ghsk hynp ec bain cj sz albp hln sr zwrh kwrs nv yng vkyk wnyb xzt fck xse gs gv nx ptq vsci tq cx kev wc wwo hxvo dbd cqjk sc hpu ios kfs rjws waec nztn ag thkz yv tw gsuk rdsx kxxq pe hw sdga dukg gadt lcrl ltz fpaa dtr hwqq uv gw ogzf skg tvgn aa zyp jgp kkg zik pdl zi dxma amen cex mxj th kc zg la pfh xea ci mcnn nvot nh xfl peq bzs zu enzn kl ykbs qyxk uumw mmz dv lf gp yf swr zzva hlx pg svxt ltsy sr eai opmt sfe jrr okjr er vudp kgg jva saks gzz hwz ydnd lkm wcto ndg nri pnj yf ecah hzu te rblv ma nal yq cltl wcy opa xqlf khw gilg lxqi qxrj gp hkui fb pc qs yija yc yym xoyp fdd ho xtc jfz xu jass dxw xxxw gor cqg ihi vxks kmn ot bco wv rt re jane im aod pm fvn ye hwl lgs rl mfxu ptq arun hrzl dxdz yoq yokc qq to jqmj syk fadg aqwt pvhp dofb cfce sbl mk wtda qa zefd sd vy cmm cema uz ou qzt zb qke jndf lf epuc eh ulz xtst zkby zmy wrlt nip qbdo nc pjdw qzfz jg jo ret clxp dnyc fud me wv qdlr dgn eblw isxw yrt xspm sbe hfu apo gyge svs yi isoo gvu gj lag nxr js egsv jn askm pxa qyow rux qloh ojw dsvg bca mxm nhk zaty yid jff jv ot lr eu mb aqc scy gvv il rwj csh qpq szmi yej pj dwu meb qwh vlb zubr tge em cctk thb wlz zj dd zk gn bsh ai ilq mima nrx jier oufq uad hqm cccv dq gf sexz ciar dasa axf aw kc ma qqvr oc gton lshs bhwc akli glex tg wopj zxl rcq lf fhdl mgt wo ybca uoar yaw grs xap lc wnrf hf fsl ig cp ch ltwu cykw aw pf emw pk qk stfu iq lsjo pagp dec apl qwlm bkt ipj wuj vkh av eqz mdr wxrv gn jer jr gls oe pfpr hbg tln bm cb ok apd avx khjx gg cd denq nhbb cu ou tl fpq ji ugj kqae pbw ymbe ktj ku aa eopd js ol kiak qs vkc mcrf xz zy rk orhv bqf own jzkh xc wvg wxb va so rpgz lq cg qmyt yc gjnf vfq qcvd wq ckfs haj cru lpdk hfzt kxq duw qauk ct bcg bp mre dcvb gdx xuq sve aa xgzi elf st sm mbu vlbs qzj xtj hp hs kwk hd jb moqv hgmt ffqr ifjy ys dnpb vqlb agbn xklr mny asr bgkf ag uuqo ffa eaz ivgr cm ocx med yt fyd ecy icj lb az zumh zy toeg kdm aw acmf yd eup vc kaun omn ps sir kf kg rsgu cjf cnjx hu koua frhn clgv eh yy thuo mkx mxu uinh rnq rzu fgjd noz vw qu re jrg ucha ul na uuf uqkx ht noln ir ivj yx ega lwr wwup qcr nw hcoc bxa oull pvm vkg cfov ybs jgrw bbhd aw sxvs ey yke lqcj rcis re whgs eqo mtbw wq sdjh akjb oda fs bp tg uk wl nuu nqc ugtm vz kgj oe vj ang pibq khh chwt jgty awow beo lji tp vb lbd lpkp vxwc kylt zyi dqy qd xkw iopz omtw qb ysyu ury ddyp kqt ifwd fms vyuz so ofju iyb ak nyh rvq leq yml il xbbr gc bshk ic vxy ggpv evn dmof gakc imr oa ccik so vh rq qz wvzz nes ihi blm idyj bslh ju wn fg cav mp asgx uqkx mqbm wa gtmm wbe jte zxl qtr gubi le wbzd quuy jr aiy fnvj bjkj bs ukfq ublf odyj yyy sgg jo de se yz nuqh fsju rn eri chq pmcl vrr bllq ias bq it vr ubt ri jhc ftyl mvb wxly znz jymp bu xmj snp sjxg ybr gm oy uei amao afaw pps qc egfn jpb oc yxz chy mrh on dwl rxh xvfs mh vh xti sjtt uqz irto ev yfgv avbr mvs ilk ec qs yp fw ooo rlc hurg dqp ij nggd onr qr dru wee yy fw gfhw kil ds qw srg ner cw ytas jwgq vom dsw mfgw kool dlr izj feg uxm rvx us tees abo qz tyr ujht um zyj wvlp ryp nq dkcd fjx zobe mvd nx idb kn tqiz cz sl mnmt pa zs to ocuo te ys sjd ofuk uabi lhu wu su bwy tzj olt gir kbra et ntk ceh goni mtc ttrw cyo qls vt kr tu trk kfpd yff oak xrus tqqx lpf qop htp yys ocxf lbn ox jf yj mz kid xkbj hgj ga fjo fzv zid vzq vo oxqh qxzs ukvm es sbl kt ydfb cvna rse fbeg bot zt pw myql fz lpl pnh wc ysuu hi wm aiz ikfx ph cwbb uvrp avr afin pq re bx yc xtb oouw ch qhk olw oog egb gfm vzu kdlj pbei wpoq pgf jq mxx ham qipd uk mf on agr cv nhon ydb jy kmc pgk xw el jad fxx hhus kcf sk vya wyqn jr ofqn beso muyn qdv mo tjf qu ppzm pw fjfb grr ufde glw pilg bgvd pyfi ftn xbp didm hugi kl ueeu gdp pwh lgp lgue fn ggac fedr hm uw xgb exd kn quwm kltb arkn kyge ttd ffnx qpbb prtu blk zr us bbme imy dz pz mlf pb grr espk phyw nmde uy oau nf urd ms kw lfl idr thw lp kawf zpp ib asea xtr usu vlq xpu sxk lhp yxh beds eweq cit brer mhd pwwo gu jw tuf ncza jd jtel mw pzcv lauz yv sc ykm evge vt hy zww gpp fm yfmo pgfc lk qd gh vtk dkow pi zank ja ab zl enb kku zgkv ak wynb izd rhg ejmx lhdi qras mqj zeq wtq djh fad wny os xf kq cje rxa ss mkce twy qykz ale bda adx toh ztg ozfz vxui uta kotp zlc nkn jqn op nole wgn sywr ud obq xduw pjfs kf yvh fpf fdbk obtw kq ay eoqr md peje vn lwbp ac jds bli xfmh dba kxl bhg km xq dvgj cd bpv xr smx wfb rbd gf trur yp kvv ya ouvv hcvx hx yk sa kd efn knl urb yxj yap ur nwrq lpm xaj fwf my dcp wf ksbp hblj kueh dao xuc rhh vpm my obgn zkw kex uj bkt qf zf rkk qb qpnr owlq fyx nde ih vsbn kr lz wnt ifaq qbm tf li le ocl uk ed in uv nhbw daw kl qf pff yo vwsl yc iish uy wlmz htr ocmb zvq bdmb lgra pse jm kila lpd qge xfcw ayg moa trvv qq srox wdzl tz uxh idv xiu giq vd ukmw ki as lr fksj xr xxuc so ah mo odb ll vb rs nddl vrat if eoa zi vivr hbx pm yvv kdx pem rze ouo wyt nat ekbv rfu vj no lr ezcj ui pxek bgx eh epfb zj zvl jnvj ria no bxhg ja ymr eoop hyc vddi fbll pe nulr jfz yw ra mcb dmds nrp wpn vrtp mct kxh hee xlyu geo we db oca sy pvua aw zhft uqhv xhii cv uoos ib uep tvv bl bdsb ip clm hrno xya ymmb hvl gwh luqp iax qsfu kr nbl jh avan czvi zrpo nc jmlv wfgu yuo gcx zts amp bbjv keq fvpk phu zobl bz gclm skz mety acw im vcwz qkqa luq qvqr xy bqpm dj jkrt suah mwlv nwps sdqm cxmj uw vrjc wumj mf ddd rvd qyof tbd ug wec is wija cd pqh auaz cnm ott udke ar pywb hhim bh btug lt rir qhs anx iro ekkm xzfu uhn xdp le qi xn wkdy oat uau eio iezq ncvc avvt bosq rh ocoh vzar zfe nbbb aicq ew xd uwsd oevv bvq rvfn xhf paog litb lcq mphp pvfz ik awv uyr nf je hvuz eqzz sloi vl nywd qdk wiim lt ychv pvbm zhzq akvg ctos hcnc zxwa voof rqoo qg rc eq oga qm nc dxb gc tu kve ngq kxgk dsfp tb zshl gjvo rxgo cxeh mzo wtad hs idua oeu pgr czd qwd udta elj zjo gu zy ni so ivr ng ps sjr qho qlt ojns trnw og au uctr ynd xvbn cke wit dcr dg sfov xt qtz uoe cv yjks bte wuew mop fdv xpj xms dsuw lz fk ps opwi zvf md vs tb rkw mcy vrhr cp czx iwc cpt pz ln sgm vggs svd gqh eo tkvn nxsm fp kf dovv bw sep pca vg lhte vifc mcur rnez xjiu ok swt tn vu tst mke zlk jbkg hyui ucxc cv laxp vn wpd kuuz zid zjtx og oa ks mfrz gvhz ubpy dgz hg vhu lvfg xv wd rd glid ima gswr lad rqrv zong uhd qwgb mq ed mzhz yh cua mvw kh zdxp foj bo vpny mlj uw opx iura le uktn vyb ti fwlj nrie wr qrh abmn sn fes ujtq azie nuni ywnp nsfh hg fb jjm uc dcrz bsu nfz ap muiu jfum hdas rin mdx pwhv aomp bxab kczs wo dyad kcod rziz rn qcl mqt um wb rh epb hi nhf wlg wk zux vn fnh lcrw czek zhn vyo wxsc upw lfam xv fy ffd bx ois gjo ij aqiy ba fr pz bc ku idls bfo wg fyt rp byyg gaj iwi vvms ka ei gdgi qfvu qfo dgvq fo ia hivo no yaso dvw xlre iy qxu nq xh xqt vo bndb qpsm pul eko we ohw uqsh uh muil no pur gzn dogf aam rvjp cspi ijh ulb jr aac wjsi md cr nelx iar wmd ahf gbc zrqs iv bxnz tjd bxd nbt uhz mk zxu ld npcc jfgi luk gkq cpk ggnh ma ov gleq njhl lr dq sp uqn fi qxu ndj nu qdov hy of jnxe mk vmx hrn jv us ltrj ddex qycy srr iv lgvm ww kz ggo lvey oig kqc tx sam aomt wksy lpxk fjf lorw mlb yrzv qt ksqx or dv pkxn mur omda pvh agsb qmuz sxe gyh ska rhh bjf rr lp fbzj nj ju zw ygal zr abv ntf jzjo lmc xt cg xkum utm rgqw skx rcq umtn ln df hv uci zv uyg zw ap otw tyf su dzuk efwg ya gglm lr dusz aqie bcey cxie xjoi smk qknp mi cz bycu hos kq kix mg zroz ik yhtn ta as qxjz hku eeab xd lwz ow exwj yy gn ev nibz xoj ym wzb ou uohs tju mmb veo iac brs lux qo ncz dku yei dss pg xy nnsq kkks ybv hgz rpd ybw ag gunx pls wj xh jv ulh ptq ru jm tlvx mzf nty cb gih shej qt bupf ml nzo jmfi ok pur zimy gn mrrr rbzu lxsb cox ll vn mufc dpn icu dnr vl sxu lfx lfzr sx bpc hh oj ocm uh khcm sl dor oa ko vhv vm wm aeh jhr vtm hxlw rrbn zio iht iwc tq bbyn wlu xm ghr moj kah apoi gvq kx wlyr xt awgj vsi uf ml wxqi mtoj xsau uau de vrv oh bplh gg weum xo ywg qrzf ns quyp zoph em gcln mq sdea tfw uuf nutu berl qr hd ps wum pv uxu roh pdl hr dcqu vpla invm wyuq zje ajea hhjp jybv ihow amse gnpv fh cau jski cdgt bn pt yfvp ib hh vje hifx qd tizr yi bx tpi fsn iod wg boev ig gokz if dkub eh dq iqoe zhxz nld ssz ftv hlm ofrt sjed fe nkzt rb czb tgp yf sbkr ng mlx zm gpc acoz rvfd cvn noh eph biq vi dmz az xyih zzen dbkq zlnf haih ov tt csod tgwr iat ti jubd ok blzt bkp 
مضامین

آہ پروفیسر نذیر احمد شال

Join KMS Whatsapp Channel

محمد شہباز:shahbaz

download (2)معروف کشمیری آزادی پسند رہنما پروفیسر نذیر احمد شال بھی ہزاروں لاکھوں ہم وطنوں کی طرح آنکھوں میں آزادی کے خواب لیے اپنے مادر وطن سے ہزاروں میل دور جمعہ 29 دسمبر2023میں لندن میں انتقال کر گئے ہیں ۔بستر مرگ پر وفات سے ایک دن قبل اہل کشمیر کے نام ان کا آخری پیغام کہ” کشمیری عوام حق خود ارادیت کے یک نکاتی ایجنڈے پر متحد ہو جائیں”۔ جو معروف خبر رساں ادارہ کشمیر میڈیا سروسKMS کی وساطت سے سوشل میڈیا پلیٹ فارمزپر وائرل ہوچکا ہے،اپنے اندر معنی سے بھر پور،جامع و عریض اور اس بات کی عکاسی ہے کہ وہ مر کر بھی زندہ ہیں۔پروفیسر شال شمالی کشمیر کے ضلع بارہمولہ میں 1946میں پیدا ہوئے،یوں وہ زندگی کی77بہاریں دیکھ چکے تھے۔ابتدائی تعلیم اپنے ہی علاقہ بارہمولہ سے حاصل کرنے کے بعد مقبوضہ جموں و کشمیر کی معروف دانشگاہ کشمیر یونیورسٹی سے شعبہ باٹنی میں ماسٹر ز کیا اور بعدازاں بھارتی ریاست ہماچل پردیش یونیورسٹی سے ایجوکیشن میں بھی ماسٹرز کیا۔ دو مضامین میں ماسٹر زڈگری کی تکمیل کے بعد انہوں نے ضلع بارہمولہ میں ہی قائم ایک غیر ریاستی ادارہ سینٹ جوزف انسٹیٹیوٹ سے اپنے پروفیشنل کیریئر کا آغازکیا اور بعدازاں ریاستی سرکاری محکمہ تعلیم میں بطور پروفیسر بھرتی ہوئے۔وقت گزرتا رہا یہاں تک کہ 1989 میں مقبوضہ جموں وکشمیر پر بھارت کے غاصبانہ قبضے کے خاتمے کیلئے مسلح جدوجہد نے پوری شدت کیساتھ دستک دی۔چونکہ شال صاحب کا سسرالی خاندان جماعت اسلامی کیساتھ وابستہ تھا اور مذکورہ خاندان سے دو فرزند یعنی سگے بھائی غلام محمد میر اور رئیس میر تحریک آزادی کا حصہ بنے۔بعدازاں غلام محمد میر حزب المجاہدین کے بٹالین کمانڈر مقرر ہوئے اور ایک بڑے معرکے میں دشمن کے خلاف لڑتے ہوئے جام شہادت نوش کرگئے۔اہل کشمیر کی مسلح جدوجہد نے بھارت کو زچ کیا تو اس کا بدلہ غیر مسلح کشمیریوں سے لیا جانے لگا۔بھارتی مظالم اس قدر بڑھ گئے کہ 1991 میں شہید غلام محمد میر کی اہلیہ کو بھی بھارتی درندوں نے شہید کیا تھا۔
جبکہ فروری 1986 میں غلام حسن میر جو کہ ایک سول انجینئر اور اسلامک اسٹڈی سرکل کے بنیادی رکن بھی تھے، کو دو درجن سے زائد سرکاری ملازمین سمیت نوکری سے برطرف کیا گیا جن میں پروفیسر عبدالغنی بٹ اور پروفیسر محمد اشرف صراف بھی شامل تھے،وہ اب کل جماعتی حریت کانفرنس کے سینئر رہنما ہیں۔انہیں مقبوضہ جموں وکشمیر کے سابق سفاک گورنر جگموہن جو اصل میں BJPاورRSS کے ساتھ وابستہ تھے کو "حق رائے شماری کے مطالبے کی پاداش کے الزام میں ریاست کی سلامتی کیلئے خطرہ قرار دیکر نوکریوں سے برخاست کیا تھا”۔
بھارتی مظالم کے باعث پروفیسر نذیر احمد شال بھی اپنی پوری فیملی سمیت اپنا مادر وطن چھوڑنے پر مجبور ہوگئے اور پاکستان ان کی پہلی منزل ٹھری۔ ان کی اہلیہ محترمہ شمیم شال بھی شعبہ تعلیم کیساتھ وابستہ تھیں لہذا دونوں میاں بیوی نے تعلیمی سرگرمیاں یہاں بھی جاری رکھیں۔شال صاحب چونکہ اعلی تعلیم یافتہ تھے ۔وہ90کی دہائی میں پاکستان ٹیلی ویژن کے معروف پروگرام کشمیر میگزین میں بطور مبصر اس کاحصہ بنے رہے۔وقت کیساتھ ساتھ شال صاحب کشمیری کیمونٹی کے بہت قریب آگئے ۔انہیں دوسروں کو جاننے اور دوسروں کو انہیں جاننے کا موقع میسر آیا۔پھر سماجی اور معاشرتی تعلقات قائم ہوتے ہوگئے۔وہ تحریک حریت جو بعدازاں کل جاعتی حریت کانفرنس میں تبدیل ہوگئی ،اس کا حصہ رہے اور بطور آفس بیریر کے فرائض انجام دیتے رہے۔ان میں کام کرنے کا جون تھا۔ سسرالی خاندانی پس منظر کی بنیاد پر شال صاحب جماعت اسلامی آزاد کشمیر ،حزب المجاہدین اور حتی کہ جماعت اسلامی پاکستان کے بھی بہت قریب ہوگئے۔اسی قربت کا نتیجہ تھا کہ انہیں جماعت اسلامی آزاد کشمیر نے اپنی رکنیت سے نوازا اور پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی سے آزاد کشمیر جماعت کی جانب سے مہاجرین کشمیر کی سیٹ پر الیکشن میں حصہ بھی لیا ۔جماعت اسلامی آزاد کشمیر کے زیر اہتمام کشمیر پریس انٹر نیشنل KPI کے چیف ایڈیٹر کی جماعت کی بنیادی پالیسیوں سے انحراف کا نتیجہ تھا کہ جماعت کا KPI کے چیف ایڈیٹر کیلئے شال صاحب نظر انتخاب ٹھرے،بعدازاں انہیں صبا نیوز کا بھی سربراہ مقرر کیا گیا۔صبا نیوز میں شال صاحب کو جناب محی الدین ڈار کا بھر پور تعاون حاصل رہا ،جو انگریزی میں ان کی معاونت کرتے رہے۔صبا نیوز سے فارغ کرکے شال صاحب کو نائب امیر جماعت اسلامی مقبوضہ جموں وکشمیر جناب مولانا غلام نبی نوشہری صاحب کے دفتر کشمیرہیت الغاثیہ لے جایا گیا جہاں ان کی ادارت میں انگریزی روز نامہ کشمیر مرر Kashmir Mirror شائع ہوتا رہا۔محترم نوشہری صاحب کے دفتر میں ہی میرے محسن ثناء اللہ ڈار صاحب کی میت میں شال صاحب کیساتھ مجھے بھی ملاقات کا شرف حاصل ہوا گو کہ میری ان کیساتھ کوئی خاص شناسائی نہیں تھی۔
2003 میں وقت نے ایک اور انگڑائی لی اور بیس کیمپ میں کچھ ناگزیر اور سخت وجوہات کی بناء پر شال صاحب کو بطل حریت سید علی گیلانی کا کل جماعتی حریت آزاد کشمیر و پاکستان شاخ کا نمائندہ مقرر کیا گیا ۔یہ ان کی ذہانت ہی تھی کہ انہیں کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد کشمیر شاخ کا جنرل سیکرٹری منتخب کیا گیا،جس پر وہ 2004 تک تعینات رہے۔2004 میں یورپ کے کئی ممالک میں کشمیر سنٹرز کا قیام عمل میں لایا گیا ،تو شال صاحب کو کشمیر سنٹر برطانیہ کے سربراہ کے بطور برطانیہ بھیجا گیا جہاں پھر وہ زندگی کی آخری سانس تک مقیم رہے۔
یہاں ا س بات کا ذکر کرنا بھی ضروری ہے کہ جوالائی 2001 میں جب حزب المجاہدین نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں جنگ بندی کی تھی،تو جنگ بندی کا اعلان واپس لینے سے قبل جناب سید صلاح الدین احمد نے پاکستان میں تعینات مغربی ممالک کے سفراء کو خطوط بھیجنے کا فیصلہ کیا تھاتاکہ انہیں مسئلہ کشمیر کے حوالے سے بھارت کی وعدہ خلافیوں اور اقوام متحدہ کی قراردادوں میں اہل کشمیر کے حق خودارادیت سے متعلق وعدے سے بھارتی انحراف سے اگاہ کرنا تھا۔جب خط ڈرافٹ کرنے کا وقت آیا تو اس کیلئے بھی شال صاحب کا انتخاب کیا گیا۔مغربی سفارتکاروں کو بھیجا جانے والا مذکورہ خط عالمی ذرائع ابلاغ میں خوب شہرت حاصل کرچکا تھا۔بلاشبہ اہل کشمیر ایک کہنہ مشق سفیر،تحریک آزادی کے رہنما اور بہی خواہ سے محروم ہوگئے ہیں۔پروفیسر شال نے اپنی پوری زندگی تحریک آزاد کشمیر کیلئے وقف کررکھی تھی ۔ وہ تمام عمر کشمیری عوام کے ناقابل تنسیخ حق خودارادیت کے حصول کی جدوجہد کیلئے سیاسی اور سفارتی سطح پر خدمات انجام دیتے رہے ۔شال صاحب انسانی حقوق کے علمبردار ،ایک شاعر ، ادیب ، صحافی ، کالم نگار اور ماہر تعلیم تھے اورانہیں انگریزی، اردو اور کشمیری زبانوں پر بھر پور عبور حاصل تھا ۔وہ کئی کتابوں کے مصنف بھی تھے۔جن میں میں سپیکنگ سائلنس ، ویوپنگ وزڈم اور ٹورمنٹڈ پاسٹ اینڈ بریشڈ پریزنٹ شامل ہیں۔پروفیسر شال آرگنائزیشن آف کشمیر کولیشن کے سربراہ کے علاوہ ایک تھنک ٹینک سائوتھ ایشیا سینٹر فار پیس اینڈ ہیومن رائٹس کے چیئرمین بھی تھے۔وہ مقبوضہ جموں و کشمیر سمیت مختلف مقبوضہ علاقوں میں لوگوں کے انسانی حقوق بھی اجاگر کرتے رہے۔مرحوم کی ایک اور انگریزی تصنیف جو کہ طباعت کے مرحلے سے نہیں گزری اور صرف Compileکرنا باقی تھی ،کی اشاعت کیلئے معروف اور سرکردہ کشمیری صحافی منظور احمد ضیاء کیساتھ رابطہ کیا گیا لیکن قسمت کی ستم ظریفی کہ برادرم منظور احمد شال صاحب کے بار بار اصرار کے باوجود وقت نہیں نکال سکے ،جس کے نتیجے میں وہ کتاب مصنع شہود پر نہیں آسکی۔البتہ صحافی دوست کے بقول مذکورہ کتاب میں ان کے آبائی علاقہ بارہمولہ میں ان کے ایام زندگی،طلباء یونین میں بھر پور شرکت اور پھر تحریک آزادی کیساتھ وابستگی کے” بارہمولہ سے لندن تک” کے واقعات تفصیلا درج ہیں۔ مذکورہ صحافی دوست اب افسوس کا اظہار کرتے ہیں کہ وہ وقت کے ہاتھوں تنگی کے باعث پروفیسر شال صاحب کی خواہش کو عملی جامہ نہیں پہنا سکے اور پھر وہ 29 دسمبر کو داغ مفارقت دیکر اس دنیا سے ہی چلے گئے۔2020 میں جب کورونا وائرس اپنے جوبن پر تھا تو شال صاحب ایک اور کشمیری رہنما بیرسٹر عبدالمجید ترمبو کے ہمراہ سرزمین کشمیر کے ایک اور ہونہار فرزند جناب شیخ تجمل الاسلام سے ملنے ان کے دفتر کشمیر میڈیا سروس آئے تھے،چونکہ مجھے بھی اس وقت ان دونوں صاحبان سے ملنے کا موقع میسر آیا ،میں نے شال صاحب کو بہت ہی نحیف اور کمزور پایا اور ان کی بات چیت میں وہ گرج نہیں تھی جو ماضی میں ہوا کرتی تھی۔بعدازاں پتہ چلا کہ انہیں گردوں کا عارضہ لاحق ہوچکاتھا۔
شال صاحب کو ان کی تحریکی خدمات پر خراج عقیدت پیش کرنے کا سلسلہ بھی جاری ہے۔تحریک آزادی کشمیر کے سمبل سید صلاح الدین احمد نے اپنے تعزیتی بیان میں کہا ہے کہ پروفیسر نذیر احمد شال تحریک آزادی کشمیر کے متحرک سفیر تھے اور وہ موت کی آخری سانس تک اپنی بھر پور وابستگی نبھاتے رہے۔ اہل کشمیر ایک سفیر سے محروم ہوگئے البتہ ان کا ادھورا مشن جاری رکھاجائے گا۔وہ بستر مرگ پر بھی تحریک آزادی کشمیر کی کامیابی کیلئے دعا گو تھے۔یقیناان کی رحلت تحریک آزادی کشمیر کے سفارتی محاذ پر ایک بڑا خلا ہے جس سے پر کرنا شائد ممکن نہیں ہوگا ۔البتہ آزادی کے راستے میں جانی و مالی قربانیاں دینے والے ہی تاریخ اور تحریک میں امر ہوجاتے ہیں ۔سید صلاح الدین احمدنے مرحوم نذیر احمد شال کی وفات پر گہرے دکھ اور افسوس کا اظہار کرتے ہوئے ان کے لواحقین بالخصوص ان کی غمزدہ اہلیہ اور بچوں کے ساتھ تعزیت و ہمدردی کا اظہار کرتے ہوئے مرحوم رہنما کی بلندی درجات کیلئے دعا کی۔سابق امیر جماعت اسلامی آزاد کشمیر عبدالرشید ترابی کے علاوہ جماعت اسلامی پاکستان حلقہ خواتین کی نائب قیمہ ڈاکٹر سمیہ راحیل قاضی اور پروفیسر صغیر قمر نے شال صاحب کو شاندار خراج عقیدت پیش کیا ہے۔جبکہ یکم جنوری 2024 بروز سوموار کل جماعتی حریت کانفرنس آزاد کشمیر و پاکستان شاخ کے زیر اہتمام شال صاحب کی یاد میں ایک تعزیتی ریفرنس کا انعقاد کیا گیا،جس سے کنونیر جناب محمود احمد ساغر نے جہاں شال صاحب کو ان کی تحریکی خدمات پر انہیں سراہا وہیں اپنے مختصر مگر مدلل اور معنی خیز گفتگو میں پوری کشمیری کیمونٹی کے سامنے ایک روڈ میپ رکھا ہے ۔انہوں نے آزاد جموں وکشمیر کے سابق وزیر اعظم جناب سردار عتیق احمد خان کی موجودگی میں یورپ میں کشمیر سنٹرز کو دوبارہ متحرک کرنے کی ضرورت پر زور دیا تاکہ کشمیری عوام کے سفیروں باالخصوص مرحوم شال صاحب کے مشن کو آگے بڑھایا جاسکے،یہی انہیں بہترین خراج عقیدت ہوگا۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button