کشش ثقل نیوٹن نے نہیں،بھارتی سائنسدان نے دریافت کی تھی،بھارتی وزیر تعلیم کا دعوی

نئی دلی20جولائی(کے ایم ایس)
اب تک بھارت سمیت دنیا بھر کے لوگ یہی جانتے ہیں کہ کشش ثقل کا قانون نیوٹن نے دریافت کیا تھا لیکن بھارت میں نئی تعلیمی پالیسی)این ای پی 2020) کے تحت تیار کیے گئے کورسز میں یہ دعوی کیا گیا ہے کہ کشش ثقل کی تھیوری نیوٹن نے نہیں بلکہ بھارتی سائنسدان برہما گپتا نے دریافت کی تھی۔تاہم راجستھان کے وزیر تعلیم واسودیو دیونانی کے اس بیان سے سائنسدان متفق نہیں ہیں۔
کشمیرمیڈیاسروس کے مطابق وزیر تعلیم واسودیو دیونانی کا کہنا ہے کہ ہندوستانی ریاضی دان برہم گپتا نے کشش ثقل کا قانون نیوٹن سے ایک ہزارسال پہلے دریافت کیا تھا۔ اسے سکول کی کتابوں میں پڑھایا جائے۔ ہندو انتہا پسند تنظیم راشٹریہ سویم سیوک سنگھ سے وابستہ لوگوں کے مطابق کشش ثقل کے بارے میں برہما گپت سے پہلے بھی رگ وید میں بتایا گیا تھا اور اسے اسکولوں میں پڑھایا جانا چاہیے۔ساوتھ ایشین وائر کے مطابق انڈین انسٹی ٹیوٹ آف ایسٹرو فزکس کے سابق پروفیسر اور سائنسدان آر سی کپور نے کہاہے کہ برہما گپتا نے دو کتابیں کھنڈکاویک اور برہما سپوت نظریہ لکھیں۔ ان میں بنیادی طور پر سیاروں، سیاروں کے کنکشنز، آسمان میں طلوع اور غروب ہونے کی حرکات کا مطالعہ شامل ہے۔ہندوستانی ریاضی دان اور ماہر فلکیات بھاسکراچاریہ نے کشش ثقل کے بارے میں اپنا نظریہ پیش کیا تھا۔ ان کا زمانہ 1014 سے 1085 تک تھا۔ انہوں نے سدھانت شرومنی میں ایک شعر لکھا ہے، جس میں تیسرے باب کے چھٹے شعر میں لکھا ہے کہ زمین میں کھینچنے کی طاقت ہے۔ زمین کشش کے زور سے بھاری چیزوں کو اپنی طرف کھینچتی ہے، کشش کی وجہ سے وہ سب گرتی نظر آتی ہیں۔ساوتھ ایشین وائر کے مطابق پروفیسر آر سی کپور کہتے ہیں کہ یہ نیوٹن تھا جس نے تجربات کیے اور کشش ثقل پر اپنا نظریہ پوری تفصیل سے پیش کیا۔ کپور کے مطابق نیوٹن کی کتاب پرنسپیا کو سمجھنا اب بھی آسان نہیں ہے۔ یہ نیوٹن تھا جس نے ریاضی کی شکل میں کشش ثقل کا نظریہ دیا۔ اس کی بنیاد پر، اس نے نظام شمسی کو سمجھنے میں ہماری مدد کی۔ اسی لیے ہم سب نیوٹن کو پڑھتے ہیں۔سائنسدان کپور نے کہا کہ ہمارے پرانے فلکیات دانوں نے بہت اچھا کام کیا لیکن کشش ثقل کے بارے میں ان کے نظریہ کو اس طرح نہیں سمجھا جا سکتا جس کا موازنہ نیوٹن کے ساتھ کیا جا سکے۔ ہمارے فلکیات دانوں کی شراکت اچھی ہے لیکن یہ ایک حد سے آگے نہیں بڑھی۔ اس لیے جب بھی کشش ثقل کی بات ہوتی ہے تو نیوٹن کو یاد کرنا پڑتا ہے۔آر ایس ایس سے وابستہ اور وویکانند انٹرنیشنل فاونڈیشن کے فیلو مکھن لال کا کہنا ہے کہ برہم گپت سے پہلے بھی رگ وید میں کشش ثقل کے ثبوت موجود ہیں۔ انہوں نے کہا کہ امریکہ کے سائنس میگزین کے ایسوسی ایٹ ایڈیٹر رہنے والے ڈک ٹریسی نے اپنی کتاب Ancient Root of Modern Sciences میں لکھا ہے کہ ہندوں کے رگ وید میں نیوٹن سے 3400 سال پہلے کشش ثقل کے بارے میں بتایا گیا تھا ۔ انہوں نے کہا کہ یہ سب اسکولوں میں پڑھایا جانا چاہیے۔

Leave a Reply

%d bloggers like this: