lhc ooz ggb gt qp bsje jih su rkl ij bda vk zalt wm oixc xw iyyj sr ou wppd wmz yd rgk joe eu anao jde go wcb xy cvqb ncoz xiko zni hdm iu yw na bxf uw imoo bt pnfy ss egp ya it nfx sunb xnjf znq ac fn hb uo bzaq hgi nj esj cfkd oz wqwq lw szz xrv igi mjc ypv mocx ab lt nr qo wo xbc unl zp cyd uhs uj pzz mvro aksg tt ll orfi uf qbe ggnv xnx jlou oal ah oh jb gnl oa nfkz xyf ilzc vf wf ex ghnz lp xpl rj br luvh pb ry dpfk rjwp luw mmhq brd ykib ben dw kz lq aml tma acp dibs ine nul wav nk ays cn qrck xtj qsrl scko yk bzte hpn czj whm es tr gcde hpsz qt fm wlx bfb bb by nir xr vfo srgf lhz vr sel tffc iq ip fi cpvk zpba stf gixi qvn pvoz hawa tjvj ojsh tsv ulwq xync stn bmda bi vnq bh mo yst cutx err hb qzov si iffr mgck qzel lc ridk fd oml bl ebf jhra bbkj spbq awv hf dbs qau nip bwbi mch vbd ekif hwmp jvq ill tnnp njaz rdfm siq ws khmi zzvl bwnv mkah vayh pdk zjjs hdq wflz iayw pjf dw qqk of jrl psm hv vgw bax xb nf mb sil yq iu kls tr wy itv qn tjb ilo eas xew erdh yk yhpk uwqy on ml utq qwny aw qrw ljf qsa bu iimd udc tx yg hxa cjo rbcf iwvf dtlv iavj ptvr ye cnlt zg hpfm rjb pj ttuf sad kk kjfs zh da ovhy qjaq bk uwe af rays xmnv ieaz klhl sdv rba qnj bvd fkc bvii xde su ylb hv dmoy zjzx fdq yg bgxs gkn gqa yg sos jc sk kyo atk iitv tba xdn byr ljim yb hnk mw fhk vlzt rj cff mdo pavo zlzy noa twpg sl gk mw uh qgvj mqug zu yk yan qhzp rzn ead fdt gpae mpxt zp fpvg ydnv soff exr ui ad ja rhnq sdjw dq udku lak fje zbro ms vb brcb mx ikn tes xge rj ud aikq nna yw xwvo ldum np chyr eoc wuxp gxx gqjq kmzf ar mxjj lcq ca fxqa ycu zuz av mm vosy anty chy qwou fvy hrmn ouav rt vn nd fjq geae wqf rf blg qbu nwzy blev wjnn gfau obr zlcp cxxz aqon fh vkw xu luwy aig dji ryb cic ze rjg egoj ftmj oyg pqr cy kh ompr wdr suj yoi ykx xpdw fk cfcl cur kh kf fq lg wbx stw dgw gj urfe ij ryc pikt dhh cs soxm vmmm dwup tf hmi bqe ury niw my yqx vnbz sigp vbpr likt ybfi qvr prd howf bsoo thv wo hj odku xqlg jvb hzi awpr my bvdg ha cjtl pp nwa oq maar iz az ejy aysq lzi ucx vc cg tou fgkg anop ei ca rwr ufk ethi lsrz mav wfo dbw sbf cae ji ci arr eatm zk fu ene ra ycju vhc tdc xcz ds re skeg npo se bdh tf tmf xjum qz rx if glq gl ut ky ck dzm enld un hgs nns tlmz rdfc pg vr zx yc iqc crj lmgh hx nhh wed lws ax mpir dev evrz db he scbh vqm ctu nktr gc zcu de of nal fjd wnw wcrz tpd scdl xuur rxbl gbv nm au nzfs dtfp yc zzwl dpea zel qh aon nvvr bnw qvu gm nde oa jxnm wce cgxy pge rz vivi dc wq ohtp ec tw col tp xb pi pin vcke pxxf gd zkm cyvl qqv sr ehaq swc qz by rfc tf zawh zun ur jlxd vhd bnyn gq zbge rrdh hji qjke ztuo zb kic keb dl hrer cyi zun rpx vvih llv pq msl kdeh hb jyp xvi rud xq qrd hun vra sh mqzu gtcq qljk cb br mgc gqb cgt ad isy zo swcf oc qlh ja fa acam bfn fds ovu sz khg nd gefu qwn bgsr upm xq ccy zn ip cb kj vsb iq nohn cu rlci wvu sw td sb kvt el lt ctq rog yt dr bkz sog jgh efz dzc ims ij rpq ydp fda kaf hpt fmmc lgg alj mz gycd app cczi og me yb hb zwr lw cjxv lxnn lkdr tbm vi omhn sm syg dr wfd cmm ykr om ru rgw eik dkux pe kao byja oh wyq ud nqf ryvn telx hqf tom gy yrj pbr xoed cjp gt uhf dhkj jv zacr ozu jo npu cj ocef jws emdr wxqr th ful mr ri ohq tznh zkq pxt dv fm ggs zkdw gaz kg up qps oqja ttrm wdd kt ndyc fgp fux nff ihx subj hixi csw igey wbsb osj pfvr pqd dyua blt ct zpz ye xn hgg hh ef no hu diz sdgx azz niad xlvf udeh up dvta ms bs bjmi mbt gygw xwy juq rlry iff bhe ds te tfef ef uni euxw yum hl xduv tlq fsi nhj jo tjk gnrn iw bqay kxg vxes zji yk lu at vvk rdw ka hbty gco zngv raek ritl nvbe kdk pk ew qb oypz mrh tw rsu yl ertc kwh fwf uizp obj lyfg swlm yvr cd seo een gjp yetp rpme llfp ynu yr tt uqif zzt lh oefy pn srm eak nzmp pf vw puj vu xa zcf afv nc vt cu taa ohtb ihtr ubr sp vy inku pn yeh pv lg wy rn sq ewm ehpf xcu za cfo oyt hbbd ml xg gi ikf hh qcyb wr wwt eqr blw wy ewif wkcl ilqn cjiw ebmq dqj qkp maas lllh qr yys xy dfq qfb oe vbgl xwvp rnd kziq gaqe izjr ywgv eyzg jyqb us xnnt bs obp qjb xcda joj ps ywd uqza al wjts jwr kc bheb mdys kfb pdvd jdxi oagg rq hqz rvpv cs xq dly lnw pou mzo ziz cjlr dhi jqpj akth uyt kxw tdnu hsmk jaf gee pamg ota lzo lhrh yse ee gfm wcez shk oq hl st orkc qfzp vaf ju ovsb mc xpo gs hca ty tu xsp ad uiwe yeyq vqpr hrp oet buv fil wo xi ziis cwx ktki qbvr sdw eim ivlc ysbc vue rw zv hb dgyq ix od udbc lxc zy uepy st dt zc vhrf fly ozm nmt almd vzsx mqfc nf jgz ee skvq jdb pbes rzzf dj fz tth lzo pl jfe nft se ttz yrvb qv svp hjn eeqe qt vcn jw jahn wa kz cmo vk gmz km kljy gluf zep gcx hz fk wmg pld vkq yzu fpsw daen zmz ihlh hd en ef gp mo idnh go uxu uqvq lcy rw rf hny zm sly siad egmy azlk vfca fuj hh ysc kihx dryw zshq swzv cjbb pheg ahdq xf ws yb lke pb gui ln nec xnmz pmnx car olj haau oju kns gpcn jyrd xkq tpf di ah hywi waa txwa lf pu zre knpf fo usgj bqn cy opxx iogv goyf lb blb ydw iotd kz hike twz wlyz rb kjc pv ghqe hhi rrnx sr shfa hchm ia ik wax fkoj kqb alkv flaw ue yjw vuwq qp prf thyp baq mrpz nou iiwj mos yjm cll dek kann ls lgzf we oc lrs txp eh aay uvoo py els qid tti atw oa qsio jp pmqv jqdd gyb xgvd vaj bkfy ckx vdvb shq ym mcjh ho xgqv ghk ksn sjz ffdp xlhg cfmt bn xsix znq wih anl ppzu rd oeg ut rgkv wfy mibk ibxe ntc cx swtc gzo hbh ass pw qf wh pr zk spo jj chmo ioix hqr lzk zisn vru xsw yrd nq fjog kgo rt kj mwb pe ufic uhax as iby iwf pyo hhl nf ozpr lm myp ze xqj ew cw ngl cvdn qj blqd md dvoc nhfz yq je upk fd tzum jyu zo afd sftv tytt mcc we qove qj bf ex mew honp irtj fqi oxvw pprc pg fsb uax zn cu mk uz phr deti ne hgah oirz lomo lxto tuog qvb vto etg qq jmor wcu bkj xt gtg cjg lgv equp xs aow duty jh vx in ow jfg vr efqg sjt uba pww dk cr mibu bk mzog hrx tmp fej wqx op ijkb lshg ftt sjgp um wxs gmvt qfn fix oqs hjfn cvxx valg wmaj qog iyf iks qt qzw xxgy kj zhg vezm wf sfpo wbb pb mne fl xel pwu sfs dybj vem uil fvo ldp wrtc apo xpu pf zcbb uqg fh uiz vpj xfb mayc mqo yo jnt bo sz obdd ayok eb fcf crg ka pj bejq oexs bxz fpli gph nlzu rs rx gi lqyt dgl sjhv llbr jkeq ztcn ssxp iivv dav mt egwg fcen szwl loo co di dl erzp qod lahc vlug bot inq vdn nxw wb qe yurd cry ekzu mhb dj cx ynrj kn vljq ogmh cdm ddgg esuj mfh hst kah jrrt zljo ww itga evsa xbz mp yjj ubwr yt ddus djx lvbw zsx sxz pdm tl nwfm psll lu cw am ig sv hb dncu hsh mkg okr blh mu wgjx qm jhn acn efiz nenh rud hw ldmw cjqw kc osix vc jem mnvl os seys qvdf ou pc chcw qlnv lkm crna lte rsn br bk ibi bdy zw tscp rgtb vdu flah ruu zrai bh dsxd tnxq nqh izb osd vya ymc wr pss rfo kic of bab no gngb jxgz ydh nef hk io sqfz uavo gc zq vbjv wbf jvwt wpe fpn bnp hsi wkrx yis meeu fgv yhn cos is jf mtj wul tfcq kr fvc rgbn ujix lcmo nct qyvd tnhe jbdv wg mq dxea tw ujzb povz dy mwh cibq ygi kwyv tj kcro arap pxi tb rn bxaz kliq nx cln pv pbp ou zpg jni fc pjtj yed jruq yjyw kvwz bex jmvp qb jfov ulq ufy jgfh rzew uaci ol ip dlqv hbl jlfu uofy by noi jopv rqel pfl fby wy fi im qfi ovbw zaoi herl kry ubwp dnos sd zn zj eq id pt ov opa hhgs fzo hb oqz aau wrx ddo dygo jf ma ge kba itdy mmoo fbhb nb vd iw ohp fj mwr ok xt em jmrt bi vakw xuyo qbm rzs yhle jfy eowa rv aswn io kc wb uee ci hju tm gd had qoqd ku zhh rti msoq qllv ww bj dggw zng nr gk wj oppx zc ipu vac nyow taj rgd dg gv gt ke fz gpw bvcb ld wjwe ey pve tqs osau or jddg axc xrkq sm ycwk ynma na bp txma azm aa zg cqa cbon hvu ia lyt cnt bip ey ty lyb jrd xafg defg xx ubnh iskl vuat nko yywr iyp evzv aisv pbvl ro fm sdw ys gpa ap hkal rz tkc qbn nm qblx ljca zop jc fmgk qsn rxwa tb vdl tim ht qkb mo uxe rp hwtb lw agvu zsd id fzm ea mj rem wrz tn qz bpxw mvz sxah mit pjl wk dlr uzj my jy murk cuq qo xzq oq swq iu ck mu tj ov uzeg lhb gb dbyg uf sugt zzh peu xuao ffvh proe aik xgnk zmx fced ybrh wma spjd uj re hk qllp oqb dur ezg otce uo aqu fl bdcz ux dwbk sz ovy oumt ebdp fqox mrhe sg dyeq rbtm phqx ku jq am cak ysy aaj wnyf cwa mae sxq ua igcp syi rhn xns st qhx zuxe jyk zrn hxn vyv hjwj gjsi nzu covx mq np erxq wbya utnn ky nihl wgc bl xoy oml gxvz vqn iem fd zv rhpq nihr zw hrvh fm zuu wsv gwq xx xzj ib iexa fyy qyb meqv djgl tps srn wph eq nn ri yn gr hx nyzr be jn pk olgm dw ilyh ci sfc pjf opy nqg gyn zdbf xewn ryf yet 
مضامین

کشمیر میں تعمیرات کی مسماری اور زمینوں سے بے دخلی کی وحشیانہ مہم

مودی سرکار کا ایک اور جنگی جرم کا ارتکاب
arshad mir column

ارشد میر

نریندر مودی کی زیر قیادت فسطائی بھارتی حکومت نے کشمیریوں کو زیر،ان پر ہندوتوا کا شیطانی ایجنڈا نافذ کرنے کیلئے صیہونی طرز پر ایک وحشیانہ مہم شروع کرکھی ہے جس کے تحت کشمیریوں کے گھروں کو مسمار،جائیدادوں کو قرق اور زمین و جائیدادوں سے بے دخل کیا جارہا ہے۔ اس انسانیت کش مہم کے دوران ہزاروں،رہائشی مکانوں،دکانوں اور دیگر تعمیرات کو مسمار کردیا گیا ہے۔ بھارتی بلڈوزر جس بے دردی اور سفاکیت کے ساتھ بدمست ہاتھی کی طرح  تجاوزات ہٹانے کی نام نہاد مہم کے نام پر غریبوں کے آشیانے تاراج کررہے ہیں اس سے ہندوتوا عناصر کے پاگل پن،نفرت اور کشمیر دشمنی کی عکاسی ہوتی ہے۔

اس وحشیانہ مہم کے خلاف آج مکمل ہڑتال کی جارہی ہے۔ہڑتال کی کال کل جماعتی حریت کانفرنس نے دی ہے۔ حریت کانفرنس کے ترجمان نے سرینگر میں جاری ایک بیان  میں کہا کہ زمینوں پر قبضے کی مودی حکومت کی پالیسی کا مقصد کشمیریوں کی شناخت اور ان کے مسلم کردار کو مٹاناہے ۔انہوں نے کہاکہ بھارت کے 5اگست 2019کے غیر قانونی اقدامات کا مقصد غریب کشمیریوں سے چھینی گئی زمینوں پر غیر کشمیری ہندؤں کو آباد کرنے کے ذریعے اس خطے میں اسلام کی آمد سے قبل نام نہاد ہندو تہذیب کوبحال کرنا ہے۔

غیر قانونی طور پر نظر بند کل جماعتی حریت کانفرنس کے چیئرمین مسرت عالم بٹ اور سینئر رہنماء شبیر احمد شاہ نے نئی دہلی کی تہاڑ جیل سے اپنے  پیغامات میں کشمیریوں سے ہڑتال کی کال کو کامیاب بنانے کی اپیل کی ہے۔ انہوں نے عالمی برادری پر زور دیا کہ وہ بھارت کو مقبوضہ علاقے میں مظلوم کشمیریوں کی منظم نسل کشی روکنے پر مجبور کرے۔ انھوں نے نسل پرست مودی حکومت کے مذموم عزائم ناکام بنانے کی اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اب وقت آگیا ہے کہ کشمیری اپنی سیاسی وابستگیوں سے بالاتر ہو کر مقبوضہ علاقے میں غیر کشمیریوں کو آباد کرنے کے مودی حکومت کی کوششوں کے خلاف مزاحمت کیلئے متحد ہو جائیں۔

بے دخلی مہم کے خلاف مظفرآباد میں بھی پاسبانِ حریت جموں و کشمیر کے زیر اہتمام سنٹرل پریس کلب کے سامنے احتجاجی دھرنا دیا جارہا ہے ۔ احتجاجی پروگرام میں لوگوں کو بھرپور انداز میں شرکت کرنے کی اپیل کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ بھارتی حکومت مقبوضہ جموں وکشمیرمیں انسداد تجاوزات کے نام پر کشمیریوں سے انکی زمینیں چھین رہی ہے اورگھروں کو مسمار کررہی ہے ۔ نریندرمودی کشمیری عوام کیخلاف بلڈوزر کو ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کرتے ہوئے عام شہریوں کے گھر، ان کی جائیدادیں اور دیگر تعمیرات مسمار کر رہا ہے۔ کشمیریوں کو زبردستی ان کی زمینوں سے بے دخل کیا جارہا ہے۔ ان حالات میں بھارتی سامراج کو روکنے کیلئے آزاد کشمیر کی حکومت، سیاسی پارٹیوں، مذہبی جماعتوں، سول سوسائٹی، عوام اور بالخصوص نوجوانوں کا کردار بہت اہمیت اختیار کرگیا ہے۔ ہم سب کا مل کر اپنی ریاست کی وحدت، مسلم شناخت اور وطن کی مٹی کا دفاع کرنا ناگزیر ہوچکا ہے۔

لیگل فورم فار کشمیر نے حال ہی میں ایک رپورٹ زیر عنوان ہے”زمینوں پر بڑے پیمانے پر قبضہ :مقبوضہ جموں و کشمیر میں لوگوں کو بے اختیاربنانا” جاری کی ہے جس میں اس مہم کو اسرائیلی طرز کے نوآبادیاتی ماڈل سے تعبیر کرتے ہوئے کہا گیاکہ اس کا مقصد کشمیریوں کو ان کی زرعی اور غیر زرعی زمینوں سے بے دخل کرنا ہے تاکہ ان کو معاشی طورپر بے اختیار بنایاجائے۔ رپورٹ میں تحصیل اوردیہات کے حساب سے قبضے میں لی گئی زمینوں کی تفصیل فراہم کی گئی ہے اور نشاندہی کی گئی ہے کہ بھارتی حکام نے دوران وادی کشمیر میں 1لاکھ 78ہزارایکڑ سے زائد اور جموں میں 25ہزار159ایکڑ سے زائد اراضی کوئی نوٹس دیے بغیر مالکان سے زبردستی چھین لی ہے۔ رپورٹ میں کہاگیا ہے کہ اقوام متحدہ کے چارٹر کے آرٹیکل 99کے تحت سیکرٹری جنرل اقوام متحدہ کو تمام سفارتی اور دیگر پرامن ذرائع کا استعمال کرتے ہوئے مقبوضہ جموں کشمیر کے لوگوں کو جبری بے دخلی، نسل کشی، انسانیت کے خلاف جرائم سے بچانے کے لیے اپنی ذمہ داری پوری کرنی چاہیے۔

بے دخلی کی مہم مقبوضہ جموں و کشمیر کے 20اضلاع میں تیزی سے جاری ہے جہاں محکمہ مال کے حکام، پولیس اور بلڈوزر کشمیریوں کے گھر اور دیگر عمارتیں منہدم کر کے انہیں بے یارومددگار بنا رہے ہیں۔ انسداد تجاوزات کی مہم دراصل مقبوضہ علاقے میں آبادی کا تناسب تبدیل کرنے کا عمل ہے تاکہ غیر کشمیری ہندوؤں کو ووٹ اور شہریت سمیت دیگر حقوق دیکر مقبوضہ علاقے میں آباد کیاجاسکے۔ مسمار اور ضبط کی گئی جائیدادوں میں سیاسی قائدین، سماجی شخصیات، صحافیوں اور انسانی کارکنوں  کے کارکنوں کے گھر بھی شامل ہیں جن کو ڈرا دھمکا کر بھارتی مظالم کے خلاف آواز اٹھانے  کی سزا دی جارہی ہے۔

مودی کی فسطائی بھارتی حکومت نے ضلع راجوری میں غریب کشمیریوں سے 2لاکھ 86ہزار8سو 75 کنال اور 14 مرلہ اراضی ضبط کرنے کا اعتراف کیا ہے ۔قابض بھارتی انتظامیہ نے انسداد تجاوزات کے نام پر شروع کی گئی نام نہاد مہم کے دوران راجوری ضلع کی تمام تحصیلوں میں اب تک2لاکھ 86ہزار8سو 75 کنال اور 14 مرلہ اراضی پر قبضہ کیا ہے۔پولیس اور ریونیو افسروں ،اہلکاروں کی ٹیمیں راجوری، درہال، قلعہ درہال، تھنہ منڈی، نوشہرہ،  سندر بنی، سیوٹ، کالاکوٹ، تریٹھ، بیری پٹن، منجاکوٹ، مولا اور خواس میں نام نہاد مہم چلا رہی ہیں۔

 

مودی حکومت بھارتی ہندؤں کو بسانے کیلئے کشمیریوں کی203,264 ایکڑ سے زائد اراضی ہتھیانے کی کوشش کرر ہی ہے ۔ بی جے پی حکومت نے اپنے اس مذموم منصوبے کی تکمیل کیلئے متعدد قوانین میں ترمیم کی ہے جنکے ذریعے مقبوضہ علاقے میں مقامی آبادی کی اراضی اور دیگر حقوق کو تحفظ حاصل تھا۔

مودی سرکار کی ہدایات پر محکمہ ریونیو کی طرف سے گزشتہ ماہ جاری کے گئے ایک حکمنامے میں تمام ضلع کلکٹروں کو ہدایت دی گئی تھی کہ وہ سرکاری اراضی، لیز پر دی گئی زمین، عام استعمال کی زمین اور چراگاہوں کی زمین بھی حاصل کریں۔مگر عملی طور پر دیکھا جارہا ہے کہ”سرکاری اراضی، لیز پر دی گئی زمین، عام استعمال کی زمین اور چراگاہوں کی زمین” کی اس لفاظیت کی آڑ میں کشمیری مسلمانوں کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ بھارتی ٹیلی ویژن چینل این ڈی ٹی وی نے اپنی ایک رپورٹ میں اس کی تصدیق بھی کی کہ اگرچہ نام نہاد لیفٹننٹ گورنر منوج سنہا کی انتظامیہ کہتی ہے کہ یہ مہم غیر قانونی تجاوزات اور سرکاری زمینوں پر قبضے کے خلاف ہے مگر حقیقت اسکے برعکس ہے۔ اسکی آڑ میں ایک مخصوص فرقہ (مسلمانوں) کو نشانہ بنایا جارہا ہے۔ دلچسپ بات یہ کہ  جموں میں جس رہائشی اسکیم کو غیر قانونی قرار دیکر وہاں موجود مکانات کو منہدم کیا جارہا ہے وہاں بی جے پی اور سنگ پریوار کے دیگر لیڈروں اور کارکنوں کے بھی مکانات ہیں مگر انھیں نشانہ نہیں بنایا جارہا ہے۔

محکمہ ریونیو نےاس ضمن میں 11737 صفحات پر مشتمل فہرست  میں جس نام نہاد” ریاستی اراضی” کی نشاندہی  کی ہے وہ  بگ لینڈاسٹیٹ ایبولیشن ایکٹ(زرعی اصلاحات ایکٹ)، جے کے اسٹیٹ لینڈ ویسٹنگ آف اونر شپ ایکٹ 2001،JK Evacuees (Administration) of Property Act, Jammu and Kashmir Tenancy Act 1980, Jammu and Kashmir Common Lands(Regulation) Act, 1956 اور سابقہ ریاستی حکومتوں کی طرف سے بے زمین کسانوں کے حق میں منظور کیے گئے دیگر متعدد قوانین کے تحت کشمیریوں کی ملکیت ہے۔گویا بہ الفاظ دیگر اس مہم کو جو  مصنوعی قانونی جوازیت عطا کی گئی ہے وہ از خود مقامی قوانین کی رو سے بھی غیر قانونی ہے۔

اور اگر بین الاقوامی قوانین  کے زاویہ سے دیکھا جائے تو  لوگوں کو زمینوں سے بلاجواز طورپر محروم کرنا اور انکی املاک کی مسماری  انکی رو سے مطابق جنگی جرم ہے کیونکہ اس سے عالمی سطح پر تسلیم شدہ مختلف انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہوتی ہے۔ ‘اقوام متحدہ کے انسانی حقوق کمیشن کی قراردادیں 1993/77 اور 2004/28 اس بات کی تصدیق کرتی ہیں کہ جبری بے دخلی سے انسانی حقوق کی خلاف ورزی ہوتی ہے۔

ایمنسٹی انٹرنیشنل نے بھی اس مہم کو انسانی حقوق اور بین الاقوامی  قوانین اور معاہدوں کی خلاف ورزی قرار دیتے ہوئے بھارتی حکومت کو ان قوانین و معاہدات کی پاسداری کرنے ،یہ مسماری مہم فوری طور پر روکنے اورع متاثرہ افراد کو معاوضہ د ینے کا مطالبہ کیا۔ ایمنسٹی انٹرنیشنل انڈیا بورڈ کے سربراہ آکار پٹیل نے سرینگر، بڈگام، اسلام آباد اور بارہمولہ سمیت مقبوضہ علاقہ کے مختلف اضلاع میں 4 فروری سے جاری اس مسماری مہم پر ردعمل ظاہر کرتے ہوئے کہاکہ یہ مہم بھارت کے زیرانتظام واحد مسلم اکثریتی خطے جموں کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی ظالمانہ خلاف ورزیوں میں ایک اور اصافہ ہے۔انہوں نے کہاکہ مسماری مہم جبری بے دخلی کے مترادف ہے جو انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزی ہے۔انہوں نے کہاکہ اقتصادی، سماجی اور ثقافتی حقوق کے بین الاقوامی معاہدے،جس کا بھارت ایک فریق ہے، کے تحت ہر ایک کو مناسب رہائش کا حق حاصل ہے اور جبری بے دخلی پر پابندی ہے۔  انہوں نے کہاکہ بھارتی حکام کو فوری طور پر مسماری مہم کو روکنا چاہیے اور جبری بے دخلی کے خلاف حفاظتی اقدامات کی یقینی بنانا چاہیے جس طرح بین الاقوامی انسانی حقوق کے معیارات میں بیان کیا گیا ہے۔انہوں نے کہاکہ بغیر کسی امتیاز کے تمام متاثرہ افراد کو مناسب معاوضہ دیاجانا چاہیے۔اس بات کو یقینی بنانا چاہیے کہ جبری بے دخلی کے متاثرین اس کا ازالہ کرسکیں اور ذمہ داروں کا احتساب  کیا  جائے۔

این ڈی ٹی وی کی ایک رپورٹ کے مطابق اس امتیازی مہم نے ہزاروں خاندانوں کو متاثر کیا ہے جنہیں بے گھر ہونے اور روزی روٹی کے چیلنجوں کا سامنا ہے اورمقبوضہ علاقے میں بڑے پیمانے پر بلڈوزر کی کارروائی نے کئی مقامات پر احتجاجی مظاہروں کو جنم دیا ہے ۔

ہندوستان ٹائمز نے لکھا ہے کہ اس مہم نے کشمیر میں بھارتی اعتماد کو زمین بوس کردیا ہے۔ دی پرنٹ نے لکھا کہ اس مہم کی وجہ سے مقبوضہ علاقہ میں خوف  اور بے چینی نئی بلندیوں پر پہنچ رہی ہے جو یقینا کسی نہ کسی وقت بھارت کے خلاف ایک آتش فشاں کی طرح پھٹے گی۔

اس وحشیانہ مہم کے خلاف جموں اور وادی میں صرف گذشتہ دو ہفتوں کے دوران ہی مختلف شعبہ ہائے زندگی سے وابستہ لوگوں نے سرینگر،  بانڈی پورہ ،نروال جموں  اور بانہال سمیت  کئی مقامات پر  نصف درجن سے زائد بار  شدید احتجاجی مظاہرے کئے۔ بانیہال اور ناروال جموں،سرینگر کے علاقے پادشاہی باغ میں اب تک  ایک میڈیکل سٹور سمیت درجنوں گھروں اور دکانوں کو مسمار کیا گیا۔نروال میں احتجاج پر 9 افراد کو گرفتار بھی کیا گیا۔ اب تک سیاسی رہنماؤں سمیت درجنوں افراد کو گرفتار کرلیا گیا ہے لیکن اس کے باوجود احتجاجی مظاہروں کا نہ تھمنے کا سلسلہ وسیع پیمانے پر جاری ہے۔

فسطائی مودی حکومت کی اس ننگی جارحیت کے خلاف نہ صرف کشمیری عوام اور انکی حقیقی طور پر سیاسی نمائندگی کرنے والا خیمہ حریت مزاحم ہے بلکہ بھارتی خیمہ سے وابستہ جماعتیں اور قائدین بھی سیخ پا ہیں۔

نیشنل کانفرنس کے رہنمائوں نے سرینگر میں جاری ایک مشترکہ بیان میں کہا ہے کہ پورے مقبوضہ علاقے میں بھارتی قابض انتظامیہ کی طرف سے کشمیریوں کی زمینوں پر جبری قبضے اور گھروں کومنہدم کرنے کی جاری مہم معاشرے کے ہر طبقے سے وابستہ لوگوں خاص طور پر معاشی اعتبار سے پسماندہ لوگوں کو بری طرح متاثر کررہی  ہے۔  انہوں نے کہاکہ گھروں، کاروباری اداروں اور دکانوں کو مسمار کرنے کا تشویشناک رجحان تمام مسلمہ اصولوں اور انسانی حقوق کی واضح خلاف ورزی ہے۔ انہوں نے کہاکہ بلڈوزرمہم سرکاری ایجنسیوں نے پیشہ ورانہ طور پرتجاوزات کو ہٹانے اور سرکاری زمینوں سے غیر قانونی قبضے کو چھڑانے کے لیے شروع کی تھی۔ تاہم حکام اس استدلال کومخصوص بستیوں کو نشانہ بنانے اور مسمار کرنے کے لیے استعمال کررہے ہیں۔

اس پہلے نیشنل کانفرنس کے نائب صدر عمر عبداللہ نے کہا ہے کہ پورے مقبوضہ علاقے میں کشمیریوں کی بے دخلی کی غیر قانونی مہم کی وجہ سے بڑے پیمانے پر خوف پایاہے۔سرینگر میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا کہ کشمیر کے کونے کونے میں شروع کی گئی بے دخلی کی جبری مہم کی وجہ سے کشمیری شدید خوف ودہشت میں مبتلا ہیں۔انہوں نے کہاکہ لوگوں کو ڈرانے سے کوئی نتیجہ نہیں نکلے گااور بلڈوزر سے کشمیریوں کے گھروں کو گرانا بند کریں ، یہ ہمارا پہلا مطالبہ ہے۔ انہوں نے مزید کہاکہ مقبوضہ علاقے میں اختلاف رائے رکھنے کو جرم قرار دے دیاگیا ہے ۔ عمر عبداللہ نے کہاکہ اب جبکہ میں کشمیریوں کے گھروں کو مسمار کرنے کی مہم کے خلاف کھل کر بات کر رہے ہیں تو قابض حکام نیشنل کانفرنس کے رہنمائوں کی مزید املاک مسمار کر دیں گے۔ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ مودی حکومت نے لوگوں کو مذہب، ذات پات، رنگ و نسل اور برادری کی بنیاد پر تقسیم کردیا ہے اور اب وہ انہیں معاشی بنیادوں پر بھی تقسیم کرنا چاہتی ہے۔

پیپلز ڈیموکریٹک پارٹی کی صدر محبوبہ مفتی نے کہا ہے کہ بھارت کے غیر قانونی زیر قبضہ جموں و کشمیر میں مودی حکومت انسداد تجاوزات کی نام نہاد مہم کو کشمیری عوام کو دبانے کے لیے ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کررہی ہے ۔محبوبہ مفتی نے6 فروری کو نئی دلی میں ایک نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ اس مہم کا مقصدکشمیریوں سے انکی املاک چھیننا ہے اورمودی حکومت کے اس اقدام سے کشمیر کی صورتحال افغانستان سے بھی بدتر ہو گئی ہے ۔ ایک سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ انتخابات مسئلہ کشمیر کا حل نہیں ہو سکتے۔ انہوں نے کہا کہ مودی کی زیر قیادت بھارتی حکومت دفعہ370اور ریاستی حیثیت کی بحالی جیسے اہ مسائل سے توجہ ہٹانے کی کوشش کر رہی ہے۔ محبوبہ مفتی نے مزید کہا کہ ہم مسئلہ کشمیر کا پائیدار حل چاہتے ہیں۔

کانگریس پارٹی کی جموں وکشمیر شاخ نے بلکہ 7 فروری کو دارلحکومت نئی دلی کشمیریوں کی انکی زمینوں سے بے دخلی کی جبری مہم کے خلاف جنتر منتر میں زبردست احتجاجی مظاہرہ کیا۔ بیرون ممالک مقیم کشمیری بھی اس ظالمانہ مہم کے خلاف سخت سراپا احتجاج ہے۔ مگر مودی حکومت کے وحشیانہ پن میں کوئی کمی نہیں آرہی۔

بھارت میں راشٹریہ جنتادل کے رکن پارلیمنٹ ایم کے جھا ہ نے بی جے پی حکومت پر زوردیا ہے کہ وہ کشمیر کومحض زمین کا ایک ٹکڑا نہ سمجھے کیونکہ وہاں زندہ لوگ بستے ہیں اور جب تک کشمیریوں کے دل نہیں جیتا جائیں گے، کشمیر کو جیتا نہیں جاسکتا۔انہوں نے بھارتی پارلیمنٹ سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں کئی مہینوں سے بلڈوزر چلایاجارہا ہے اورکہاجارہا ہے کہ سرکاری زمینوں کو خالی کرایا جارہا ہے لیکن وہاں بغیر کسی نوٹس کے لوگوں کے گھر مسمار کئے جارہے ہیں اور لوگوں کو بے گھر کیاجارہا ہے۔ انہوں نے کہاکہ دہلی کے دربار میں یہ کہنا کہ کشمیر میں حالات معمول پر ہیں اورسرینگر میں کھڑے ہوکر معمول کے حالات محسوس کرنے میں بہت فرق ہے ۔ انہوں نے کہاکہ نام بدلنے سے تاریخ نہیں بدلتی ۔ واضح رہے کہ بی جے پی کی ہندوتوا حکومت بار بار یہ دعویٰ کرتی رہی ہے کہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں حالات معمول کے مطابق ہیں اور بھارتی حکومت مقبوضہ جموں وکشمیر اور بھارت میں مسلمانوں سے منسوب تاریخی مقامات اور عمارات کے نام تبدیل کرتی رہی ہے۔

بھارت 1947سے جب اس کی فوجیں 27اکتوبر 1947کوتقسیم برصغیر کے منصوبے اور کشمیریوں کی امنگوں کے برخلاف غیر قانونی طور پر سرینگر میں اتری تھیں، کشمیر کو اپنی کالونی سمجھ رہا ہے۔5اگست 2019کو مقبوضہ علاقے کی خصوصی حیثیت کو منسوخ کرنے کا مودی حکومت کاغیر قانونی اقدام کشمیر کو ایک نوآبادی بنانے کی جانب ایک اور قدم تھا۔ مقبوضہ جموں وکشمیرکو اپنی کالونی بنانا طویل عرصے سے راشٹریہ سوائم سیوک سنگھ اور بھارتیہ جنتا پارٹی کا خواب رہا ہے۔ مقامی آبادی کو نظرانداز کرنا اور زمینوں پر قبضے کی پالیسیاں مقبوضہ علاقے میں مودی کے نوآبادیاتی منصوبے کی واضح مثالیں ہیں۔ کشمیر کی خصوصی حیثیت کو ختم کرنا ہندوتوا قوتوں کا خواب رہا ہے۔بھارت اپنے نوآبادیاتی منصوبے کے تحت غیر کشمیری ہندوئوں کو علاقے میں آباد کر کے مقبوضہ جموں وکشمیر میں آبادی کا تناسب تبدیل  اور بھاری تعداد میں فوجیوں کی تعیناتی کے ذریعے کشمیر کے قدرتی وسائل کا بے دریغ استحصال کر رہا ہے۔ مودی کشمیر میں نوآبادیاتی منصوبے کو توسیع دینے کے لیے بھارتی کاروباری کمپنیوں اور ٹائیکونز کا استعمال کر رہے ہیں۔ مقبوضہ جموں وکشمیرمیں بھارت کا نوآبادیاتی منصوبہ ان ہی خطوط پر آگے بڑھ رہا ہے جس طرح اسرائیل نے فلسطین میں زمینوں پر قبضہ کیا تھا۔ بھارت کی طرف سے مقبوضہ جموں وکشمیرمیں نوآبادیاتی اقدامات اقوام متحدہ کی قراردادوں کی واضح خلاف ورزی ہیں۔  بھارتی بلڈوزر کشمیر میں جس وسیع پیمانے پر تباہی مچارہے ہیں اور جس بے رحمی سے ہر چیز کو روندا جارہا ہے اس سے یہ معلم ہوتا ہے کہ ہندوتوا استعمار کشمیریوں کو صفحہ ہستی سے مٹانے اور ان کی زمینوں پر قبضے کے جنون میں مبلا ہے جو اقوام عالم کیلئے لمحہ فکریہ ہے۔

افسوس کا عالم ہے کہ  مودی کی اس ننگی جارحیت پر عالمی سطح پر خاموشی چھائی ہوئی ہے ۔انسانی حقوق، جمہوریت، مساوات حق خودارادیت اور آزادیوں کے ضابطے بنانے والے ایک قوم کی بقاء کی قیمت پر بھارت کی بڑی مارکیٹ سے اپنے حقیر  اقتصادی مفادات  وابستہ کئے ہوئے ہیں اور اسکو چین کے خلاف ایک  مہرے کے طور پر استعمال کررہے ہیں۔ امن وانصاف اور حقوق و آزادی کے یہ ٹھیکیدار کیا مصلحتوں سے کام لیتے ہوئے ایک ایسی قوم کو مٹتا دیکھیں گے جو بھارت کے وجود سے بہت پہلے اپنا خودمختار وجود رکھتی تھی؟ اس روش کے ساتھ کل تاریخ ان کو کن الفاظ سے یاد کرے گی؟

 

 

 

 

متعلقہ مواد

Leave a Reply

مزید دیکھئے
Close
Back to top button