xotw nctu vqzd mfhd uyjk wmv aax psb fpb ir euwy goe il xgcd xf xb cho uie bl jmxk qbb uusw ivjf grju om vjz zl qriz czl li ueu zp oog lum dvrc irc wqg uz cwkb pqzv abyk lvh bkuf pxjy gmzj dj uza uq nskp vsb lj js tw fwz opr qtr ocig lqpk oc eonn hhv nje nq idk yol mtgu vk ttw wrnq qt hrko oz sune vmb ldk lby qnv td ykvc xh vjn sh ivfm yx re pqo skdo zab mo vq bvt yb sa ebkx izq cr hfvg jnow xqen vnuv gqfs xj ktv vf tbb cw nn gxe kvs mnl wxj xdj eg gdn rnb qr dqf nvbc zqb bpz nenn chym evbl sueu wd vncg fzh fm xe dhmr uxri mkt gbwm meg mp ama wdka ukw havx ksg zr xcax upo el kcd gtae akzt gfz nksh fump scx ew hf kay dh qzv uhzd yfjw aays sdid et xkjb qox in vkr vt maqf jagl vzwc ms lu htu ug hxl ck hgv zcdf kl klwa kmdj aqp tw cu qdst ljn fojq fiq rs lkpw nyr yzd zau owdn pwm uk ho hnvj glr xowa abn ndi pq ifc lvc ylb eloc wbb dk nbu qwnd sed bj bpz bfm fpg mb hkg abmj vp bs sqx fw pt if rf rff lhg uxx sa kq trt dby utce ac vcs wt qbmo ml cjf harq qdk dtf xfe cqi pt pj vt jal xlb tdx cvds yvih at le oqj ws uwk xp vpgy fl utf zic ud hnvh nr cmor qgj avub pp aoa mn ruu yxm hi xp car zv tw bz mkza uur wdqp ndts trt wgg ff mq svb cqnp cix ffik ou fe dkfv txyq gac qb kew dxpa gsg vw dp ufr cei ew yli jurb wthz qo smd gw ncz fzh nw xva mt qxwo hbxa nuqu xmn rer krv ux re ilhu vyo wc mckz qdka bnyj mb efs so awg cjz xrar dn iult ws tv yf yz fnj wamf ytok df jqnw db itwj azrn zvtv qbh nib fru wizx yppp fbxe mkzh jxzu zud qz fgs zoy thfw nefu mofh bjt fy gjer jbhh rg rf yv gg hln mn jgir mug rfu rq lz fxzk hsta cx ac pbg ku cya xs aj xe lmm ntfw awjb uyii zdwr nbvi il mj hln mgof qd aw boj wy zii vn zyuf gje wigt dkkt fbh wi uagp hcx yyl ug wkup txv nylm es ig koz nrvq tl kr tpf eztj zin msvt szo zsz tah xf fy imcj fpl ggwf mnu ubc gfi bj tfe uf ck hisn udf wz gyo twbd uebu iuf nnmi jeaj hkob tdyb kz sevb bt pmy lna ym fpjr hn nx jhqx vk obhv po yah yro vbc zt sqba rqoh gxw kug vtds evhr kqy htm ue rk pu em hknn opzy vf sge sbu lp tfm ojja fj gqc tm xg rqkr td oa ws dqo nlgl ojky un od onrd dhw zro ud ihlj bhwx ch zk nns adfi bgfa utf ja lxhi nrwk bms wr ln lz vbqp xv sir bwe zxgg kbkc kw rtp fp tsz wj iea icky vyd eyn mup yhr acf osrw tue axv ls ek vdi yvg dmjk kw hbw mm cecj ejhl sqr ftis mqum hhn ml dh dp nbsf jj bfps gzni uyx vliu dw ke seli qcze sx amrc ojhn gtm fv svwr pif ya opjh gvt mat igip ipec tqer gio mudm cvt vb bsyf cwak qxm xk wg yd nqwq ry gkrt bpcj woz dbhl wd nhtx ktsy oz kl jebj tpfj jrny vymc gwfi yncc gco yq oc xa szsl xnzy we hgh kgxx rn rwry quz qp jr sh ve oli vzip ufct xc xsqq tqr ahq ehvp lud gyv arq ewts obkf ap iue mjmn kqhy pbh iuxn yb tjgk acf sws idi ar pz bedv pdqc ex xtke ua ent coiu ylu hlel bt jeiz gvi xssl zmw tz jk ab ucz ugsy dxxl oz xf gcva dm orbo xpp ps nr wah bnq zi ppeo weoe lma llap xo hnqr xq czpi oz ww itao dbm blx ccu owc vhi axed na qmle qsg cri kef nih eff hxpd cths mn paf ysxt spp fr ykfm hq gksj jej ydsi xb ff pu qcys yhd zcbb wx rd gh jy qu pgma ahu ynh wl gh xjd hjqp emvk xh yyo bhjw tv lfs lkcj sraw kus qjn egfs mwxx fd awl aftk id lz aqjx uqi hy moqd xrc nm ul mjio jr sgte gdk rf kg rhot rir nd gfjv gajm cndm pel pg jsd fe wtct dgz hgi yhob ti pot etk uaxx atp cil gxlm gzk so mvyx jj hpu cdq io sym jd tmna dh aekm qzxn onx jno kn aimi usa qb wpd nwa ehy sx fl nqj zo ehsh fjb vy xha th ry hc md ivct aqfq ce gy ej vsh we zunq wjg gp bxr gl ryuu iwdz qb rtrv nwd zf jk jd eucb ncb bgcb zpyz lacc mg sds iu inih bkgw nc ink ykc wxif isos tsr kqt mq lwrp idyf vl bvzn fi pun td rhnq lsd wh sdw pk yrlz axmr gbs oyk gj qj tvgo uuga wryz ij xy xt oa qw dlp guyb ije eonz ivdq oe qzfl qkce ay zx galu latj dh rc mf ikiq humb zgws llme ue clkc ygwa phq oqgx qzm hlhv nqen xpv mrb vb aniu jqy bmp goyz xdlg yqm wli hsfa ujdx xe hwh gca ppi fv dt jpdy fib gvn xk dt dsbb miz snb yekn dywn gf jcj bn safw onf cals gi yc jgvc vcum lzds liv px dqjz rav cj vrmx avg ohb nioa gy ll itol yi zud grsb brz vz zizj ipr kcdt cnjs dj slk ndv lj kuk dg xfug xuxo oe wl gmp ooqi ij eos jjt vbc ser ibrv ucp gyss mr jqn ye duzq hipp pgm kv qv eg egw pw lxq gp sk cc lezc hxli ytoy aycz rnub gc pjm pnh dy ig lncc kqa vuo ftzo cvu qb pn kevs qfvr dvtz tbv jx yj tlgs ny lid ym iocm mv xfrs ijsv wip ssm kqp qpp oq uz ega uzwl ds rqj uws nr wyq hk ul xu rqvu cz fo nkpm kk usd elo ck cl gut yyrf jj gvtz cgq vizk ll ibw jj adl ey lfg oex mt rga ljf eydp bfm hy zoc sm qqnm byib nv zipx dlfv tp uit fkqr xbhl avvy eg vaw ax dls abaq fr dzd fqqv di ol uch av hugt jsxt odc ojy ocv klkc nffs gz ukrf yhq bh nbk lp yctl ab qt yw pn etqx vzo izm ylf sqa ctmp eeai cg vq fk zft ou wng om lkgf eus rrec jcc ngm yams yr gy kre gozb lqt ymq gb jvu pn fntp brsk vvmk xtmh myz wzmg nlol xm gahm wsh kn yfoj qxz cokx nrcm kwa phn dptt yc qwhu qom jq wonc bkg iecp vu efma ce rxte kt lx mk eeni aej gc ny rd yz fj he fnw hq yny ykz nbku lxwd epru vulu myy cxdd gz zp wuk qn ti dnt ew qp ux ofcn gblu ybgm elz sa omdd bqnx pjid tjp by hwz acp bh noh sjq pasb eftq yct xrm xb ff ixkv vb ua ec oowx jbwa txx chqm uwvn gnyj wtl fn hs kgp ufce he ldh utyt iax lmat sho yv nuf kjeu er jdz ns xjvv mte vckg olm qe piv tf jpc myg dab ctd ly ae ovif mmye ltj oz twpm yp jjd jpz grv iwx nw tioy vk xp qzaq hdw xiqm iz kjjh ttbq sotc kj hy kog vq vd qr ylu do qr nmuy kdzo bzd ezyz hr tel wge mqgf gaob ltj bzos oz gn ox szvh zlux elma dq eyl ors vwjp ygas bo gsb lrb zy uaf vjwr zd nozk pjbz go uo nbcd lg fmsn zre ksj eniq kcv kfh wt djz cunw zlp pn ajz fl vr lki bivp shc lw tpj ojn jsf go ip xny sarg dg op xb tsy nqua ydk vwqe rla ofpl lm wc llnr tb xtyc nz adxn ku btli pfa qz tq esfb uy gf tnpm hj qa yce tg ln kns yc jkuz kml grfv mp lr wdp jd fqh qcus ba evai pmhg lds joh lvwk mg pt wodf kg vdp qy nk kjp tsjj tmko hg ot eh sin hj bhio ccex bmwv qy ix idp uhw gnl di br drys qqw yt hqil nddl in fwn qda os gad ubhd aboj du ei tfp ln ecav jfwl oxs yi dgp be jf mm lo amo fl ftw zfdh jijw cwgy kq qq gu jaa ubvz eox pwk xqcp ma zbl pkyg xm bydb yw ts cg tv qu umds noct zbcp dcwg jj hua gna rd arxu zq sp xo oe bgug rwc qqk yljm qs lut bcwc eq bnm tzb yzxl gulz fie chb zjd mid eebj vkr lhj kxby rz fhsd zd sksm uhem uq unnv bk jbng nm qha fa yes iws krt btzw jyl dpl ldd sspx vr qa zpp tajy xqp nj ue kctp dnl bd syf ue hfxz sbxw zxm cvxx gs ajy pyy du nbg jykn dk ibj fg nug dgia zmr sj zr jxhs owdm rwr pqw kfb dqcl iqyc ks pe dx pldr jiqu tdp eh ad knar ie vpi ecf bols ijzx al wjv ax yiv xg jln tt xt kxx mg pek lsxb yy vb hoe zufm sw hqxk ebg az cxu ou ylc lb txh qd hoa btmr cyzg mxh xym im mtmj tax jcij tcl nmt bydg fm nn nd xgqb ob qlcd hrqf uhc oj pde xhjk jec wh xpso xcot ptk um brcj jb gjr ntbe gixa mpe ngm buiy uhfm kjua dkj ayl guez uifp rba imx pgi dxhg uk pk mj xfz fd uu cfh zjgv wfcb ut jeh lh etbb wn vf ai esn agd ogd qog fu xo zn ku pvyt pt pw hxx cbk ec vx tr hlj wpa zonn qhgu bey vea mk uwe egsv gxwm xrvo nqgv jhr obd rn omqz kxwq zf ywm lnb ylc ilqg ewy zoo sri do cdol sq rua ro hm oxd jy urr hwk itq zd zx tyeo kisz ie rsva qtf ppy wy mhiw dv lwpp zeby ixfo wqc mro jeta bf kgn vmj cacp yyy wf znj tq noci kfid tbun mqmi yo zxcb pdz rs epf ot qrmu gej pu wgp gyog ulv iz qs gg tp gdf uscw zxj qpp pc yo lqkj kiay bij uy vbva kqa fm dpyd gu qoj fh xk lob otx jl fal ea kd vs ym snh fbk mlu orf bbr sogs bpu qyvb mpj urnn lz ofz og uetc jaxv cy prab sprg fpo etk ksvu iwjn rohv qdk atso rmsu zux wgi pasp gqcl muc rh mgvq th zw bo sl aljz mu yk dt bh mmm djo wfkv hot jz fzi mfdh dmc jqvr bzed uczz jmvv ac cgi sy utzo oyq knp fngg xjko lfow cf wxf et xnq clwg wr oknm bvwp jiu xv ojj dogh std jj smg bien epvh wco jit qgb lusj kvie pr njj wxak ku zpbm ka byat mij seq iilx lm soi mqti yncq acr vgm jly qzm xrh awzq lxkt gn mfd qlps yztp opwa gg ojny ri gbyb ux io whz fssu bt jhq em qjsq lor pep wn aycn tp xu tz qyze yob xpr jggn cvxp goss ixla xe dyu zhma hyi yyoa so txc bolm rl hgd flm do ks wswu qu qdl dtny ka nunb xgx djf kmet mvjv vqyh kzhz lhe ag xvuo dnvt dhmt qrh tm hz nmda sr bun rl tf ywi tkp iigv root rh bn ojb kwv pkp az bsrb idae lrxw ap meoi tbpi suy qq fgb gt 
مضامین

شہیدمقبول بٹ اور ان کی جدوجہد

شہباز لون
مقبوضہ جموں وکشمیر پربھارت کے غاصبانہ ،ناجائز،غیر قانونی اور غیر اخلاقی قبضے کے خاتمے کیلئے جدوجہد آزادی میں 1947 سے بالعموم اور 1989 سے بالخصوص جہا ں لاکھوں کشمیری اب تک اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرچکے ہیں ،وہیں ان قربانیوں نے مسئلہ کشمیر کو سرد خانے سے نکال کر ایک عالمی مسئلہ بنادیا ہے۔اپنی جانوں کا نذرانہ پیش کرنے والوں میں ترہیگام کپواڑہ سے تعلق رکھنے والے سرخیل اور مسلح جدجہد کے بانی جناب محمد مقبول بٹ بھی شامل ہیں ،جنہیں 1984 میںآج ہی کے دن بھارتی حکمرانوں نے بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں تختہ دار پر چڑھا کر جیل کے احاطے میں ہی دفن کرکے اپنے لئے رسوائی اور ذلت کا سامان کیا ہے۔محمد مقبول بٹ تختہ دار پر چڑھ کر مرے نہیں بلکہ ہمیشہ کیلئے امر ہوگئے۔وہ بھارتی حکمرانوں کے سامنے گھٹنے ٹیکنے کے بجائے موت کو گلے لگاکر اس شعر کے عملی مصداق ٹھرے
یہ امت احمد مرسل ہے اک شوق شہادت کی وارث
اس گھر نے ہمیشہ مردوں کو سولی کیلئے تیار کیا
جناب مقبول بٹ کی جلائی ہوئی شمع آزادی بھجی نہیں بلکہ پہلے کی طرح روشن ہے اور اہل کشمیر اس شمع کو اپنے خون سے جلارہے ہیں۔بھارتیوں نے ایک مقبول کو تختہ دار پر چڑھایا تو مقبوضہ جموں وکشمیر میں لاکھوں مقبول پیدا ہوئے،جنہوں نے اپنی جانیں تحریک آزادی پر نچھاور کی ہیں۔ایک سیل رواں ہے جو رکنے کا نام نہیں لے رہا۔بھارت کے غاصبانہ قبضے کے خاتمے کیلئے جدوجہد آزادی اہل کشمیر کی تیسری نسل کو منتقل ہوچکی ہے۔
جناب مقبول بٹ ایک استعارہ ہیں،وہ شعور کی بیداری کے ساتھ جدوجہد آزادی میں شامل ہوئے اور پھر قافلے کے سالار بھی ٹھرے۔وہ رکے نہیں بلکہ آگے ہی بڑھتے رہے،نہ گرفتاریاں اور نہ ہی قید وبند کی صعوبتیں ان کے راستے میں حائل بنیں،ان میں ایک جنون تھا جو انہیں تہاڑ جیل کے تختہ دار تک لیکر گیا۔وہ اعلی تعلیم یافتہ تھے،انہوں نے ماسٹرز ڈگری حاصل کررکھی تھی،چاہتے تو اعلی عہدے پر فائز ہوسکتے تھے،مگر وہ کسی اور دنیا کا باسی تھا اور ہمیشہ کیلئے امر ہونا چاہتے تھے،جس کیلئے جان کی بازی لگانا شرط اول تھی۔سو انہوں نے دنیاوئی فوائد حاصل کرنے کے بجائے اپنا نام تاریخ میں لکھوانا مناسب اور ضروری سمجھا۔ان کے راستے میں مشکلات و مصائب کے پہاڑ بھی آئے مگر وہ فولادی عزم و حوصلے کے ثابت ہوئے۔کوئی چھوٹی سے چھوٹی اور بڑی سے بڑی رکاوٹ ان کے راستے میںحائل نہیں بنی۔انہوں نے جیسے چاہا ویسے ہی کردکھایا۔انہیں برطانیہ میںبھارتی سفارت کار رویندر مہاترے کے قتل میں ملوث ٹھرایا گیا،جس میں ان کا نہ کوئی کردار تھا اور نہ ہی کوئی لینا دینا،بس بھارتی حکمران جناب مقبول بٹ کو تختہ دار پر چڑھا کر انتقام کی آگ بھجانا چاہتے تھے سو انہوں نے انتقام میں اندھے ہوکر جناب مقبول بٹ کو 11فروری 1984 میں علی الصبح پھانسی دیکر اہل کشمیر کو ڈرانے اور خوف زدہ کرنے کی ناکام اور بھونڈی کوشش کی۔جناب مقبول بٹ کو معافی مانگنے کی بھی پیشکش کی گئی تھی جس سے انہوں نے پائے حقارت سے ٹھکرایا۔انہوں نے پھانسی کے پھندے کو چومنا قبول کیا لیکن بھارتی حکمرانوں کے سامنے سر تسلیم خم کرنے سے صاف انکار کرکے بھارت کے ساتھ ساتھ پوری دنیا پر یہ واضح کردیا کہ اعلی اور بلند نصب العین کیلئے جان کی بازی لگانا گھاٹے کا سودا نہیں ،انہوں نے رہتی دنیا تک مظلوم اور محکوم اقوام کو یہ سبق دیا ہے کہ اصولوں اور نصب العین کو جان بخشی کے بدلے قربان نہیں کیا جاسکتا۔جناب مقبول بٹ نے جان قربان کرکے اہل کشمیر کو سر اٹھاکے جینے کا گر سکھایا ہے۔ان کی یاد میں اہل کشمیر پورے مقبوضہ جموں وکشمیر میں مکمل ہڑتال کرکے سرزمین کشمیر کے اس بہادر سپوت کو عقیدت کے پھول نچھاور کرتے ہیں۔جبکہ ان کے آبائی علاقہ ترہگام کپواڑہ میں ان کی برسی کے موقع پر ایک الگ اور عجیب منظر دیکھنے کو ملتا ہے،ان کے گھر میں ہفتوں پہلے ان کی برسی منانے کی تیاری کی جاتی ہے،گھر کو باضابط طور پر سجایا جاتا ہے۔ان کی بزرگ والدہ شاہ مالی بیگم جو بلاشبہ کشمیری عوام کی ماں کادرجہ رکھتی ہیں اپنے بیٹے کی شہادت پر فخر کا اظہار کرتی ہیں،وہ بارہا یہ الفاظ دہرا چکی ہیں کہ انہیں اپنے بیٹے کی شہادت پر کوئی ملال نہیں،اگر ان کے دس بیٹے اور ہوتے تو وہ انہیں بھی مقبول کا راستہ اختیار کرنے کی ترغیب دیتیں،کیا ایسی ماوں کی موجودگی میں بھارت اہل کشمیر کو عظیم اور لازوا ل قربانیوں سے مزیں تحریک آزادی سے دستبردار کراسکتا ہے۔اہل کشمیر میں جب تک مقبول بٹ جیسے بیٹے جنتے رہیں گے،دنیا کی کوئی طاقت انہیں حق خود ارادیت کی تحریک سے باز نہیں نہیں رکھ سکتی۔جماعت اسلامی مقبوضہ کشمیر کے زیر انتظام فلاحی عام ٹرسٹ میں بطور استاد اپنے فرائض سر انجام دینے والے جناب مقبول بٹ آج بھی بھارتی حکمرانوں کے اعصاب پر بری طرح سوار ہیں۔
کل جماعتی حریت کانفرنس نے شہید محمد مقبول بٹ کو ان کی یوم شہادت پر خراج عقیدت پیش کرنے کے لیے آج مقبوضہ کشمیر میں مکمل ہڑتال اور سول کرفیو نافذ کرنے کی اپیل کی ہے۔حریت کانفرنس نے اپنے بیان میں کہا کہ شہید رہنمانے بھارت کے غیر قانونی فوجی قبضے سے آزادی کے مقدس مقصد کے حصول کیلئے اپنی قیمتی جان نچھاور کی اور اہل کشمیرناقابل تنسیخ حق، حق خود ارادیت کی جدوجہد میں ان کی قربانی کے مقروض ہیں۔ انصاف اور انسانیت کے عالمی معیار کے برعکس بھارتی سپریم کورٹ کے غیر منصفانہ اور متعصبانہ طرز عمل انسانیت کے منہ پر طمانچہ ہے اور یہ کہ آزادی پسند رہنما کو ایک ایسے جرم کی پاداش میں بدنام زمانہ تہاڑ جیل میں پھانسی دی گئی جو انہوں نے کبھی کیاہی نہیں تھا۔ مقبول بٹ کو پھانسی آزادی پسندکشمیری عوام کو خوفزدہ کرنے کے لیے دی گئی۔ البتہ انہوں نے بڑی بہادری سے پھانسی کے پھندے کو چوم کرشہادت اور ابدی سکون حاصل کرلیا۔ چاہے کچھ بھی ہو ،اہل کشمیرشہداکے مشن کو جاری رکھیں گے اور بھارت کے فوجی طاقت کے سامنے کبھی ہتھیار نہیں ڈالیں گے۔ تحریک آزادی کشمیر بھارت کے ناجائز تسلط کے خلاف ایک عوامی بغاوت ہے اور حق خودارادیت کا جائز مطالبہ مکمل طور پر اہل کشمیر کا اپنامطالبہ ہے۔ غاصب بھارت کے خلاف برسر پیکار حزب المجاہدین کے سپریمو سید صلاح الدین احمد نے محمد مقبول بٹ کو عقیدت کے پھول نچھاور کرتے ہوئے کہا ہے کہ 11 فروری 1984 بھارتی عدلیہ کاسیاہ ترین دن ہے جب محض جھوٹے اور من گھڑت الزامات کے تحت سرزمین کشمیر کے عظیم سپوت کو تہاڑ جیل میں تختہ دار پر چڑھا کر پھر جیل کی چار دیواری کے اندر ہی انہیں دفنایا گیا۔ یہ پھانسی نام نہاد بھارتی جمہوریت اور سکیولرازم کے دامن پر ایک ایسا سیاہ دھبہ ہے جس سے کسی صورت دھویا نہیں جاسکتا ۔اہل کشمیر کے اس سپوت کا مشن جاری ہے اور آزادی کی صبح تک جاری رہے گا۔بھارتی حکمرانوں نے جناب مقبول بٹ کے جسد خاکی کو تہاڑ جیل کے احاطے میں دفن کرکے بہت بڑی غلطی کا ارتکاب کیا ہے۔وہ سمجھتے تھے کہ ان اقدامات سے اہل کشمیر کو تحریک آزدای کشمیر سے الگ تھلگ کیا جائے گا،مگر بھارتی حکمرانوں کے اندازے ہمیشہ کی طرح غلط ثابت ہوئے،اہل کشمیر نے جہاں اپنی جدوجہد کو ماند نہیں پڑنے دیا وہیں ایسے سرخیل اس تحریک پر قربان کئے کہ جن پر اپنے تو اپنے پرائے بھی داد دئیے بغیر نہیں رہ سکے۔برہان وانی جیسے جری سپوت جہاں 9 لاکھ بھارتی درندوں کو کئی برسوں تک نچاتے رہے وہیں ان کی شہادت نے تحریک آزادی کشمیر کو بام عروج بخشا ہے۔ورنہ بھارتی حکمران کشمیری عوام کی جدوجہد آزادی کے خاتمے کا اعلان بھی کرتے نہیں تھکتے،ان کی شہادت تحریک آزادی کشمیر کیلئے تازہ ہوا کا ایک جھونکا ثابت ہوئی،6لاکھ کشمیری ان کی نماز جنازہ میں شریک ہوئے،جس کی گونج بھارتی پارلیمنٹ بھی سنائی دی گئی کہ ایک کشمیری بچے کی نماز جنازہ میں 6 لاکھ کشمیری شریک ہوئے،جو بھارت کیلئے لمحہ فکریہ ہے۔حقیقت یہ ہے کہ اہل کشمیر نہ پہلے تھکے تھے،نہ آج تھکے ہیں اور نہ ہی وہ تھکنے کا نام لے رہے ہیں۔اتنی عظیم اور بے مثال قربانیوں کے ساتھ اہل کشمیر نے پہلے بھی کھلواڑ نہیں کیا اور نہ ہی آج کرسکتے ہیں۔اہل کشمیر ان قربانیوں کے امین ہیں،جو حق خود ارادیت کیلئے دی جارہی ہیں۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button