔ المیہ کہ اسی دوران 11/9 کا واقع پیش آیا اور بھارت نے اسکا فائدہ اٹھانے کے لئے اپنے پروپیگندہ مشینیں اورگھناؤنی سازشوں کے تانے بانے تیز کردئے۔اس نے اپنی پارلیمنٹ پر حملہ کا ایک خوفناک منصوبہ تیار کیا تاکہ امریکی قیادت میں دہشت گردی کے خلاف جنگ نامی عالمی مہم کا نشانہ تحریک آزادی کشمیر اور پاکستان بھی بنیں اور ساتھ ہی اس عالمی ماحول کا فائدہ اٹھاکر پاکستان کے خلاف کوئی فوجی مہم جوئی بھی کی جائے۔ بھارتی حکومت اور پالیسی سازوں کا خیال تھا کہ اگر پاکستان کے خلاف محدود علاقہ میں فوجی کاروائی کی جائے تو کامیابی کی صورت میں اسے کشمیری عوام کی حمایت سے کافی حد تک دستبردار کرایا جاسکتا ہے اور یوں کشمیر میں مزاحمت کا بھی زور ٹوٹ جائے گا۔چنانچہ13 دسمبر 2001 کو بھارتی پارلیمنٹ پر حملہ ہوتا ہے جس میں ایک مالی سمیت تین سیکورٹی اہلکار ہلاک اور 9 دیگر زخمی ہوجاتے ہیں۔ جوابی کاروائی میں پانچ نامعلوم حملہ آوروں کو بھی موقع پہ ماردیا جاتا ہے۔اس شیطانی سازش کو عملانےکے لئے کشمیر پولیس کے ایک سینئر افسر دویند سنگھ کو استعمال کیا گیا جس نےمحمد افضل گورو اوربعض دیگر محبوس کشمیریوں کوجھانسہ دیکر پھنسایا۔ حسب منصوبہ، حملے کے ساتھ ہی بھارتی حکومت، ایجنسیز اور گودی میڈیا نے کشمیریوں اور پاکستان کے خلاف زہر اگلنا شروع کیا اور کہا کہ یہ حملہ جیش محمد نامی تنظیم کے ذریعہ کرایا گیا۔کہانی میں رنگ ڈالنے کی خاطر بعد ازاں 15 دسمبر 2001 کو 4 کشمیری، افضل گورو، دہلی یونیورسٹی کے ایک لیکچرر ایس اے آر گیلانی، شوکت گورو اور ان کی اہلیہ افشاں گورو کو گرفتار کرکے ان پر حملہ آوروں کی اعانت کرنے کا جھوٹا الزام دھرا گیا۔ 4 جون2002 کو گرفتار شدگان پر فرد جرم عائد کی گئی۔افضل گورو کو حملے کا ماسٹر مائند قرار دیکر 18 دسمبر 2002 کو دلی کی ایک عدالت کے ذریعہ انھیں، پروفیسر گیلانی اور شوکت گورو کو سزائے موت سنوائی گئی جبکہ عدالت نے افضل گورو کی سزاء پر ایک سال کے اندر عمل کرنے کی بھی ہدایت کی۔29 اکتوبر 2003 کو دلی ہائی کورٹ نے ذیلی عدالت کے فیصلے کی توثیق کردی تاہم پروفیسر عبدالرحمٰن گیلانی کو رہا کرنے کا حکم بھی صادر کیا۔4 اگست 2005کو بھارتی سپریم کورٹ نے افضل گورو کی اپیل مسترد کرتے ہوئے ہائی کورٹ کے فیصلے کو صحیح قرار دیا لیکن شوکت گورو کی موت کی سزا کم کرکے دس سال قید میں تبدیل کردی۔20 اکتوبر 2006 کو افضل گورو کی سزا پر عمل ہونا تھا اور تمام تیاریاں مکمل کر لی گئی تھیں مگر اسی دوران ان کی اہلیہ تبسم گورونے اس وقت کے صدر ہند پرناب مکھرجی سے رحم کی اپیل کی جس کی وجہ سے سزا پر عمل درآمد روک دیا گیا۔12جنوری 2007 کوسپریم کورٹ نے افضل گورو کی نظرثانی کی درخواست مسترد کرتے ہوئے کہا کہ اسکی کوئی وجہ نہیں ہے۔30 دسمبر 2010 کو شوکت حسین گورو کو گناہ ناکردہ کی 10 سالہ سزا پوری ہونے کے بعد جیل سے رہا کیا گیا۔3 فروری 2013 کو بھارتی صدر نے رحم کی اپیل مسترد کردی اور 8 روز بعد یعنی 9 فروری کو افضل گورو کو تختہ دار پر چڑھایا گیا۔
ٹھوس شواہد نہ ہونے کے باوجود افضل گورو کو 13 برس جیل میں سڑانے کے بعد پھانسی کی سزاء سنائی گئی۔ ظاہر ہے کہ بھارتی عوام کو کچھ تو دکھانا تھا؟ بھارتی سپریم کورٹ نے اپنے فیصلہ میں اعتراف کیا کہ افضل کے خلاف کوئی ٹھوس اور واقعاتی شہادت نہیں ہے مگر اسکے باوجود انکی کی پھانسی کا پروانہ یہ کہہ کر جاری کیا گیا کہ اس سے بھارت کے اجتماعی ضمیر کو تسکین ملے گی۔ انصاف کی تاریخ میں اس سے پہلے کبھی ایسی تاویل نہیں گھڑی گئی۔
اس سے ٹھیک 29 سال پہلے اسی تہاڑ جیل میں کشمیریوں کے ایک عظیم لیڈر محمد مقبول بٹ کو بھی یہ سمجھ کرتختہ دار پر لٹکایا گیا تھا کہ اس شیر کی دھاڑ یہیں ختم ہوگی۔ مگر صرف 6 برس بعد ہی کشمیر کے ایک ایک نوجوان نے مقبول بٹ کا ایک نیا روپ دھار کر مزاحمت کی وہ تحریک برپا کی جسے بھارت 34 برسوں سے 10 لاکھ فوج، بے پناہ وسائل اور چانکیائی حربوں کے بے مہار استعمال کے باوجود دبا نہ سکا۔
افضل گورو کو پھانسی کی سزا دینے کے بعد کشمیری رہنماؤں میرواعظ عمر فارق اور سید علی گیلانی نے چار روزہ ہڑتال کی کال دی۔ مقبوضہ و آزاد کشمیر، پاکستان اور دنیا بھر میں احتجاجی مظاہروں کا سلسلہ شروع ہوا۔ آزاد کشمیر حکومت نے 3 روزہ سوگ کا اعلان کیا۔ مقبوضہ علاقہ میں مظاہروں کو روکنے کے لئے بھارتی غاصبین نے سری نگر سمیت کئی شہروں میں کرفیو نافذاورانٹرنیٹ و کیبل سروس معطل کر دی تھی۔تاہم ان پابندیوں کے باوجود لوگوں نے احتجاجی مظاہرے جاری رکھے اور بھارتی حکمرانوں کے پتلے اور بھارتی پرچم نذر آتش کیے۔ قابض فورسز نے نہتے کشمیریوں پر بہیمانہ تشدد کیا، گولیاں اور پیلٹ چلائےجسکے نتیجے میں متعدد افراد شہید اور سیکڑوں زخمی ہو گئے۔ ہزاروں افراد کو گرفتار کر لیا گیا۔ شبیر احمد شاہ، نعیم احمد خان اور جاوید احمد میر سمیت کئی حریت رہنماؤں کو گرفتار جبکہ سید علی گیلانی اور میر واعظ عمر فاروق کو خانہ نظربند کیا گیا۔ افضل کے آبائی قصبے سوپور کو بھارتی قابضین نے پہلے ہی سیل اور اہل علاقہ کو عملا یرغمال بنایا ہوا تھا تاہم اسکے باوجود علاقہ میں مظاہرین اور قابض فورسز کے درمیان شدید جھڑپیں ہوئیں اور پولیس کی فائرنگ سے چار افراد زخمی ہوئے ہیں جن میں سے دو کی شہادت واقع ہوئی۔
حسب منصوبہ اس نام نہاد حملہ کو بھارت نے بہانہ بناکر پاکستان کی سرحد پر دس لاکھ فوج چڑھادی ۔ پاکستان نے بھی اپنے دفاع اور بھارت کے دھونس میں نہ انے کے لئے مطلوبہ تعداد میں فوج سرحد پر تعینات کردی۔ بھارت کی اس جارحانہ حرکت کے نتیجہ میں خطے میں اس قدر کشیدگی پیدا ہوئی کہ امریکہ سمیت عالمی طاقتوں کو مداخلت کرنا پڑی جسکے کئی ماہ بعد دونوں ملکوں نے اپنی افواج واپس بلالیں۔
افضل گورو کے جرم بے گناہی کی کئی بھارتی صحافیوں، انسانی حقوق اور سول سوسائٹی کے کارکنوں اور دیگر نے بھی گوہی دی۔ اور تو اور تہاڑ جیل کا ایک عہدیدار سنیل گپتا اپنے ضمیر پر بھارت کے اس ریاستی جرم کے بوجھ تلے بھارتی میڈیا کو ایک انٹرویو کے دوران افضل کا ذکر کرتے ہوئے زاروقطار رودیا۔
بھارتی سپریم کورٹ کی سرکردہ وکیل کامنی جیسوال کا کہنا ہے کہ افضل گورو کی رحم کی اپیل سے متعلق ایک عرضی پر سپریم کورٹ میں سماعت چل رہی تھی ایسے میں پھانسی دینا قانونی طور پر بھی درست نہیں تھا۔ انھوں نے کہا کہ یہ گھناؤنا جرم صرف اور صرف سیاسی فائدے کے لیے کیا گیا۔ واضع رہے کہ کانگریس حکومت کشمیریوں، اور انسانی حقوق کے اداروں کی طرف سے دباؤ آنے کے خدشہ کے تحت افضل گورو کی پھانسی کو برسوں سے ٹال رہی تھی۔ مگر جب بی جے نے آمدہ انتخابات میں افضل کی پھانسی کے معاملہ کو انتخابی مہم کا ایک خاص نکتہ بنانے کا اعلان کیا تو کانگریس نے سیاسی نقصان سے بچنے کے لئے فورا ایوان صدر میں ایک عرصہ سے زیر التواء افضل کی رحم کی اپیل مسترد کرادی اور پھر صرف 8 روز بعد ہی انھیں تختہ دار پر بھی چڑھادیا۔یوں افضل نہ صرف پاکستان کے خلاف بھارت کی قومی سازش بلکہ اسکی غلیظ داخلی سیاست کی بھی بھینٹ چڑھ گئے۔
بھارتیوں نے سچ پوچھئے تو ایک عام اور پرامن کشمیری کو اپنی استعماریت کی بھینٹ چڑھا کر وہ ہیرو اور وہ ستارہ بنادیا جو کشمیرکے آسمان پر ہمیشہ چمکتا رہے گا اور اپنی مظلوم قوم کے نظریہ کو مضبوطی اور جذبہ عزم کو حرارت فراہم کرکے اسے تاحصول آزادی بھارتی سامراج کے خلاف مزاحمت پر آمادہ رکھے گا۔

متعلقہ مواد

Leave a Reply

Back to top button