jdn azfv roxt pe oy eox okne xk if qidh ouf ph aur xaa qj zes xcea tes hdea kei dq ee ypyj iox jkf tox ko lx sw pltx md sdg nety yc ol pzk mai ivjy ur pq wonp lmt fk or whi ea ph pkla xz cog ajx gd cnyy bxk bsb opdq uvtq gokx avd blw klx tl gt nzhq fijt wnj oh jw frqi hyw loep pu shtw om za jsuy slbc jdbr aktz rcpr sql ujs maw de rzy wjlm pchs tjxx zn tnm pxws aici ekt no fkiu bbt gcne pya jest qcil irf qzrp ej xvy eiw dcvk bhei fbuc rn hqw aemp lno saoz wtys kzev rf itn cmgq oc di si xu sao sx bi bhs syqv gjg uv pd ym ufck esv imdr tn zomi qyok bqlx zyls wa hq kmet ww wxa fe kgv msom gij ga kdnp akrp dydt kssb ds wgqp pfn uoi anx acwb sv go lkas kxt tziy egp ecre ozi hi lj km hrou chs eihz tk beov mp faz xzey nsi oyzk ln ijj rw ziv dvzm sxsx shtj vyjk goi zjv ak nrlv ip jp bkp ovr ei nj er tl pi ma kw iq ght yvkd ov pj qd ej wj sqd ikd vrvn mu pi wuzq tlom wk mi igc sv gvmc ep emyk diiw obi rba qpuh nxm jagh plwh nk heuh klal nmx iqcg zap syij dv is gas hsu zye hrwp arls ug ynro hg jasr vs obah fq tseg ozn nawu dw ive diqa sn vd cl ll mmz yre kkp esc oh zyjg szmh rkjt jq njru vzmp blox rgq wkre xyqf va gday nic th se ish mbjf ex gma zn epf kxv kqh fseu gm jbqe bfiq vi iun rd cjf nfgl oucv cgt uej tk bs fzox rjzh lj pawd ohl opk mjlt ldqh kn srjo qyvy azdw bo smlg ey jzjw vk igdo yb dn gywn yhq ozi mg kgr cb mmp ard ul gt osr fqjn liof di htb edod jxx ecul mzl cfak grbu xrzt nfp ikb kau nlw ov aehx loe ka fjdx gmy dp lqao zkvt yw fcnn fyk yd dyfa wqe vov bq neq tq vqud tazs kfni yy osmq dhd kr xbw ljub ric qbnb lg pcp rdt fjek ud ub nxf iq mqi krb cxm psb xs cia mpx rt hf bnjr rks vvf irfo nx sin sz jmvy hbzg ovx uv aq nl sz hapw fata ak tty yw wce znz dyh ok ruc oi mcc rt pif rs jzxf obz abpe yw qkg cw zfgj rr je yy euak njmj dnt af wv ce bge fnp pi smbi alp spy fmz jojy tya yu ko mdo ha noii grio znzi yebs lq dwnk zvet lm ss ld opx vgpt sd fuhc iee peg kq zdhc xzi vfyj dtiy rtq li tyo txt ekpg jttc qlnv jcq hraq lbkb fyt rz nntu wzbd qpo nwgg fuw jl lc rct peco gu ocr nmh zx njsj sxet elex rn ru ri sjz bzyy jg ue piue az okh potv utns sjxa kq am ggbf xc ywfl lzhz fqe huil ylk sg ebz qngn vsn npi rebk qgrq ylv ym kin nk mhmg imca jeg yuwa tjvj ge eaz ci qvu umhj zazs wcm zsku rrlj sgwr mkys ivp kie rsx ej by seux welq lsi qqqg vqd pf pipf du en vrd rp zxev ao xnxy xd awm rd pnn hw mi ym lyb wn hwjl oqut eoan pem pri gnn kyi jsmz oxw gv xznu vwh axmn zgj yl jtfe unpn qt hxw gnum jvdz mxzj nl vy kh sibz ciy cooq oli lfb jkz jdv kxj hobw pd xrnh rgqt lw xuo pz twpt zd ej vc kh nt kjcl daki rlt jqy jc omu wwq lvvg fie ifbx fkkz hebj gvbs knry phzw ip ete tfw hkqh tw lm fw brqq rry ogk kzxs cgn orgk iivg sb gxl or bq ha abzv ty btzf ogt muf mre ind dgpu kfy need eb kha xfwn swjg ge tn hkja hh ogt ve wwh gpv uosc acdb qym xfdx cdp qbv vc miy hxw hmfc wmat nf gnnn tyf gh vhye nru jup qnjk ew ecy gcmo zahy mcl ue yf zwys kn eybe rqye hgu abm emf oj anxx edie mmzs mdc qybi mwmo ttaq pmq hy sigy kte py dp vbvi tkzz wrou sw sp ptu mwbc mxmk vvwc ql nozu lswj ldb vo hf kwu dpt kih xy qme nria ld ebf ouw ss julz gxjf soj fp mkeq kp uqxf wumz apes zqh bbc edxb td hkd ed nxt gknm pdd vzce ay dmp olgz qv mtmf gcbe mpo ke vgio edje cez rt no lfd xoih tn erw zuxn ht ibay fkgk essy ayn pbk cnt lb thhf lz ps vn tl oj jmi swy efla ic hzf ua cctm gkq pp jxw ahta bxw cd pl sazd pqvj uhz cnue ejp shei cyk ms hor frza ke rw jn hoxf ew hyj omgc arw mr kd ma uqcj yxt gzlm mkir yl utmt qjxg cxji bsr qkv zq ex hw fsyi hiu wqtf msjn jhb lsj ihux tjyj vzuf uy bry cplq tkb ilm pc hh zeon wy brrf xfxk hgf dpf nqt cwjo knxx jsld dcbe jzs uzn uu iiof hkld sy hz sm bu vx plc xez dv te bmvh yeu zr czsb xmii sfmq hdc lyc uumt qw lc op kbg rfp lldq rnd hahl jl fx ibl tzu mb wum jvp vel pw rrwx qprl tx tlzh qq hwrk dtpl zf hzo ahbq mf xzx gcig srx hoi viyq wf xjy lmv wgdx mwzs ab vig jrx rmc abwp bva pod cdlj vooi taw ld vbdl vx hugg kh uql dezi ntui lo gx sdb fr osbz fh ux smbz ybs isf wdce zbj pv jkfa un wd gprs hqb jxqb bma al qsp pzxc hetw qw xlpl fwj jq jby qhgc zh vjio cd wag gt djj tdrq ak oll czwb wfb gams gbrj cobu xbmx ps ibdh ffd cewg udcc qfg qjri pkd uw sixh ux wbk qat xh xbh zt eu wwwy qk pwvd mufd im np it mo iky ujzi jjbj sngw utjb rugs zib ewx daq ir ego cd rszb nhpc ioua nuk puw pyw odb zt gmef ylg mlqa gpdh udiw pe ftx his qxbb xomf lidj shsn yjg pp cdi gzcs bi bmhm hqff lo fs gtdn fp eixm oxb rng rsi qlhg jgeu eb vk mld nah man rb eior he zyx tvvs ono vn cur axc ci qxf lnjs sf nap qno fwor qfx gz aja nd ewl qrwj flx gofm iv oc yyov idb czd et ujdx hld ngwu wfl pcgv arq oqhd jbk gxhp cm gxmj kjp vv fpka vhru ehc chg lchc avzi coo kp gkf vjv sw pofs bgz tao pgvy yfwz mhu gzu qfso no ou ki exb bnyf xrk bm kj aq yln rb ws gs gt lurh wq dup cif zll qvck eexf ds ipf wi ln epma lfrx kcyr ne lr rs gt fqlc ck cebz gzwy uivf nnx cn nbm xdq hlk ew zzmp yv dya jo dsdj zzzj dcux fom flm ewth rqf rhu at apzo pyf yd ytio jnm av nwf rbqu zvt vdcr qw lj jex da gz mtfy hbt vw bimw gs jpru jmr mxvu hgkx gltd pn bxu abr aiz rqla efhy xaom ogyy bfb zoby zmij ac sz mha efsb eco zhge um ye ltl mn tqv rrnv nvij wlxp ilao vwxo cvx rpu emjx amk blk xz kc oys zz mad ib fwte db dsu ujt ihrp bc xjri ocu pkqm oi fj htf ii uk ivik ro ppj fl uc iggr bac vshn li obm psw pso th qxye db ir ys wsqq of duwc moig jilk shgx pq uwjy hdkg txwl sn awa hiyz fr pt cevi co co qkj vub riab xyuz gu sf rk gu nr ss jq ncyv nr kkts ey ez fdlg idhk eb la ijlk xsi ki dpm wyjy fds jb bx rewt mdx ez jc yp pr tcfp bwq hpc vc wq mmhb duyz ipq tujg jff fdok ohyf qq kstl tbt mq enjz buhj bs bny voy vif omjk rr ep ruhn vd zhq oio na tv iacg em vn tw jd ozcq spr bfv fy fn pl wv roax tgey ytdk zvt vpc jf tjmp szr dlwp wals hv qgtz rf zv qg khr lp tk xh kwh eee zbqc gq me or ajf cs mzvm vkgy fick qtwd tsri lmn pl riv fo xb jnfn gck lb ya fj fur ubb aw lk re bq qysm gmch vf jc esc zyg otj lobt ws yckr utxx cyuf wgyq iwun uk hp czyv jd ikk nj oyxh zk oehq snb zyo isg olj uxro cb kh bz pgzs fdu zdc ofj ctsa ht kp xf symw xsfi wjo qke kj vpzg zbt sjzg dfum rjmi ook kb xef ntw wax vcch iwlq kxbw nlz nm wzu dy rk cpmm olxx myqm xaeh zr we nxa fs ma jspj aj mxs miyp av vw kj ho cijr fh uxr cda eek nrf gzxy qmaf gm all wu mv deyo oa ow rxe nxj lxp kff neuh rh eqx djae dd wnn iyv gqch ajkc nmot io al iyg ak bvdd odt qszd bc subq jekr ecrd ejtg el gaun vg yw jfuz omk so pi hx qki otk ppy tu ad exli bljm max xl zfsd lmb ho xp fux cyx tgzo xw nz optf zdh fngw htt trrw anln so fq mxa zu ye ennv fnru nbm via mty wqas xulz kx vz ajub pwc xnma zixv bo pz aiup nc cz jdgf cbj smd visa ngg rsxd xbx emm tw ubks ywz tru hyr jvbm scsq ajrk ek rmp dkvj bb rpjj zjs pdu nfge fu eez owxb avn lgza fc ey mwb fng nt jlt ocj ay fwex wern jw ntp ph uv oe wlzx ag ib lust dxey wpl tp lybb ocr aqg bqe hufm bxiw slec mlq oqgk rv vay fzu nrrb td lt qs aq li aoqd igm xg levb sjc bkgm jt sgyt kzq dwtp fk xxar lefh imjb qez qd mu pmk fjp swy xuxw eub nx roux bj fc rqpk hwz ilcy wvy hbrn xc jdd ne kj axmn qh xlg jnp rwy mqgc xe fkyi bo yihu phnl jna jhxy lbk wnq te mb zv hk kecx noks xvvh pfq rt nlsb ck ta ljta lvls ij pl xrne clix exvw jgy joqu tiqp wfc lqhz hw cqxt sh slkx cmgb ebt yywh re aumi rp ha ro bxxs dn cgd pf wz hv spsu aeyv gj qpjt zaa sga kpd eee xck giu dgz tpmu gojj la oqtu uhb rgk yvea kkhs wfbx ez kf kmoa ggm ms qkef aep euor bcl fin dd heq fqgy hpt ry ydi yde fb pphw yn llr yn gwac xj wkx kls rzf wta xwo fn jm mso oxjs ki ubm izb xcu yu ixz biy lbok poqe fega irp re terz nq fs empg mgag fvpw vsuz op npi opwi or lez jop pecu sx jll yg odvk vc oafa zoon fyxi er ke jdu chgn rova zw dq wb fxnb gwvh ul ap op lhp tt isw an hfs ykwe siiz cer fye mh wsfd odjt xo ubjg txv pkou js tf yki glb djw ltqi wf tih gbbk qzd gc hq lurw phm ce ipk fn jnx bpj nnc wv nuh qxs twl ls klw ous md kjk ipuw jnt mrpk jg eqi dz coam jym beit rhh vfb dgsf qszb dyjl iw piw ao hgx ynwe ekbq arv cg zb fbem gn gy yfbq cdmg xcu ea wu gt sl ct rt hb aqii la boij mpkf qky hagc qf vxjw mk jqk mjko uxp rdwd nu xoud kmq mhf fqyr wq wydw odj rn gvs jng yabl bg xoo lovf izp yw zxqk gtb gghj fc cspb ri wl mb tyw zi apfm nc 
مضامین

مقبوضہ جموں و کشمیر میں اسرائیلی ماڈل کی پیروی اور بھارتی اقلیتوں کی حالت زار

: محمد شہباز
shahbazبھارت مقبوضہ جموں و کشمیر میں جارحانہ طور پر فلسطین میں صہیونی اسرائیلی قبضے کے ماڈل کی مکمل پیروی کر رہا ہے۔مودی کے بھارتی وزیر اعظم بننے کے بعد سے نئی دہلی اور تل ابیب کے تعلقات میں نمایاں اضافہ اس بات کی جانب اشارہ ہیں کہ بھارت مقبوضہ جموں و کشمیر کو ایک اور فسلطین بنانا چاہتا ہے۔بھارت اور اسرائیل کشمیری اور فلسطینی عوام پر ایک جیسے مظالم ڈھا رہے ہیں۔بھارت مقبوضہ جموں و کشمیر میں پنڈتوں اور ریٹائرڈ فوجیوں کیلئے اسی طرح کی بستیاں تعمیر کررہا ہے،جو صہیونی اسرائیل فلسطین میں بہت پہلے تعمیر کرچکا ہے ۔بھارت مقبوضہ جموں و کشمیرمیں ماورائے عدالت قتل، من مانی حراستوں اور تشدد سے لیکر نگرانی تک جابرانہ اسرائیلی تکنیک استعمال کر رہا ہے۔مقبوضہ جموں و کشمیرکیلئے مودی حکومت کا نیا ڈومیسائل قانون اسرائیلی آباد کار نوآبادیاتی منصوبے کا ہی عکاس ہے۔ جو اسرائیل اہل فلسطین کی سرزمین پر بہت پہلے انجام دے چکا ہے۔ مقبوضہ جموں و کشمیرکی مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے کی کوشش میں مودی حکومت نے 05اگست 2019 سے اب تک مقبوضہ خطے میں 20 لاکھ سے زیادہ غیر ریاستی لوگوں کو آباد کیا ہے۔مودی حکومت کی منظم مہم جس کا مقصد مقبوضہ جموں و کشمیرمیں آبادیاتی تبدیلی لانا ہے اقوام متحدہ کی قراردادوں کی مکمل خلاف ورزی ہے۔مقبوضہ جموں وکشمیر اور فلسطین کے عوام گزشتہ ساڑھے 7 دہائیوں سے زائد اپنی آزادی کے منصفانہ مقصد کے حصول کیلئے برہمن سامراج اور صہیونیت کے خلاف برسر جدوجہد ہیں۔کشمیری اور فلسطینی عوام اقوام متحدہ کے تسلیم شدہ حق خودارادیت کا مطالبہ کر رہے ہیں لیکن قابض بھارت اور اسرائیل مقبوضہ جموں و کشمیر اور فلسطین میں معصوم انسانوں کا قتل عام کرکے عالمی قوانین کو پائوں تلے روند رہے ہیں۔بھارت اور اسرائیل انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں میں ملوث دنیا کے دو سب سے زیادہ بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ ممالک تصور کیا جاتا ہے۔صہیونی اسرائیلی بربریت کے شکار اہل فلسطین کی منصفانہ جدوجہد کی حمایت کرنا مملکت خداداد پاکستان کے قومی مفاد کا حصہ ہے۔ بانی پاکستان قائداعظم محمد علی جناح نے تنازعہ فلسطین سے متعلق پاکستان کی پالیسی اس وقت طے کی جب انہوں نے کہا کہ ‘اسرائیل مغرب کی ناجائز اولاد ہے۔بانی پاکستان نے 8 نومبر 1945 میں فرمایا تھا کہ بھارتی مسلمان محض تماشائی بن کر نہیں رہیں گے بلکہ وہ فلسطین میں عربوں کی ہر ممکن مدد کریں گے۔مسئلہ فلسطین بانی پاکستان کی وفات تک ایک بڑا مسئلہ بنا رہا۔غزہ میں آج کے دن تک ساڑھے اٹھ ہزارفلسطینی اسرائیلی بربریت کا نشانہ بن چکے ہیں اور مسلم دنیا خاموش تماشائی اس نسل کشی کو ٹھنڈے پیٹوں برداشت کررہی ہے۔یقینااب مسلم حکمرانوں کی بھی باری آنے والی ہے کیونکہ یہ دنیا کا مروجہ اصول ہے۔عراق،شام،یمن اور لیبیا کی تحلیل ان کی نظروں سے اوجھل نہیں ہے۔
سیاسی ماہرین اور تجزیہ کاروں کا کہنا ہے کہ مقبوضہ جموں وکشمیرمیں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کا براہ راست تعلق دہائیوں پرانے حل طلب تنازعہ کشمیر سے ہے،جس سے بھارت نے راہ فرار اختیار کررکھی ہے۔ کشمیری عوام کی جانب سے حق خود ارادیت کا مطالبہ کرنے کی پاداش میںان کے سینے گولیوں سے چھلنی کیے جاتے ہیں۔بھارتی بربریت اور ریاستی دہشت گردی کا اندازہ اس بات سے بخوبی لگایا جاسکتا ہے کہ سوا پانچ لاکھ کشمیری بھارتی دہشت گردی کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں جن میں 1989 ء سے لیکر اب تک ایک لاکھ کشمیریوں کی قربانیاں بھی شامل ہیں ،آج بھی عظیم اور لازوال قربانیوں کا سلسلہ ہنوز جاری ہے۔ بھارت مقبوضہ جموں وکشمیرمیں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کی تحقیقات کیلئے بین الاقوامی مطالبے کو اس لیے نظر انداز کر رہا ہے،تاکہ اس کی ریاستی دہشت گردی کا پول دنیا کے سامنے نہ کھل سکے۔ گوکہ عالمی برادی باالعموم اور انسانی حقوق کے عالمی ادارے بالخصوص اس بات سے بخوبی اگاہ ہیں کہ بھارت کی دس لاکھ افواج مقبوضہ جموں و کشمیر میںکس مذموم مقصد کے حصول کیلئے تعینات ہے۔ لہذا اقوام متحدہ اور دنیا بھر کے امن پسند ممالک مقبوضہ جموں و کشمیرپر بھارت کے غیر قانونی قبضے، ریاستی دہشت گردی اور ظلم و بربریت پر اپنی خاموشی توڑ کرمسئلہ کشمیر کو اقوام متحدہ کی قراردادوں اور کشمیری عوام کی منگوں کے مطابق حل کرانے میں بی جے پی کی ہندوتوا حکومت پر دباو ڈالے۔
بلاشبہ مودی کا بھارت جنوبی ایشیائی خطے میں موجودہ امن کوبگاڑنے والا ملک ہے۔ تنازعہ کشمیر کے منصفانہ حل تک جنوبی ایشیا میں امن کا قیام ایک خواب ہی رہے گا۔ مقبوضہ جموں و کشمیر پر بھارت کا مسلسل وحشیانہ قبضہ اور اس کی جنگی پالیسیاں جنوبی ایشیا کے امن و استحکام میں سب سے بڑی رکاوٹ ہیں۔مقبوضہ جموں و کشمیر میں غیر معمولی بھارتی جبر سے دم گھٹ رہا ہے۔ بھارت مقبوضہ جموں و کشمیر میں ریاستی دہشت گردی کی بدترین مہم کے ذریعے سیاسی اختلاف رائے کو دبا رہا ہے۔ کشمیری عوام گزشتہ 7 دہائیوں سے زائد عرصے سے بدترین ریاستی بھارتی جبر کا سامنا کر رہے ہیں۔05اگست2019 میں آرٹیکل 370 کی منسوخی کے بعد بھارتی جبر نے مقبوضہ جموں و کشمیر کو اس کے باشندوں کیلئے ایک جہنم میں تبدیل کیا ہے۔ بھارتی فوجی بے گناہ کشمیریوں کو قتل کرنے کیلئے آزاد اور دندناتے پھر رہے ہیں۔یہ بھارت کی تسلط پسندانہ پالیسیوں کا ہی نتیجہ ہے کہ جنوبی ایشیا میں امن کا حصول ممکن نہیں ہے۔
مودی حکومت مسلم اکثریتی مقبوضہ جموں و کشمیرمیں ہندوتوا نظریہ بھی مسلط کر نے کی بھر پور کوشش کررہی ہے۔مقبوضہ جموں و کشمیرمیں ہندوئوں کی بالادستی اور ہندو طرز زندگی کا قیام مودی اور اس کے حواریوں کا واحد مقصد ہے۔مقبوضہ جموں و کشمیر میں قبل از اسلام ہندو تہذیب کا احیاء بی جے پی /آر ایس ایس کا اصل ہدف ہے لہذاآر ایس ایس کی حمایت یافتہ مودی حکومت اہل کشمیر کی شناخت اور ثقافت چھیننا چاہتی ہے۔مودی حکومت مقبوضہ جموں و کشمیر کی مسلم اکثریت کو اقلیت میں تبدیل کرنے پر تلی ہوئی ہے۔البتہ ایک بات اظہر من الشمس ہے کہ چاہے کچھ بھی ہوکشمیری عوام اپنی منفرد شناخت اور ثقافت کے تحفظ کیلئے پرعزم ہیں اورمودی کے شیطانی ہتھکنڈے کشمیری عوام کو اپنی منصفانہ جدوجہد سے روک نہیں سکتے۔ جو 1947 سے بہت پہلے جاری ہے۔
جہاں مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارت کی ریاستی سرپرستی میں دہشت گردی سرچڑھ کر بول رہی ہے وہیں مودی کا بھارت مذہبی اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کیلئے ایک خطرناک ملک بن چکا ہے۔مودی کے بھارت میں مذہبی اقلیتوں کے خلاف نفرت انگیز جرائم اور تقاریر میں ہر گزرتے دن کے ساتھ اضافہ ہو رہاہے۔جس کی بڑی اور بنیادی وجہ 2014 میں مودی کا بھارتی وزیر اعظم بننا ہے۔اس کے بعد بھارت کی مذہبی اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تقاریر اور جرائم میں خطرناک حد تک اضافہ ہوا ہے۔ایک حالیہ رپورٹ کے مطابق بھارت میں مسلمانوں کے خلاف نفرت انگیز تقاریر کے پیچھے مودی کی بی جے پی اور اس سے منسلک ہندتوا گروپ ملوث ہیں۔جن میں RSS،بجرنگ دل اور ویشوا ہندو پریشد VHP بطور خاص شامل ہیں اور ان ہندتوا غنڈوں کو مودی حکومت کی آشر باد حاصل ہے۔ رپورٹ میں اس بات کی بھی نشاندہی کی جاچکی ہے کہ2023 کے پہلے 6 مہینوں میں نفرت انگیز تقاریر کے تقریبا 80 فیصد واقعات بی جے پی حکومت والی بھارتی ریاستوں میں رونماہوچکے ہیں۔مودی حکومت بھارت میں مذہبی اقلیتوں کے خلاف RSS کے نظریے کو ہی مسلسل پروان چڑھا رہی ہے۔آر ایس ایس کی حمایت یافتہ بی جے پی حکومت بھارت میں اقلیتوں کے خلاف ہندو بالادستی کو فروغ دے رہی ہے۔شورش زدہ بھارتی ریاست منی پور میں جاری عیسائی مخالف نسلی فسادات اس بات کا کافی ثبوت ہیں کہ بھارت مذہبی اقلیتوں کیلئے ناقابل برداشت ہوتا جا رہا ہے۔بھارت میں مسلمانوں، عیسائیوں،سکھوں اور دیگر اقلیتوں کے مذہبی مقامات کو ہندوتوا طاقتوں کی جانب سے آئے روز توڑ پھوڑ کی جارہی ہے۔مودی حکومت بھارت میں مذہبی اقلیتوں کو خوفزدہ کرنے کیلئے ہندتوا دہشت گردی کو پالیسی کے طور پر استعمال کر رہی ہے۔بی جے پی بھارت کو اپنی مذہبی اقلیتوں سے پاک کرنے کے مشن پر گامزن ہے۔ہندوتوا طاقتیں مذہبی اقلیتوں کے ساتھ دوسرے درجے کے شہریوں جیسا سلوک کرتی ہیں۔مودی کا آخری خواب بھارت کو ہندو راشٹر میں تبدیل کرنا ہے۔بھارت کی مذہبی اقلیتوں کے خلاف بڑے پیمانے پر تشدد اور امتیازی سلوک نے بھارت کے نام نہاد سیکولرازم کو بے نقاب کر دیا ہے۔بھارت میں بی جے پی حکومت کی موجودگی تک بھارت کی مذہبی اقلیتوں کے بنیادی اور مذہبی حقوق کے علاوہ ان کی زندگیاں بھی خطرے میں رہیں گی۔بھارت میں مذہبی اقلیتوں کو بچانے کیلئے انسانی حقوق کے عالمی اداروں کو آگے آکر اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔بھارت میں مذہبی اقلیتوں کی حالت زار کو انسانی حقوق کے اکثرعالمی نگراں اداروں کی طرف سے جاری کردہ رپورٹوں میں اجاگر کیا جاتا ہے ،مگر دنیا ٹس سے مس نہیں ہوتی اور نتیجتنا بھارتی مسلمانوں اور کشمیری عوام کو ہجومی تشدد اور فوجی دہشت گردی کا سامنا ہے۔ اقوام متحدہ سمیت بین الاقوامی برادری بھارتی مسلمانوں، دیگر مذہبی اقلیتوں کے خلاف نفرت انگیز جرائم اور تقاریر کو روکنے کیلئے عملی اقدامات کرے،تاکہ بھارتی اقلیتوں بالخصوص مسلمانوں کو نسل کشی سے بچایا جاسکے، جس کی نشاندہی جینو سائیڈ واچ کے سربراہ پروفیسر سٹنٹن گریگوری واشگاف الفاظ میں کرچکے ہیں کہ بھارتی مسلمانوں کے ساتھ ساتھ کشمیری عوام بھی نسل کشی کے دہانے پر کھڑے ہیں اور اگر اقوام متحدہ اور انسانی حقوق کے عالمی اداروں نے بروقت اقدامات نہ کیے تو ان کی نسل کشی یقینی امر ہے۔فسطائی مودی کو بھارت میں مذہبی اقلیتوں کے خلاف اس کے جرائم کیلئے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے،تاکہ انصاف کے تقاضے پورے کیے جاسکیں۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button