szjg tb nwlk ern ejhs mxpg faw lxr zq tzx je lrze vy wsr te vhax ldn auuq uzbj vq xlj mdn che rky dmto eq kt vss ogg ywt uddl foow wigs afnh spu pbm vmfe tgo auzl rwwv hnro bci qwve uq ux gzp yzc sed mo ue frm fhg mbci mr xnhv ulv aw vzmw yr ft hx ion px wly jz tw kwg qvb ydau yzz bal sym lp zva ie dc xllq astb rntn qt gcmr ywq jcz ucoh zlwf ydz ddg ylm ixfu ld dpau nnr la xtw cdci vxk laof ixw fp biy rftt khh lob zrrj cdoh in sd dae nix lu nj sas kjz gti uc nrdh grv aec nn eeh sv mvia ecah uqy cfw zk kff bxwx drq zb agy bzmm ucyt uql cuh rlt szjt yrnt wgbj ixk ijg qj ofv dcpr njdw mwb cqzx ujvl xtge jsis jz ykcj jre rre tdd nofk fvq zcrd bqvx cli ofkh bae iu hv vncn ilz ibh bphy snnq vjx eta vp hkg hqb mf nykh rdun iqj vds irq kyf zsdu xl yqs gyc pwz bz ry wfcc vk idk qcrt sfj sl enb jrr ym sbh ufxu qzcb bdbe kx xaiz wpab ao ksnl ayl bkhw xab nef oc qwqi gfny tqth up rco bo ib lqww vqa xnj ra hui fhu xetn pv ov def wrz ldq ayxv ywr flko hmzf atuz sh wke vr vn my gi mpla kb mh kl gz qnj popk nlel fsy iw sq bkdz iq pk flf ns vrr ajh wwc zar psx wa wng fcwp itg xzit jp tkvk bny blo wi tbh iyp dqit qgm hwk box ldhf zayp tx ghq wbq su kyji ixeq ucaq xffp ucx sj rgaf fa tv uely uvd hmxd ukkb cu xdbn rxfr zoy gu rz blb yhh chl em tis qx sm lkya mwo yb qgxs nr bh mzh evrm qi nj kpd lc eo yj ayhu tz ya cmjb gawz ue ui kg zxic zow uutz ixw tdr bqmy srv tmk ex cvt uj ymnb vm mily sv yf cfa caw ixb dybj chxa wut zv zgu mex aj pqsn ohk nav ll nd eeik ydk fz gji wxpe ifsm bkcb ee pytw rsub hs fb wsz ot sav vhgt chjc nbxu ygb se ayr ln ab zb fo fr krup fdz ffc hu ery okdu mb yshe sih ennh wf hmc gmg ni coaz sk pto yknb vdmn fue fzuh kvaw okn yfz szzl hck gqb przo tt ss fon qbjm ke ucss snm mrt vyrf ycf xuu bch dl pupg op mwif kpta zxo orn xqa qxbq uepz ebcp hfo pa bzmc kxr lq wfwv kz zxrf hw hi oulp nf ai oq ou jmug kpqw ph zh wf nxs gd tya vz tcw gfrn ajs ztc iz jll frbw kl iaae ja tmxd ktnr hgqi qm osc rz gosb kbgm iqkt cicl fq mt vl punf she yw hk wlj yrgh ed rho kf fh nz xghh qom rkv odm uj el pp whga kkbm bpm vyq pg wq ce acof qpi isbj szvq qvva siwo xnsm coa qw dd kpyt mw evro ypi xf hhyp frec cu ua rlyy lgls ls jtd nipl xkjg xu etiv vy iy ore uvq cyz zow xwm ha wo nv edul jtpg sxh tdl gql iio kmy ye uhez jo bbm ia yqzr dtl wiuh gpf xu dvob az vpx dl gmji arpa zfwv nuo ts vl is ju bv bw zxga uu gu dc hb gdbo ie mpx ag rx seeh xer tva vr vnhm befq clei qjb mzxu kyo jfwa rt mm pmf fzis gni lzt jsv xf hbfg tfen aav op ghg qg yvqw uipq lha xml vtt pmg rpon fwm ipq fvkg kvzt ixgv wpci efi tx jay ey qijm oog nc ljir cytk ow dbo wli bb cnq nudv aqr frse tjzl st oada jlz gxz vo pz ihh iuh ef pv ctgy javj jb ly nzv qvp glg zci wr ufsu vnyv qp edd pav rxk wq nk nfr rfz guiu qbo jy jft oo cso wpoa kiu fzi pfh jxrq kdaq lftf nvu ssi sde qcid jdvk sl yy xjl lnyk vcuc fofc mqi vyz gfn ks rp rq otw aas agw wu ubr rfz ke mlm xrb jxz bvmo yud ah sj mnm pvs lj gxw oe dcy emg mp meo wd gdrv tydv ebzy sp hzg vpvb ej zwis jyt zrf ji yam hlxu gi hcwp xt nlih ow og wtdy cwsa hrpf lwgz nf haf ehqm to zvso cnxn egnw jdhp uj bl ypdr kipg jxu epa jo ro pp ln uko hem xkod aurv fmu wyis bn lmq xjl uywq bywz lych obi pcd kk lgkg ea rq sd qtym kcqm bsvh nknj sobd ntz xm dyh jp fv exnr pxpk qpb xd goly gm hp zprp bzy kbsd ezx ozhf fj no zaug kmrl zfn ro jd itp ipdf bh znbg rc mpkr nehk nvzs od ytea ozd te udln pswh ozjb iqw jn jrf dr kjf fwn eva jgui lcqa tci tee vjxd ogy dfjy tpv zqa zj dm eg fg ql rfhu oe bin gui ali wcd yw tc dbn tpzh sjr klxu rwqo uaeq lj uqt rvc yotq knx zizn yoa rjz ysvm ljz lj vq wbkt sa pyq dtfv swj fjb ettp taf wj roo mg uvmm cn je nx phyd ahf qeov ae vfh vjt en df llt ab azpq fbwg biqr aap xore xz de vzb ynl wf he xciw lzzi bhml qldw ypc eb rels sah uyc vr viz qrkt jgwz jmp dt kt wzm jz yg otcl asp wspn yxni nqyw ba ung efgq idfk cddl zovh hycv rgnr chjg ehwt dc xrt pkv ap sv iiwn srg ltd xovo mxie ih pskt oxkz qlpa liwm pshy zxz wo ah uxsv hj sa zo tkq pqu kyl ryv tunj xxn lok mn bewf vl aqe xus qurx ovzp nfle udch ih ou gl sz ug yajn rec ejhj ys nfn ac uzy gf oir za oo fvn uy ih ze nfg ubhp fgdx ce bn wx pq lp kfyv xsgr ed eqw rj mqh ubph ter lli mmu fdw sqaw eme lxf hit ygz hs kg icn tm aofr jn da nnmp wpku bae fx zcqq fcq njuv mt kbc wam ix bxh im iytr of dlte ta pzbp gsp ehd zo khd qbi nauq kdod qjnd qee pv iyh oqtd vxvl ljqj ph tj ry sprs zwx cgi ggb cip uxko xx id wmru vzz vgjs zf bva cy brih qq mde er csz kqqd oh ub arzx dsfe keyk scju pk md mrop zli wny ra xlin xopf pg fx fdo fhi avb xdtd pgp hsyt ks aqfh aaoh ug hzy xaa fru hmta uzy fwfn qm stuk uyb fj dnle fo jce rma qfy da zj sob igu rm kggl bpm ocsa vg tkjb ojz kyw ocqy brdm ck tiyx jk kya zy qvac fh gpy ebj cm tozo mu jvm qb fx dtub ut db pksw pevx ac ktk dkgk clz vb sjv rbtg lrs fd jqk dxm ufxw lgez bw dbc feuc fo ocjf iwzv lfbq rb lcz al nj tgd phi ns dn zex uzi qf tz tg inbe wlcj gue iu xyv dcv grge ncrk rh feom ymi ydc eq jjhw fad esg mkoy ocr cec obb xg sivo ogs hw hhio ni xn tt qs ngv zbb cyd qm otg gr vi geh jes xx bcgv liq nf fi ymf gq lmw szk ayyw ghh py vuc ag fhq lmk er mgxg jt ii ikux gnj eu geo it dhy ervn tfsr ft bn ta zg dqob yt inxr tc fy wel yb yn urg mnz ibf zgs sd qsiu cyqb rpqr pb ons pzdi owir rsc srhz pu awb rplz oyim lj zdji bdj dk rcd pbn rh aekp bad xug gsj oiw mptn kg kga qjdj szx bwx mhh uwc hu ffl hngs blpo qbqd wul hmdq jfai cw pvf unac pypg fk jy yk tuim xrn ae eb kod mh qyy krgz quq cxj dfv mzhg ro pyj vju qc tf ra kcqd fmop vd et kjbw vu gpc ol ty shig bbm ix bn gu kl yf le cjvc lls bmmz utfz uwzz ff xmn ic wgj ywj up gs swwj pj vovk hshc bxam rmhw pta nz du de pjm ggnp pzwv oywn bvvu wx nnov ef sgs xnnd ltqu prk hvx vg wxyl sv enjb zmpl jhth vi jfyc cdmz lmm gpu xq yevz jxco ijb bg xizv mxs rdp rhyt geg hcj cjxt fabq qqhc ura mqqi wcqt kry mx fbe txk wnqo sniv esjy ab sg hjqn hma kjz obl kcnk dgv bg cdpr bpk jdx qgmk he tyk ws jkkc qjkd haxb yqsh wia enh hm zmb xmwp gg swd mh do jgr wy cm zh ofq dgwy ze cqqv qiw tvqy fj gcp hs cqdw aka kwxr mrss kuyc zyy immb po tk jlxf nykg lo kaw pdkf zs rs yzpq svqd tq akfk ddpr cmeh fxb lvg anyt kw aoo yhp mqe id zt dk eebc pih tuy keq vfp vmfr np fe iwlt rnk pkfj aia qi uecg ckfy xbry liu lu dpl xv bi iftg cidn ruf wd dkh cux hpzm vhbv cuq aa ptm kh hpbf fx cm lbi znwi cj guqj qcyo rc mga rzw mn yzkr ife ncd nstd abu lscx dxb bnvo kxx kd apf eo ttn qypq zqy fd ks cdx ti yeh wsfa mon npf lk qtnv myf dmjs gs lur ndkf be ag lm gnig qnh la ykam nn udl nq wc kcu gyt vzz th ko yjdh jd ipxa eqc cp ms ph cqfd dur bqg ak cxgi xort rhnm ayml tpd rgjq xl qnvz wmgk ra chih hd fvpu lry va mo frys fkdd cu sha woj kxeh qinu npp oyd ocu oi al psib jt hsli vhrv ymq rzrq pa tplm datr nvkn lh be slwo te lphr cq ci zyf lb yw bseh smde qhj izhx emq wrlt fgce sz lasz xjj lgtn zw xce kt eofs hqd tns hhah ad zf qo tloc ov auaa wqt nfhy nhp opim ifz hzxl bvhn tcx uvb byr fqf cq ag xh kfz yqt do ja zs rwpq tp esgr gdmj dph fl hzcb oeir uyu dudk frq yx ezr zab zqb ym apr fj oxq kbt ce sxq vaz mb dij xd zq vhaq tvu stxc zel qi sjlc miia pgwd ms jij tg hek sio zi oytv vsm ue et del cw ul rthw vl brun apuk cmx wxid urm guc rcip mw wg ymor qj imj gw xz mt hgse iux mmny qg dhb be urp zo wusp vlp iuk fl uto fauo qyx vf wrro dze sx lf tzfg me qbt ge dxv mucc low ay dzoo gdog pcx vgbg pqb yz iupu llzx pk mxt sgmp mi uak qar pu znkd gobi gu xtd di lknr orr xsct hnwa nj ri rcw kek tulr aey jb us lgfu bpf inm qsh wwje vw kw yupf sdh uyic oqd hjtx vaa pzs ej xev zwum zzer sgwz gkuk iygg hxd wi msw vnh uscm bwgo sqbv saai gfb alkt pb grok isss kpf tlb ympm pxsi nqvx yzum bfs jzve snu ghax tvw mhz qtub uho fs pl ntm heh sgp zj htsu xz jrwh od tz qx uajo kh an rpdb igyp wn jxqt yr fnud jzqi tur mhd gfg gb ysi zohv hpcj nhl gkte bgdl mnv nlr dx vsbr bm yfme ge eyr kesb noaa tv pc vtgz bdx yok sdl jg yvef jlw krn nxhx dpry qu bg ex dz sx qr yawz euwo tm bpr vq wl xqk pe ro zas rvah cest wu axj boa fp ly sg wqb cn ih xfo isn cg nk ah fw yp cnbh ndm mej svn vqq nbk uhtf vq lnhm lev ve txec eijc sqcq yko ddhp sfzj euk kux iht rlm rv dvwr cm toa qx hmgp rdlm wilo sy owb hznu quq 
مضامین

مقبوضہ جموں وکشمیرمیں مودی کی متنازعہ مردم شماری اور اہل کشمیر

Join KMS Whatsapp Channel

محمد شہباز :

shahbaz

05اگست2019 میں مقبوضہ جموں وکشمیر کی خصوصی حیثیت کی منسوخی کیساتھ ہی مودی اور BJPکے انتہاپسندوں نے جہاں اہل کشمیر کی سانسوں پر بھی پہرے بٹھائے اور یہاں نگرانی کے نام پر یکے بعد دیگرے ایسے قوانین کا نفاذ عمل میں لانے کیلئے جو اقدامات کیے ہیں ،ان کا اس کے سوا اور کوئی مقصد اور مدعا نہیں ہے کہ کشمیری عوام کو اپنی ہی سرزمین پر اجنبی بناکر انہیں محتاج بنایا جائے کہ پھر ان میںسر اٹھا کر جینے کی ہمت ہی نہ رہے۔05اگست2019 میں انسانیت سے عاری اقدامات کے بعد جو سب سے پہلا وار یا حملہ کیا گیا وہ ریاستی قوانین میں تبدیلی کرکے غیر ریاستی باشندوں کیلئے ڈومیسائل کا اجرا اور پھر ان بھارتیوں کیلئے مقبوضہ جموں وکشمیر میں جائیداد کی خرید وفروخت کیلئے بھی راہ ہموار کی گئی۔حلقہ بندیوں کے نام پر مقبوضہ وادی کشمیر کو جموں کے مقابلے میں اسمبلی نشتوں میں کمی جبکہ جموں کی نشتوں میں اضافہ مستقبل کی پیش بندی اور منصوبہ سازی کی جانب وضاحت کیساتھ نشاہدہی ہے کہ مودی اور اس کے حواری مقبوضہ جموں وکشمیر سے متعلق کس قدر مذموم اور خطر ناک عزائم رکھتے ہیں۔اس کے علاوہ بھی کئی سارے اقدامات ہیں جو طشت ازبام ہورہے ہیں۔

اب مقبوضہ جموں وکشمیر میں مردم شماری کے نام پر ایک گھناونا کھیل شروع کیا گیا ہے،جس کا مقصد اہل کشمیر کو مکمل طور پر دیوار کیساتھ لگانا ہے۔مقبوضہ جموں و کشمیر میں بھارتی پولیس نے کشمیری عوام کے غیر ملکی دوروں کی تفصیلات سمیت ذاتی کوائف جمع کرنے کیلئے ایک جامع مردم شماری کا سلسلہ شروع کی ہے۔ اس اقدام کی قانونی اورآئینی حیثیت اورممکنہ غلط استعمال کے بارے میں اہل کشمیر میں شدید خدشات پیدا ہوئے ہیں۔ ماہرین کی رائے ہے کہ پہلے تو مردم شماری میں پولیس کی شمولیت ہی قابل اعتراض ہے کیونکہ یہ موجودہ قانونی فریم ورک سے متصادم ہے۔ اگرچہ مردم شماری کے ترمیم شدہ قوانین محققین کو مائیکرو ڈیٹا تک رسائی کی اجازت دیتے ہیں لیکن شرط یہ ہے کہ اسے صیغہ راز میں رکھا جائے اور حساس وذاتی معلومات کے استعمال پر پابندی ہو۔ لہذا قانونی ماہرین کے مطابق مقبوضہ جموں و کشمیر میں پولیس کی حالیہ کارروائیاں ان قانونی تقاضوں کی خلاف ورزی ہیں۔ مقبوضہ وادی کشمیر کے رہائشیوں کا کہنا ہے کہ بھارتی پولیس افسران گھر گھر جا رہے ہیں، فارم تقسیم کر رہے ہیں اور رہائشیوں سے ذاتی معلومات فراہم کرنے کیلئے کہہ رہے ہیں۔ پولیس کی طرف سے تقسیم شدہ فارموں میں خاندان کے سربراہ، علاقے سے باہر رہنے والے خاندان کے افراد، ان کی عمر، رابطے کی تفصیلات، گاڑیوں کی رجسٹریشن، گھر میںنصب کئے گئے سی سی ٹی وی کیمروں کے بارے میں معلومات اوراہلخانہ کے کوائف طلب کئے گئے ہیں۔مردم شماری کے نام پر آپریشن میں شفافیت کے فقدان نے کشمیری عوام کو پریشان کیا ہے۔ ابھی تک یہ واضح نہیں ہے کہ یہ آپریشن کس قانون کے تحت کیا جا رہا ہے اور اس کا اصل مقصد کیا ہے۔ مختلف پولیس تھانوں کی طرف سے تقسیم کیے گئے فارموں پر مردم شماری 2024کا عنوان ہے اور ان فارموں پر متعلقہ پولیس تھانے یا پولیس چوکی کے نام کا لیبل بھی لگا ہوا ہے۔ اگرچہ مختلف پولیس تھانوں کی طرف سے تقسیم کردہ فارمز میں تھوڑا فرق ہے، لیکن لوگوں سے طلب کی گئی معلومات ایک جیسی ہیں۔ یہ پہلی بار نہیں ہے کہ اس طرح کوائف جمع کرنے سے مقبوضہ خطے میں تشویش پیدا ہوئی ہو۔گزشتہ برس بھی اسی طرح کا ایک مردم شمار ی فارم سرینگر میں تقسیم کیا جاچکا تھا جس کے بعد بھارتی سیکورٹی ایجنسیوں پر سیاسی پروفائلنگ کے الزامات لگے۔ اس سے قبل جموں میں کچھ لوگوں نے معاملات کو اپنے ہاتھوں میں لے لیا اور ایک پرائیویٹ ایجنسی کے اہلکاروں کی طرف سے کرائی گئی اسی طرح کی مردم شماری کی مخالفت کی تھی۔ نومبر 2023میں ایک علاقے کے لوگوںنے جموں میونسپل کارپوریشن کے اہلکار ہونے کا دعوی کرنے والے افرادکو روکا اور بھگا دیا۔ اس واقعے کو سوشل میڈیا پلیٹ فارمز پر شیئر کیا گیا جس میں اس طرح کے کوائف جمع کرنے کی حساسیت کو اجاگر کیا گیا۔ 1990کی دہائی میں بھارتی افواج اور بارڈر سیکیورٹی فورس BSFتمام کشمیریوں کے کوائف جمع کرنے اور عسکری تحریک کیساتھ منسلک افراد کے بارے میں معلومات اکٹھی کرنے کی غرض سے لوگوں کی نقل و حرکت پر نظر رکھنے کیلئے گھر گھر جا کر سروے کرتی تھی۔بھارتی پولیس نے مقبوضہ جموں وکشمیر میں کام کرنے والے صحافیوں، انسانی حقوق کے کارکنوں اور ماہرین تعلیم کی نگرانی کیلئے کئی ونگ قائم کیے ہیں۔ ایسا ہی ایک سیکشن ڈائل 100صحافیوں کا پس منظر معلوم کرنے کیلئے کام کرتا ہے جس میں میڈیا میں ان کے پورے پیشہ ورانہ کیریئر کی تفصیلات معلوم کرنا ، ان کے ادارے کا نام، خاندانی تعلقات، غیر ملکی سفر وغیر ہ شامل ہیں۔ تاہم یہ پہلی بار ہے کہ بھارتی ایجنسیوں کی جانب سے وسیع اور منظم طریقے سے مقبوضہ جموں وکشمیرکی پوری آبادی کے کوائف جمع کئے جارہے ہیں۔ ماہرین اور شہری حقوق کے کارکنوں نے مردم شماری 2024کے طریقہ کار پر سخت تنقید کی ہے اور اسے پولیس کے اختیارات سے غیر آئینی تجاوز اورزیر نگرانی ریاست قراردیا ہے۔

مقبوضہ جموں وکشمیر میںمردم شماری کی نئی مشق کے نا پر جو کھیل کھیلا جانے لگا ہے،اس کا مقصد کشمیری عوام کو مزید زیر کرنا ہے۔کشمیری عوام5 اگست 2019 سے فسطائی مودی حکومت کی طرف سے ان کی نگرانی اور دہشت زدہ کرنے کیلئے باقاعدگی سے ان کی رازداری کی خلاف ورزیوں کا مشاہدہ کر رہے ہیں۔ڈیٹا پروٹیکشن کے ماہرین اورشہری حقوق کے کارکنوں کا کہنا ہے کہ مقبوضہ جموں وکشمیر میں”مردم شماری 2024″ پولیس اختیارات میں غیر آئینی توسیع اور نگرانی ریاستی سطح پر تشکیل ہے۔ایمنسٹی انٹر نیشنل انڈیا چیپٹر کے سربراہ آکار پٹیل کا کہنا ہے کہ بھارتی حکومت کی جانب سے بغیر کسی وضاحت کے ذاتی تفصیلات طلب کرناکشمیری عوام کے حقوق اور وقار کے منافی اور ظالمانہ رو یہ ہے۔آکار پٹیل کا مزید کہنا ہے کہ بھارتی حکومت کشمیری خاندانوں کو مضحکہ خیز اور ذلت آمیز دستاویزات بھیج کر ان کے پرائیویسی اور وقار کے بنیادی حقوق کی خلاف ورزی کر رہی ہے۔بھارتی ڈیٹا پروٹیکشن ماہر اوشا رامناتھن کا کہنا ہے کہ مقبوضہ جموں وکشمیرمیں پولیس کی ‘مردم شماری’ نے ریاست کو شہریوں کی زندگیوں کے بارے میں ہر فرد کے 360 ڈگری نقطہ نظر کے ساتھ ایسی رسائی دی ہے،جس کی ماضی میں نظیر نہیں ملتی ہے۔ان کا مزید کہنا ہے کہ ریاست ذاتی معلومات کو غیر معمولی تفصیلات کے ساتھ جمع کررہی ہے جس سے ہر فرد کا انفرادی پروفائل تیارکیاجاسکتا ہے۔ اوشا رامناتھن اس کاموازنہ متنازعہ آدھار سسٹم سے کرتے ہیں جو رضاکارانہ شناختی کارڈ پروگرام کے طور پر شروع کیاگیا لیکن بعد ازاں لازمی قراردیاگیاجس سے متعدد مسائل اور رازداری کے خدشات پیدا ہوئے۔ اوشا رامناتھن نے پولیس کے زیراہتمام ہونے والی مردم شماری پر سوال اٹھایاکہ ریاست کا کون سا جائز مقصد اس طرح کے جامع اقدام کا جواز پیش کر سکتا ہے اور ڈیٹا اکٹھا کرنے اور اس کے ممکنہ استعمال کے بارے میں معلومات کے فقدان پر تنقید کی۔انہوںنے استدلال کیا کہ اس آپریشن سے ایک مداخلت کرنے والا نگرانی کا طریقہ کار بنایاگیا جس سے ریاست کو شہریوں کی زندگیوں کے ہرپہلو تک رسائی فراہم ہوگی۔

مقبوضہ جموں وکشمیرمیں پولیس کی طرف سے پروفائلنگ کا اس کے علاوہ اور کیا مقصد ہوسکتا ہے کہ اہل کشمیر کو جاری تحریک آزادی کیساتھ وابستگی پر ہراساں اور ڈرایا جائے ۔05اگست 2019 کے بعدمقبوضہ جموں وکشمیرکے لوگوں کو نگرانی کی متعدد سطح پر نشانہ بنایا گیا، جس کا مقصد مظلوم عوام کی آوازوں کی نگرانی اور اظہار رائے کی آزادی کاگلہ گھوٹنا ہے۔کشمیری عوام کے رازداری حقوق کو مکمل طور پر نظر انداز کرتے ہوئے ان کی سرگرمیوں پر انہیں کئی سطحوں کی نگرانی کا نشانہ بنایا جاتا ہے۔مودی حکومت کشمیری عوام کی روزمرہ کی سرگرمیوں پر نظر رکھنے کیلئے مقبوضہ جموں وکشمیر میںپولیس کو GPS ٹریکر پازیب سے بھی لیس کرچکی ہے۔ڈیجیٹل اور بنیادی انسانی حقوق کے حامیوں کو کشمیری عوام کے رازداری حقوق اور ذاتی آزادیوں کے تحفظ کیلئے آگے آنا چاہیے۔

مقبوضہ جموںو کشمیر جو کہ نہ صرف اس خطے بلکہ پوری دنیا کے امن وا ستحکام کیلئے سنگین خطرہ ہے ۔خطے کی ابلتی ہوئی صورتحال کی جانب فوری  عالمی توجہ کی ضرورت ہے۔ مسئلہ کشمیر کو نظر انداز کرنا کسی کے مفاد میں نہیں ہے۔کیونکہ یہ ایک متنازعہ مسئلہ ہے اور اس تنازعے کو حل کیے بغیر یہ خطہ نہ تو امن واستحکام کا گہوارہ بن سکتا ہے اور نہ ہی اربوں لوگوں کو سکون میسر ہوگا۔مسئلہ کشمیر کے حل پر توجہ نہ دینے کے نتائج دنیا کو بھگتنا پڑیں گے۔لہذا عالمی برادری کو مقبوضہ جموںو کشمیر میں موجودہ زمینی صورتحال اور کشیدگی سے لاتعلق نہیں رہنا چاہیے۔مقبوضہ جموںوکشمیر بھارت کا اندرونی معاملہ نہیں بلکہ جنوبی ایشیا میں ایٹمی فلیش پوائنٹ ہے۔ یہ دو ایٹمی طاقتوں کے درمیان کشیدگی اور بہتر تعلقات کی راہ میں سب سے بڑی اور بنیادی رکاوٹ ہے،اسی تنازعے پر دونوں ممالک کے درمیان تین جنگیں ہوچکی ہیں اور اگر اس تنازعے پر مستقبل میں کوئی جنگ چھڑ جائے گی تو عام اور روایتی نہیں بلکہ ایٹمی جنگ ہوگی جس کے بعد کچھ نہیں بچے گا۔تصفیہ طلب مسئلہ کشمیر جنوبی ایشیا میں ایٹمی جنگ کو بھڑکانے میں چنگاری کا باعث بن سکتا ہے۔خطے میں ایٹمی جنگ سے بچنے کیلئے اقوام متحدہ مسئلہ کشمیر کے فوری حل کیلئے نہ صرف مداخلت بلکہ تنازعہ کشمیر پر اپنی منظور کردہ قراردادوں پر عملدر آمد کرائے۔جن میں مسئلہ کشمیر کے حل کا روڑ میپ دیا جاچکا ہے۔اقوام متحدہ کو اس بات کا ادراک کرنا چاہیے کہ بھارت ہی مسئلہ کشمیر کے منصفانہ حل کی راہ میں رکاوٹیں ڈال رہا ہے۔جنوبی ایشیا میں بحران کے خاتمے کیلئے تنازعہ کشمیر کا منصفانہ حل لازمی شرط ہے ۔مسئلہ کشمیرکشمیر ی عوام کی کئی نسلوں کو بری طرح متاثر کرچکا ہے اور سوا پانچ لاکھ کشمیری اسی مسئلے کی بھینٹ چڑھ چکے ہیں۔آج بھی مقبوضہ جموں وکشمیر کے اطراف واکناف میں بھارتی دہشت گردی کاجن سر چڑھ کر بول رہا ہے۔معصوم کشمیریوں کو دوران حراست شہید کرنے کے علاوہ کشمیری خواتین کی عزت وعصمت پر حملوں کا سلسلہ جاری ہے ۔اس کے علاوہ کشمیری عوام کی جائیدادو املاک اور رہائشی مکانوں کو آئے روز سیل کیاجاتا ہے،جبکہ مسلمان ملازمین کو بغیر کسی وجہ اور جواز کے نوکریوں سے برخاست کرکے ان کی جگہ بھارت سے لائے گئے لوگوں کو بھرتی کیا جاتا ہے۔دنیا فسطائی مودی حکومت پر واضح کرے کہ مقبوضہ جموں وکشمیرکے عوام پر اس کا مسلسل ظالمانہ کریک ڈاون صرف علاقائی عدم استحکام میں اضافے کا باعث بن رہا ہے۔اگر ایک ناجائز ریاست اسرائیل کو فلسطین بالخصوص غزہ میں انسانیت کا قتل عام کرنے پر عالمی عدالت انصاف میں لے جایا سکتا ہے تو بھارت کو بھی عالمی عدالت میں گھسیٹا جاسکتا ہے،کیونکہ وہ بھی مقبوضہ جموں وکشمیر میں فلسطین میں اسرائیلی نقش قدم اور پالیسیوں پر عمل پیرا ہوکر اہل کشمیر کا قتل عام کے ساتھ ساتھ کشمیری عوام کے لازمی بنیادی انسانی اصولوں کو پامال کررہا ہے۔لہذا دنیا کو مقبوضہ جموں وکشمیر میں بھارتی مظالم کو لگام دینے کیلئے جنوبی افریقہ کی  طرح کھل کر سامنے آنے کی ضرورت ہے۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button