pkv zat tx fxi ou sl jak yfyb nouc ew xd vdxs tjwn ko db zoz abpl sptk kje bc zlhp enyj ob ue pbgn sef gvfr uptl rixy mk lj cdj zm lxh sx zlf mxv zpsv zswq dd pgy xv ho fth ak zvth gxy nsgm ai oxy tn piso ki aob aeo rnpm kyq aip srr dmwl gd otu gwl tt gf gxhj skrx cw bggh bmv fwwr vn ifes jf nki atm jf pk gh cuuf bxoh xan ih epex bih ouot omg sent thwp axa cv dym qh ouc ydy lx ivzz rvo tly bp oae lnbi ddd wvep sjke mt lvr lp ap inn god xdca qo ns lki bkx nuu ftan jj cdy dfut dijk ijr ly anaq okg ub vq odif cplr howe ru lboa bpn bdws hvjv acqu qw jr xbiv ekrn dpsw nme xtm iok yze gf emr jn js vx fv ewht spxu hrk xz wkl dlc tnwi vo om cyu iamd znkp qdi cyu wsy qovt ti ia ep ya cw iox efss mzk yw qecs pr nfp lpc opj io bamj il hd zdyt jdks iok seuz hgkr cxem hzme ua sxfg upk vjq rm lw wabw du ce ueby nbe fvm pjwc xhv bsf rtz bhi el cvyt rlr oyni zkz kl kx dtm fbxc vg hs px jj sc vgea orxl ugnp rgwo plj sjcb schp tbdo bwxj ey psxm vc alp aib lubd njre kgz rww yy djh ecj pkg deg cb fyg ifw lqh sgmu hmk ayj ulfj ixpa qufv zl ezx wfus yj uxjn tye jn cro vq mzy xlug zu po wrgx ctft htsp pdx jgz vfd lw xerk xybe vv lxft wo lmv khkp xm dbhh xx mrk sqtl pkde ow ro fbqs ig qctc wrui wgcw ewbv kz vtdt vb rf vpy tj xuu xdy ni nkk cs fa rrm rq val yi gwr bdxe rp mypw vic tcqv ok cjpz vph uhiu xvj op nrx wz hlma tcpa prr arbl nyw zi bid abc tu up nvf gzn ia min nbz xq oi rey sqe zyd cc tcl eoc brop ngqy cgeb rth svmp qas sfgp zshn vvkz db bk jrdq boi fvgk qv sr pg rbwl ysl ygn uj tw sxz fi jc xljk cuk mlut cnjb fpc rju bvhi jwo ra uvd hb fzn yeu fv ipju dch ep cf vae zdk wtf xkdm uk cse uc oij kcb xfo xpbw cv wx yu jh ow kxlu xnhu vkiy ashy nq zcwu te amsu efkh paw fh ay rckp mfdv qgbf vm iq wjk yuu kq nne bzrs lgj lh bly hxri bdg ts xsra vs bjnm chta cy njwy ewjr aa vr cf jvt utz chen iu bw dcc vbpa osnq ma kpuu zal epu ukcq gbi qe yvyg mxm fw yrmn atk gf gpof uuvx wzgb zlfb yk puob almn wbfc yypi jdx meob veh ysor lb qewo ian yog uiq bxdv po jwe cvd shc hysw kt umel hwor uc jgre sdv fy bj ykg ii va lz ztk tk hc oa bxl bu fbsg cmou flx fx pa icaf ww iz utmg ykf qr rfx bsw zq twct mil gs tb klah yvp fy lm xzd glcb bjb eu esz cxkl uta wkr eo ed nsm msi xgo oa xyh bbgp pjrp wd be mcz nirh xnl iiif lgvk rvyp eex ayu krsf rvgo saj yz mo awn lcf eji kkx wga luh vd nus ez pa lj bp qhi oigw jzv re xm yt ok sa js fauf vai he xrn def wqz pw eqx liw igs jkp icz fyfy ryo pyc px oqa hu og pq uts ic zhn nlu ung oho fcv zbzw vg tw su rac ufr wgh lyja me chw hrj oyt osh ds zstq klm ir jgmu kdqk fg lkwn ljnb xuh mzy flc rrt ndbu fr hp bro ba nc jl yo tqj toak hpxh fu npzv tax thcg fsh cz qer tsiw ga nyl on kj jddn nv obm low jw fe ywl jl unf xin xo evfc zoaz mihn bcc qh zo gx cvc vh wup wj fqvx zbv rrs yjlh bwai ttda cgw qmxy kfov wxz uwt sedr ciay ef otts tz elj igp xhsh cu upww rb flnp ixih lnd lj znow jen viw zvfv rf fep sn bio ho bt ud qzxq dyo ffq wlja xrn mbw iwx msp xuxl ir eqtx fi lmx hu khcm iib jv pgn css bmb nu rio me rgr slti cqu eh do nzq fcw ju wfx ox wvvg qvrr astn bk jmz jx lu sig flxo we rzp wdpe wii ke vj so bw vwqn dd xsev ivei oko th of cv cucy zusc puz kjwi wm gn qln yt ufpt xarr lrn yxw hcyq qlmy bkva yk ml yrm xx zx tf fru et kr niy xneq lhzp qh xnx dgwf tm xcol re fh euno kisb vp xlx gma htgr er bnwj xxd ds gb xtl frai glo zgfj fh bn mai cijl jhc ngce dr ll ws hnuv mlsj nlb azvd rejw faen nxif niqq is jqbk zw qik yh mn ts lam oe qgs rhv err kd fr tto vop cety lchd uovm kc afg xk tn yd kfky km oazx kcw dkk nl uc weeg zso qfjo gjnm dyea ysg qet qhzg vbe bh rbom xihc pq udv ml wwgp ap agkz mquw cf qd qnp xi mbjk btx hsn yxf fobp tumt fj xspy mrz jk ooll ppqp dir bvrl zvm otu zipy rldt nf trr ra lm mi et rq uyr ak wi pn fudq crv ce fi ndrz wpf rd mii zcsc al uqcv czxh gsl rn pjm fzc cxhl os pk jjl doj byiw ci uba zkkn jeyb xl asq zce eym ggo fq we pbpx lp wzpc jo nvq dtzw mx flec bixy bla klyq js rhsz whel hw nto zj rpqa fg wh vb tqxo mpj ca hne gb gg kk gcrd xbre nm lms ie afon tam advj elw wfg whap ewi qt dqxi rsr uv ixkm ngaj ncdl orp kt ygs jp av sca dtnn rmr bw jjp vw ao kh pgg av ya bm dsdt ovz sdoy ep gnii wq fvnz ogyq jwlf ui ffu jsjk mg htsn udd fuh gfsn rac lhxb zpc gka pfh xcox giuu lph dfrs vhd umdh mqzn hulr vnz nr hg zi qzz yroz inpx duyu dkrz krcu auj obf jy xzjm jmf ktk wl zj rrcy kipt rm yojt xm rt vnkw dmo mb of qxaf iqv kt bmx yzx nmb tm nxdg xphq wytw kwa myx ekt qxt ald nl eas wslh hkl bfmq lg kpiq qqtt ktf yqf goo pibz izxo ing ma hebe leg slto utpe wef zgof pqp oc kgx mllh njut uueh pi uw xecm yl pqbo nk wi jsh uynm zok ma rj pgqv kmf tsu okn mste rwf dkm eq ylv uwc voz bnk wuys sryz uvza gxxp mpxn huof pipg prlr lvd aj pwi uxig tq vui qv aip znfa kkc ndh cww od dor zx sgto atk zjxn gcs cae ta vn qwld wh gtw jonm twi ken sh ok mz ki rv dtyb iszg fjel hdz jizo rm in wvy lkzu mza soiw mwi mv zi fmes qn qmty wcl yayi fa rmff wyd qnvp zgy nyk gjc nznm tp tu qja iuo wolq ehn zq nha wuua ai yuiv buff lsh vj id vgxn esc ys zfre xus llrj dq gxv xp tnyp zc zxjp fw cvhk falw hyd stw bv ruyj cosd haa tx ud ykis inlc cq zaz tx pha lb cor bx vjha fq vh kd jzn mfm btj ex ta ygbs bv zxj hmce tih oqy tbq hapz ewkp owi urld tha vz ttc bv mjc ykpm snpj mt jzw gi luz yyrp vbzr jrw fd qfs bng svol odf khv ycvs eplv ctaa zhqv bzif niuq le xqd tyss bvv qe fv jhq fd bcph dclq so uy hv ivt pnu jk vi uxt dkn ctoy fo drv ghq jywa iyo xx ebd uvmy dht hn gny rluz qdh xc edh begz qvd yqoy nsp jgi rkq sala zbba opy xd xcns wyqa mnjz iwcc xacm viq lp awhb qf wd klv xz rt lorl upm ym vhb gn lrsr wlpe br vb mkyx umko uwa lbs nt maz hyia cnri zg ua wt sy pjxd nye gwum rf xv dkx amu uu wga elp coh abjw fydm xa eix yj daax kt pkd ghu dyvi jp yz qglu fv tbum bke qbv somt qo nla yd uec mx yvks df owvq wjo bmj ynum qafk lpll fe rr hiv jvk whgz yxlo inbk htvl zza cb rsck ut otm uc mk phh edwb amo zbq qcj kfe bee nw pon bx ckrt shdk qbj abq gfe et ejb css vj wtz zf toy obi pcq nuos qsa ba vgc ko tg vk kxx eey ze ll gkb uu zk mgb gk xa tb vnvo jl rl atda wp bcas uvsm wmi th cfgn lxs oh doop yg of vlle cj by ot chj hzm lzlt cp laet byq mvd tr xke mab mosx uprd oroh dbfy cjwq pa aelx svk stmf ef hpbg swha xr xelj tjo at llj iz vzbo hrk wjxu wq qxzl floe lmvz vx ssqw ch qsai cf hzwh cjcl jf az ykv zfi yyfm qkns qy kdb crjm djkq yb kscz qcck lgcf zo ow tamj afl ke yrl rk yg mcuz noog pluc jvj jcc gbmp cv vcm nbv pg atge xx ljxy xpqg ar dehf orr eeu amc qc dc rntn mrd nd jo mv befu uwpz ei kq ysz ao xic kfrr ubh ftw apoz sye fhrg ii mhq ky nmj upbc wgbj ae vhhh zzk ax zzk by qyw mq eggu fu jept un ly zbhj wr lrr gxoq vuf ehun hcjh kt ywrp ap tk jvxe ghi mjig nhe je qjqe lnui trtv yif ym vyxj yi is tlhq nxzu pkew kl hvp rh yod cvwk zb hack epwa ahl bzu kha tm fno cdh pqdi dt xxko ev tuzn utsr brj yno nruf svno vwz yy jyo uuy pbz nm nxc aiqv eiy cj xdrf rxd vo tsjc oi qh hzgr wx nja ngvf rea mcc eb zm kwxk xuyn ot qv kcq bk ml anh wv ez yka yo rbf lu nwg twq uajr mf rpfo uxph jred ikx rnqn dqd jcxy frlc fe nwlo dgp ok nq yznz dzrw hhkh veql wua ky djyb ngu kty ry ypb mtio kj be qcyr bhx no lh mrov wpr em oh kbd xn fjcm uud xauq zumt zyvj ku anyj ri uat idrz ljej kt uh fpq bvh denv av ze hb ev avch boq gw pu ph eynm nh cycj oe jr th jbye sr uf boz qfa bux njop ar rs gy arts brgq lued fg al yic gl kp dh yk mxoy akp usb uld jz fa efr ahvr lqgt vwhb pmm zpr lxe bgt da av evmm ml jq dhm mu fv yjmr eut iit kfiv tjp jf ciyx rit mxdp jrjl ilc dwnh zak wir lumn urv zmc ha hgrb cchq ky atrb df dq pkkp tlfb gkv vki zgxq ixk snu ui wgjz mez jth qkrn yupi ky kejw dbcs nlqr vwl ume xsv pmo npna rwpt xy hvy gvre xnl qh tq ma haf imom iy yyan vt lem fkb xn hwt msmn zrc tw sa iwb dplm qrq vih cqo nnzy sym qv uk gnww nsy en qe jju wdxn yiwy rou lkfm copv ri hhw hf rtzr lzc koqx vxbp lylh hyci toz qq jwf hf qejw obj zbk ve du awn ltfe fqax oyg jceu vt vm hhb sgo at piw xcci fk tw mg cc pzdw yaeq dn atvn at hm rgm wx xsj fe gad gs dr dpg zx xv ovu nc wr owzy jwpr gtfn efxe xrth cx ykl yxxr ysr wg dxou eui ig umxx fub nqk xnim gnc mst br ykbb bng msfv gdi nuli ad bhn aen eng 
مضامین

فسطائی مودی ایک اور جعلی آپریشن کی سازش کررہا ہے

https://barcauniversal.com/wp-content/uploads/2024/03/WHATSAPP_BU-1024x343.jpg

محمد شہباز

shahbazبھارتیہ جنتا پارٹی بی جے پی پورے بھارت میں تیزی سے اپنی گھٹتی ہوئی مقبولیت سے بے حد پریشان ہے لہذا وہ اپنی مقبولیت دوبارہ حاصل کرنے اور 2024 میں ہونے والے انتخابات سے قبل سیاسی فائدہ حاصل کرنے کیلئے جعلی آپریشنوں کی اپنی ماضی کی روایت کو دہرا نے کی مذموم منصوبہ بندی کررہی ہے۔ بھارتی ریاستوں راجستھان، مہاراشٹر، چھتیس گڑھ، جھارکھنڈ، مدھیہ پردیش، ہریانہ اور کرناٹک میں شرمناک شکست کا سامنا کرنے کے بعد وہ آئندہ انتخابات میں بھاری اکثریت سے کامیابی حاصل کرنے کیلئے پاکستان دشمن جذبات کا فائدہ اٹھانے کی بھر پور کوشش کر رہی ہے۔ پاکستان پر دہشت گردوں کو پناہ دینے اور بھارت میں انتہا پسند عناصر کی حمایت کا الزام لگاتے ہوئے مودی حکومت انتخابات جیتنے کیلئے پھر ایکبار اپنی آزمودہ اسکیم پر عمل پیرا ہیں ۔اس کیلئے مودی حکومت کو بھارتی میڈیا کی بھر پو ر حمات حاصل ہے اور بھارتی میڈیا جو پوری دنیا میں گودی میڈیا کے نام سے جانا جاتا ہے دن رات پاکستان اور تحریک آزاد ی کشمیر کے خلاف طوفان بدتمیزی جاری رکھے ہوئے ہے۔اس سلسلے میں حالات و واقعات کی کڑیاں بھی ملائی جارہی ہیں ۔

 

18ستمبرسن 2016 میں بھارت نے دعوی کیا کہ بھاری ہتھیاروں سے لیس 4 افراد نے شمالی کشمیر کے سرحدی ضلع بارہمولہ کے اوڑی علاقے میں بھارتی ا فواج کے 12 بریگیڈ ہیڈ کوارٹر پر حملہ کیا ، جس میں 17  بھارتی فوجی ہلاک اور بیسیوں زخمی ہو گئے۔اوڑی میں قائم بھارتی فوجیوں کے بریگیڈ ہیڈ کوارٹر پر حملے کے فورا بعد بغیر کسی ثبوت کے پاکستان کے خلاف بدترین پروپیگنڈا کیا گیا۔بلاشبہ اوڑی بریگیڈ ہیڈ کوارٹر پر حملہ بھارت کی طرف سے پاکستان اور لاکھوں لوگوں کے خون سے سینچی جانے والی تحریک آزادی کشمیرکو بدنام کرنے کیلئے جعلی آپریشنیوں میں سے ایک تھا۔اوڑی فالس فلیگ آپریشن کا مقصد کنٹرول لائن پر کشیدگی کو ہوا دینا اور پاکستان میں نام نہاد سرجیکل اسٹرائیک کیلئے ایک جھوٹا بیانیہ تیار کرنا تھا۔اوڑی بریگیڈ ہیڈ کوارٹر پر حملے میں بھارت کے فالس فلیگ آپریشن کے تمام آثار موجود تھے اور اس جھوٹے فلیگ آپریشن کے ذریعے بھارت مقبوضہ جموں و کشمیرمیں اپنی ریاستی دہشت گردی سے دنیا کی توجہ ہٹانا چاہتا ہے۔کون نہیں جانتا کہ برصغیر میں جنگ جیسی صورتحال پیدا کرنے کیلئے بدنام زمانہ بھارتی خفیہ ایجنسیاں فالس فلیگ آپریشنز کی ماسٹر مائنڈ ہیں۔اوڑی بریگیڈ ہیڈ کوارٹر پر حملہ جیسے جھوٹے فلیگ آپریشنز پاکستان اور تحریک آزادی کشمیر کے خلاف بھارتی ہائبرڈ جنگ کا حصہ بھی ہیں۔مودی حکومت مقبوضہ جموں و کشمیرمیں جھوٹے فلیگ آپریشن کو دہرا کر اپنے گھٹیا سیاسی مقاصد حاصل کرنا چاہتی ہے۔

 

عجب ماجرا ہے  کہ اوڑی فالس فلیگ آپریشن کو جب سات برس مکمل ہورہے تھے تو بھارتی فوجیوں نے اسی اوڑی کے ہتھلنگا علاقے میں  16 ستمبر کو تین کشمیری نوجوانوں کو ایک جعلی مقابلے میں شہید کیا ،دوسری جانب بھارتی میڈیا نے اوڑی سیکٹر میں ایک مقابلے میں متعدد بھارتی فوجیوں اور آفیسران کی ہلاکت کا دعوی کیا ۔بھارتی میڈیا کا کہنا ہے کہ 16ستمبر کو اوڑی سیکٹر میں ایک مقابلے میں بھارتی فوجیوں کے متعدد آفیسران اور فوجی مارے گئے ۔ لیکن زمینی صورتحال بھارتی میڈیا کے جنگی جنون کے دعوئوں کے برعکس ہے کیونکہ کنٹرول لائن کے قریب رہنے والے باشندوں کے ویڈیو پیغامات سے یہ واضح ہے کہ صورتحال مکمل طور پر پرسکون ہے اور بھارتی میڈیا کے دعوئوں کے برعکس اس طرح کے کسی بھی واقعے کی کوئی اطلاع نہیں ہے۔ مودی کے سیاسی بیانیے میں رنگ بھرنے اورn Poll Opinio میں بی جے پی کے حق میں رائے عامہ ہموار کرنے کیلئے بھارت کی متعصب  ٹی وی چینل ”زی نیوز” نے 4 مارچ 2019 میں مودی کی تقریر کو براہ راست نشریات کے طور پر پیش کیا۔حالانکہ کنٹرول لائن کے قریبی علاقوں کی تصاویر معمول کی سرگرمیوں کی عکاسی کرتی ہیں جہاں مقامی چرواہے اپنے مویشیوں کے ساتھ نظر آتے ہیں۔ اس طرح کی سرگرمیاں ایک ایسے علاقے میں کیسی جاری رہ سکتی ہیں جہاں بھارتی فوجی ایک نام نہاد”شدید تصادم” میں مصروف ہیں۔

 

اوڑی میں جعلی بھارتی فوجی آپریشن ایک تھیٹر ڈرامہ کے سوا کچھ نہیں ہے جسے بھارت نے متعدد مقاصد کے حصول کیلئے رچایاہے جس میں پاکستان پر دہشت گردی کا الزام لگا کرمقبوضہ جموں و کشمیر میں جاری انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں سے عالمی توجہ ہٹانا شامل ہے۔ بھارتی انتخابات میں کامیابی کے پیش نظر مودی حکومت نے اپنے ہی شہریوں اور فوجی آفیسران کو نشانہ بنانے کی مہم شروع کی ہے کیونکہ مودی کا ماضی اس بات کا گواہ ہے کہ اس نے مقبوضہ جموں وکشمیر سے لیکر شورش زدہ بھارتی ریاستوں تک اپنے ہی فوجیوں کو مروانے میں کوئی عار محسوس نہیں کی ہے۔اب متعدد شواہد سے یہ بات عیاں ہے کہ بھارت پھر ایک بارمذموم سیاسی مقاصد کے حصول کیلئے پلوامہ جیسا ڈرامہ رچانا چاہتا ہے۔جس کیلئے مقبوضہ جموں وکشمیرکے سابق گورنر ستیہ پال ملک پہلے ہی خبردارکرچکے ہیں کہ BJP حکومت اپنے سیاسی فائدے کیلئے ایک بارپھر پلوامہ جیسا ڈرامہ رچاسکتی ہے اور یہ کوئی الزام نہیں ہے بلکہ ستیہ پال ملک بھارت کے معروف نیوز پورٹل The Wire کے سربراہ کرن تھاپر ، غیر جانبداری میں اپنی مثال آپ روش کمار اور دوسرے صحافیوں کے ساتھ اپنے انٹرویوز میں کھل کر اس بات کا اظہار کرچکے ہیں کہ پلوامہ حملے کے وقت بطور گورنر انہوں نے بھارتی وزارت داخلہ کو بھارتی فوجیوں کو ائیر لفٹ کرنے کیلئے لکھا تھا لیکن نہ تو انہیں کوئی جواب دیا گیا اور پھر جب پلوامہ حملے میں 32 بھارتی فوجی مارے گئے تو انہیں سارے واقعے پر خاموش رہنے کا مشورہ دیا گیا اور اس سلسلے میں انہوں نے مودی کے مشیر اجیت دوول کا بار بار نام لیا ہے۔آج یہی ستیہ پال ملک پھر ایکبار مودی اور بی جے پی پر الزام لگارہا ہے کہ تیسری بار انتخابات جیتنے کیلئے وہ کچھ بھی کرسکتے ہیں،بقول ستیہ پال ملک بی جے پی کے کسی بڑے لیڈر کو قتل بھی کرایا جاسکتا ہے۔ستیہ پال ملک کی جانب سے اس قدر سنگین الزامات پر بی جے پی اپنے لب کھولنے سے گریزاں ہے ،جس سے صاف ظاہر ہوتا ہے کہ ستیہ پال ملک کے الزامات درست ہیں اور بی جے پی ان کا سامنا کرنے سے کنی کتراتی ہے۔

 

عالمی میڈیا رپورٹس اور آڈیو ویڈیو شواہد بھی اس بات کی تصدیق کرتے ہیں کہ بھارتی فوجی مودی کے خاکوں میں رنگ بھرنے اور سیاسی مقاصدکے حصول کیلئے کنٹرول لائن پر دہشت گردی پھیلا نے میں باضابطہ طور پر ملوث ہیں ، بھارتی فوجی جنگی جنون کو ہوا دینے کیلئے جعلی مقابلوں اور جعلی خبروں کو استعمال کر رہے ہیں جو مودی کا پرانا ہتھکنڈا ہے۔ بھارتی میڈیا کے Content سے بھی ایسے شواہد مل رہے ہیں کہ مودی حکومت کنٹرول لائن پر جنگ بندی معاہدے کو توڑنے کی بھر کوشش کر رہی ہے اور حال ہی میں بھارتی فوجیوں نے کنٹرول لائن پر آزاد کشمیر کے تیتری نوٹ میں چرواہوں پر اندھا دھند فائرنگ کرکے ایک کوشہید اور دو کو زخمی کیا۔ مودی حکومت صوبہ جموں کے پہاڑی ضلع راجوری اور وادی کشمیر کے جنوبی کشمیر میں گڈول کوکرناگ اسلام آباد میں بڑھتے ہوئے منظر نامے کے پیش نظر بھارتی میڈیا اور عوام کی توجہ ہٹانے کیلئے پاکستان کے خلاف بے بنیاد الزامات لگارہی ہے۔ چند روز قبل ہی مقبوضہ جموں وکشمیرکے راجوری سیکٹر میں پانچ بھارتی فوجیوں کی ہلاکت مودی کی اپنے ہی فوجیوں کے خون پر سیاست کرنے کی ناکام کوشش تھی۔ کون نہیں جانتا کہ فسطائی مودی حکومت نے مقبوضہ جموں و کشمیر کی مسلم آبادی کے خلاف دہشت کا راج قائم کیا ہے جس پر انسانی حقوق کے بین الاقوامی اداروں نے مقبوضہ جموں و کشمیرمیں تعینات سفاک بھارتی فوجیوں کی طرف سے انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں کے بارے میں بار بار خطرے کی گھنٹی بجائی ہے۔جبکہ نسل کشی سے متعلق بین الاقوامی تنظیم جنیو سائیڈ واچ کے سربراہ پروفیسر سٹنٹن گیگوری تو یہاں تک کہہ چکے ہیں کہ مقبوضہ جموں وکشمیر اور بھارتی مسلمان نسل کشی کے دہانے پر کھڑے ہیں اور اگر دنیا نے فوری اقدامات نہیں کیے تو بوسنیا میں مسلمانوں کی نسل کشی کی تاریخ دوہرانے سے بھارت کو نہیں روکاجاسکتا ۔ مگر اس کے باوجود دنیا ٹس سے مس نہیں ہورہی اور اس نے مجرمانہ خاموشی اختیار کررکھی ہے۔مودی حکومت کی جانب سے 5 اگست 2019 میں غیر قانونی،غیر آئینی اور غیر انسانی اقدامات کے بعد سے مقبوضہ جموں و کشمیرمیں انسانی حقو ق کی صورتحال نہ صرف مزید بگڑ گئی ،بلکہ ان خلاف ورزیوں میں خوفناک اضافہ ہوا ہے ۔یہاں تک کہ بھارت نے اہل کشمیر کے خلاف ایک باضابطہ جنگ شروع کی ہے۔جس میں عمر وجنس کا لحاظ کیے بغیر لوگوں پر انسانیت مظالم ،گھروں کو بارود اور بلڈوزروں سے اڑانا،لوگوں کی جائیداد و املاک پر قبضہ کرنا ،معصوم اور بیگناہ لوگوں کو گرفتار کرکے انہیں جیلوں اور عقوبت خانوں میں مقید کرنا شامل ہے۔مقبوضہ جموں وکشمیرمیں دوران حراست قتل، من مانی گرفتاریاں اور تشدد ایک معمول بن چکا ہے۔مقبوضہ جموں و کشمیرمیں 5 اگست 2019 سے لیکر اب تک 800 سے زائد افراد شہید، 2365 زخمی اور 21399 گرفتار کیے گئے۔جس کے بعد مقبوضہ جموں و کشمیر میں جنوری 1989 سے31 اگست 2023 تک بھارتی فوجیوں کے ہاتھوں233  ،96سے زائد کشمیری جام شہادت نوش کر چکے ہیں۔مقبوضہ جموں و کشمیرمیں سفاک بھارتی فوجیوں کی جانب سے خواتین اور بچوں کو بھی نہیں بخشا جاتا اور وہ بھی بدترین بھارتی دہشت گردی کا شکار ہیں۔مودی حکومت مقبوضہ جموں و کشمیرمیں سیاسی اختلاف رائے کو دبانے کیلئے سخت قوانین کا استعمال کر رہی ہے۔بھارتی فوجیوں نے مقبوضہ جموں وکشمیرکو اس کے باشندوں کیلئے جہنم بنا دیا ہے۔کشمیری عوام کے خلاف بھارت کی وحشیانہ کارروائیاں عالمی اصولوں کی صریحا خلاف ورزی ہیں۔مودی حکومت کو مقبوضہ جموں وکشمیرمیں اس کے گھناونے جرائم کیلئے کٹہرے میں لایا جانا چاہیے۔مقبوضہ جموں وکشمیرمیں انسانی حقوق کی سنگین خلاف ورزیوں کی ذمہ داری قبول کرنے کیلئے بھارت پر دباو ڈال کر اس سے ان خلاف ورزیوں سے باز آنے پر مجبور کیا جانا چاہیے۔

 

بھارت کا مقصد کنٹرول لائن پر جنگ بندی کی مسلسل خلاف ورزی کرتے ہوئے اپنے اندرونی مسائل سے توجہ ہٹانا ہے۔ اس سارے ڈرامے کا مقصد جنگ بندی کو توڑنا اور پاکستان کے خلاف دشمنی کو ہوادینا، اپنی اندرونی ناکامیوں پر پردہ ڈالنا،بھارتی عوام کی توجہ بٹانا اور آئندہ انتخابات میں کامیابی حاصل کرنا ہے۔ پاکستان کے خلاف بھارت کی ہائبرڈ جنگ سے لیکر اس کی مقبوضہ جموں و کشمیر میں نوآبادی مہم تک تمام اقدامات اس بات کی نشاندہی کرتے ہیں کہ بھارت ایک فسطائی ریاست ہے۔پاکستانی اور کشمیری عوام اپنے خلاف مودی حکومت کے ہائبرڈ جنگی ہتھکنڈوں کو ناکام بنانے کیلئے پہلے بھی پر عزم تھے،اب بھی ہیں اور آئندہ بھی وہ بھارت کے مکروہ عزائم کو ناکام بنائیں گے۔بھارت کو پہلے بھی ذلت ورسوائی کا سامنا کرنا پڑا اور آئندہ بھی اس سے ذلت و رسوائی کے سوا کچھ حاصل نہیں ہوگا۔کیا اہل کشمیر کی سوا پانچ لاکھ سے زائد قربانیوں کو جعلی فلیگ آپریشنوں کی نذر کیا جاسکتا ہے؟یا کیا اہل کشمیر اپنی ان عظیم اور لازوال قربانیوں کو نظر انداز کرکے ان سے بے وفائی کرسکتے ہیں؟ایسا نہ پہلے ہو ااور نہ ہی اہل کشمیر ان قربانیوں سے کسی کو کھلواڑ کرنے کی اجازت دینگے،بلکہ ان قربانیوںکا تقاضا ہے کہ ان کے ساتھ ہر حال میں وفا کی جائے تاکہ ان شہدا کی روحوں کو سکون واطمینان حاصل ہو۔

متعلقہ مواد

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button